مسکن / رومانی / پیاسی بانہیں ۔۔۔ از ۔۔۔ ملائکہ بخاری

پیاسی بانہیں ۔۔۔ از ۔۔۔ ملائکہ بخاری

پیاسی بانہیں ۔۔۔ ملائکہ بخاری

”سسٹر 201کی کیا کنڈیشن ہے؟ کیا کوئی ردعمل ہوا ہے یا نہیں؟“ وہ اپنا گاﺅن پہنے جیبوں میںہاتھ ڈالے سسٹر جبیں سے پیشنٹ نمبر 201کے بارے میں پوچھ رہا تھا۔
”ڈاکٹر جوں کی توں‘ وہ انتہائی ٹھس قسم کی چیز ہیں۔“ کسی بھی طریقہ سے…. اس سے پہلے کہ سسٹر جبیں اپنا اکتاہٹ نامہ کھولتیں۔ وہ ہاتھ کے اشارے سے اسے روکتا ہوا بولا۔
”پلیز سسٹر‘ میرے خیال میں آپ زیادتی کر رہی ہیں‘ ورنہ مجھے نہیں لگتا کہ ڈاکٹرز کو اتنا بے صبرا ہونا چاہئے۔“
اونہہ صبر تو صرف ڈاکٹرز کے لئے ہی بنا ہے اور یہ ڈاکٹر شاہ چلتا پھرتا صبر ہیں ہمارے لئے بھی اور اپنے لئے بھی وہ ایک نظر اسے دےکھتے بڑبڑاتی ہوئی آگے چل دی۔
اردگرد مٹی کے بہت سے ٹیلوں میں وہ گھرا بیٹھا تھا پاس ہی گیلی مٹی کی آنکھوں سے رواں آنسوﺅں سے فضا میں عجیب مانوس سی خوشبو پھیلی ہوئی تھی اور گلاب کے تازہ پھول اور اگر بتی کی ملی جلی خوشبو عجب پراسرار سا ماحول ترتیب دے رہی تھی۔ ہوا ساکن سی تھی‘ وہ مٹی سے اٹھتی سوندھی مہک کو گہری گہری سانسوں کی مدد سے اندر تک اتارتا جا رہا تھا اچانک ہی سماعت سے کوئی جملہ ٹکرایا تھا کیسا نرم سا لہجہ تھا اور کیسے خوبصورت سے بول تھے وہ بے اختیار سنتا چلا گیا۔
وہی خوشبو تیری میری
بولنے والا چپ ہو گیا تھا اس نے بے چینی سے ادھر ادھر نگاہ دوڑائی لےکن کوئی بھی نہیں تھا‘ سامنے کھڑے شجر پر زرد مرجھائے پتے نے حسرت بھری نظروں سے پیڑ کو دےکھا اور پھر بے دم ہو کر زمین پر آگرا۔
”وہ محبت ہی یا جو کسی کو مل جائے۔ یہ ہر کسی کو ملتی ہی کب ہے یہ تو بہت ہی….“ سامنے صوفے پر کانوں میں انگلیاں ٹھونسے بیٹھے وجود کو دےکھ کر ان کا پارہ یک دم ہائی ہوا تھا اور بولنے والا جملہ ادھورا چھوڑ گیا۔ انہوں نے اسے مخاطب کیا تھا۔
”اے سنو لڑکی فوراً اپنی منحوس شکل سمیت یہاں سے غائب ہو جاﺅ ورنہ‘ ورنہ میں میں….“
”ورنہ آپ اپنی فضول بحث بند کر لیں گے یہی ناں۔“ جملہ اچکتے ہوئے لڑکی دوبدو بولی تو وہ منہ کھولے اسے دےکھتے رہ گئے۔ اب نہ جانے یہ منہ غم کی شدت پر کھلا تھا یا حیرت کی انتہا پر پھٹا تھا۔ جوبھی تھا اسے مزہ دے رہا تھا ان کا یہ کھلا منہ۔
”ارے منہ بند کر لیں ورنہ مکھیاں اپنی پسندیدہ جگہ گھسنے میں دیر نہ لگائیں گی۔“ وہ پھر سے گویا ہوئی تھی۔
اب کے منہ فوراً بند کر لیا گیا تھا اور اب وہ اسے بڑی کراری قسم کی گھوریاں مار رہے تھے۔
”کئی لوگوں کے دیدوں کا پانی بالکل مر چکا ہوتا ہے۔“ جلتی پر آخری بار تیل ڈالا گیا تو آگ بھڑ سے بلند ہو گئی۔
گرین ٹراﺅزر پر سفید شرٹ پہنے بالوں کی پونی ٹیل بنائے وہ پھولی ہوئی سانسوں کے ساتھ کین کی چیئر پر بیٹھی ہوئی سفید ٹاول سے پسینہ پونچھ رہی تھی کہ نیوز پیپر اور اورنج جوش کا گلاس اس کے سامنے پڑی ٹیبل پر رکھا جا چکا تھا۔ اس نے گلاس اٹھا کر لبوں سے لگا لیا اور آہستہ آہستہ پیتی ہوئی کود کو ڈھیلا چھوڑ کر کرسی پر دراز سی ہو گئی۔ گلاس خالی کر کے رکھتےہوئے اب نیوز پیپرز پکڑے وہ اس میں گم ہو چکی تھی۔
بلیک چینز پر وائٹ کرتا پہنے سن گلاسز لگائے وہ اپنی سلور گرے نسان سنی کی کی چین سے کھیلتی باہر کی جانب بڑھ رہی تھی جب ابی نے آواز دی تھی۔ ”اتی بیٹا ایک منٹ۔“
وہ ابی کے کہنے پر رک گئی۔ ”بیٹا اگر وقت نہ ہو تو مجھے بھی آفس تک ڈراپ کرتی جاﺅ‘ دراصل میری کار….“
”ابی….“ وہ شکوہ کناں لہجے میں چلائی۔ ”وقت کیسی یہ میرا فرض ہے کہ میں آپ کے کسی کام آﺅں۔“ ابی دھیرے سے مسکرادئےے۔
”ہیلو وینس کے حسن سنووائٹ کی معصومیت‘ مونالیزا کی مسکراہٹ‘ دھرتی کی شان اور ہمارے گروپ کی جان۔ آج آپ پورے تین منٹ دس سکینڈ لیٹ ہیں اس کی وجہ فوراً بتا ڈالئے ورنہ نتائج کی ذمہ دار آپ خود ہوں گی۔“ شانزے اسے دےکھتے ہی اسٹارٹ ہو چکی تھی۔ جبکہ وہ اطمینان سے چلتی ہوئی مسکرائی‘ گلاسز کو بے نیازی سے سر پر ٹکایا اور مختصراً بولی۔
”میں اس لئے لیٹ ہوئی میڈم کہ آج ابی ک میں نے خود ڈراپ کیا ہے۔“ یہ بتاتے ہوئے اس کی آنکھوں میں ایک چمک ابھری اور چہرے پر معصوم سا تاثر پھیل گیا۔ شانزے چند ثانےے اسے دےکھے گئی پھر بولی۔
”اتی! ان اداﺅں پہ کون نہ مر جائے اے خدا‘ میں تو لڑکی ہوکر دل و جان سے نثار ہو گئی ہوں تو لڑکے بے چارے کیونکر خود کو پچا پاتے ہوں گے اور تم جیسی سنگدل حسینہ سے پیار جیسی چیز ملنا ناممکن ہے حالانکہ عشق بغیر تو….“
”ڈونٹ بی سلی شانزے۔“وہ اپنی ستواں غرور سے اٹھی ناک چڑھا کر بولے تو شانزے مسکرا کر رہ گئی۔
شانزے شہود‘ قصحا شیرازی اور ارتضیٰ بخاری یہ تکونی گروپ اسکول کے زمانے سے قائم تھا اور کالج کے بعد اب یونیورسٹی میں بھی اپنی کچھ الگ شخصیات کی بدولت خاسی جانی پہچانی ہستیاں تھیں‘ ہر کسی کا مزاج وپسند و نظریات اور انداز الگ تھا مگر پھر بھی وہ یک جان تین قالب تھیں۔ ان تینوں کے سبجیکٹس بھی الگ ہوتے مگر ان دونوں کو ارتضیٰ کی مانتے ہی بنی اور اب وہ شعبہ نفسیات سے منسلک تھیں اور یہ ان کا فائنل ایئر تھا جو اسٹارٹ ہو چکا تھا۔
شانزے اور قصحا دونوں حسین تھیں‘ اپر کلاس سے تعلق رکھتی تھی‘ ذہانت سے بھرپور چمکتی سیاہ آنکھیں‘ شانزے شہود کو دوسروں میں ممتاز کرتی تھیں اور ذہانت بھرے دماغ کے ساتھ انتہائی لونگ اور کیئرنگ تھی قصاشیرازی‘ اور اب باری تھی اس گرپ کے سب سے پاور فل کردار کی ارتضیٰ بخاری ‘ اگر حسین ترین کے ترین سے پہلے آپ جتنے حسین لگا سکتے ہیں لگا ڈالئے اسی بے تحاشہ حسن کی مالک تھی وہ! سب لوگوں کے پاس ایک ایسی خاصیت ضرور موجود ہوتی ہے جو انہیں دوسروں سے ممتاز کر دیتی ہے مگر ارتضیٰ میں ایسی کون سی خاصیت نہیں تھی جو اسے دوسروں میں ممتاز نہ کرتی۔
معصوم توبہ شکن حسن اس پرذہانت کا خزانہ اور سب سے بڑھ کر بے نیازی اور آنکھیں ہلکی سی گرین کانچ جیسی جن کی گہرائی میں کوئی ایک بار ڈوبا تو پھر ابھرنا بھول گیا مگر آنکھوں پر جھکی گھنیری پلکوں کی باڑ کسی کو بھی یہ خطا نہ کرنے دیتی مگر ڈوبنے والے ڈوبتے چلے جاتے۔ ہنستے ہوئے لبوں کے کناروں پر پڑنے والے دو ننھے سے گڑھے جو مقابل کو زیر کرنے کو کافی تھے اپنی زندگی میں کسی بھی شے کے لئے نہ تو اسے خواہش کرنی پڑی نہ مانگنی پڑی۔ ہمیشہ بن کہے اسے سب کچھ حاصل ہو جاتا۔ مشہور بزنس مین‘ شبر بخاری‘ کی اکلوتی اولاد‘ ارتضیٰ بخاری کے پاس نہ دولت کی کمی تھی‘ نہ خوبصورتی کی‘ نہ خوشیوں کی‘ نہ ذہانت کی اور نہ ہی محبت کی اسے جو بھی ملا خاصا جھولی بھر بھر ملا اسی لئے وہ ہر شے سے حد سے زیادہ بے نیاز تھی۔ بچپن سے ہی اسے بن مانگے ہی اتنی محبتیں ملتی آرہی تھیں کہ تشنگی ہے کیا وہ یہ نہیں جانتی تھی خواہش کیسے کی جاتی تھی‘ مانگا کیسے جاتا تھا‘ وہ ان باتوں سے یکسر انجان تھی‘ ایک اور بڑی خوبی جو اس میں تھی وہ اس کی شخصیت کا مثبت پن تھی۔ معصوم سی تھی وہ فخر و غرور نام کو نہ تھا وہ خود کو کوئی چیز نہیں سمجھتی تھی۔ سب لوگ اسے خاص کہتے تھے کہ وہ بہت ہی خاص ہے اور وہ ان کے خاص کہنے پر غرور کرنے کے برعکس بہت محبت سے اپنی تعریف وصول کرتی اور بدلے میں انہیں اپنا خلوص دیتی وہ بظاہر لاپرواہ شوخ کھلنڈری نام بوائے سی لڑکی تھی مگر بہت کم لوگ یہ جانتے تھے کہ ارتضیٰ بخاری اپنا تمام جیب خرچ مستحق لوگوں میں بانٹ کر خوش ہوتی تھی‘ ارتضیٰ بخاری کسی بھی بچے کو مانگتا ہوا یا مشقت سے پر کام کرتا ہوا نہیں دےکھ سکتی تھی۔ چنانچہ ایسے بچوں کے لئے ایک ایسا سنٹر جہاں وہ پڑھ سکیں اور انہیں پےسے بھی مل سکیں کھولنے کے لئے کوشاں تھی جس کے بن جانے کی توقع اسے اسی سال کے آخر تک تھی وہ کام تیزی سے ختم کرنا چاہتی تھی۔

٭٭٭

چلو اس سڑک چھاپ محبت کا ایک اور باب بند ہوا اور یہ جو لڑکی بیٹھی اتنے زور شور سے نیربہار ہی ہے نہ ایک ماہ بعد ٹھیک جونہی کسی اور کے غم میں چھم چھم روئے گی مجھے سمجھ نہیں آتی کہ عشق بگھار نے کے علاوہ لوگوں کو اور دوسری کوئی مصروفیت کیوں نظر نہیں آتی۔ مجھے ایسے لوگوں سے قطعیکوئی ہمدردی نہیں ہے جو خود جانتے بوجھتے اپنے پیروں پر کلہاڑی مارتے ہیں اور پھر خود ہی درد درد چلاتے ہیں۔ وہ ملیحہ کو محبت میں ناکامی پرروتےہوئے دےکھ کر اچھا خاصا تپ گئی تھی اور مسلسل لیکچر دے رہی تھی۔ وہ لڑکی ملیحہ ارتضیٰ کی گلاس فیلو تھی جس پر ارتضیٰ اچھا خاصا تپ رہی تھی کیونکہ وہ ان باتوں کی سخت مخالف تھی۔
ارتضیٰ ہاتھ میں آئسکریم تھامے اس کا پیک کھول رہی تھی۔ پ میں آئسکریم نکال کر اس نے شانزے کو پکارا اور شانزے بوتل کے جن کی طرح حاضر ہو گئی اور پےپسی کا کین اس کی جانب اچھال کر صوفے پر گرتی ہوئی بولی۔
”تمہاری عجیب منطق ہے‘ بھلا آئسکریم کے ساتھ یہ کوک کون پیتا ہے۔“
”ارتضیٰ بیگ پر کشن رکھتی مسکرائی اور صوفہ پر نیم دراز ہو گئی۔ پیٹ پر ایک دوسرا کشن رکھ کر اس پر آئسکریم کپ رکھا اور پیپسی کین تھامتی ہوئی کانوں میں واک مین لگا کر آئسکریم کا چمچ منہ میں ڈالتی ہوئی بولی۔ ”شانزے ڈرارلنگ ڈونٹ ڈسٹرب می یو نو یہ میری شروع کی عادت ہے تو پھر پوچھنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔“ اور آنکھیں موند لیں اس کے گورے گلابی پاﺅں مسلسل حرکت میں تھے اور کبھی آئسکریم کا چمچ منہ میں ڈالتی اور کبھی کوک کا سپ لیتی آنکھیں مسلسل بند تھیں۔ سب نے آئسکریم ختم کر لی تھی وہ بھی ختم کر چکی تھی مگر اسی پوزیشن پر دراز رہی البتہ واک مین بند ہو چکا تھا آنکھیں ہنوز بند تھیں اور پیروں کی حرکت بھی تھم چکی تھی۔ اب وہ لوگ گپ لگانے ک موڈ میں تھے اور اسپورٹس چینل دےکھنے کے‘ کیونکہ وہ اچھی طرح جانتی تھی کہ غزنی یہاں موجود تھے اور بات کس نوعیت کی ہونی تھی اسی لئے ریموٹ اٹھانے کو آنکھیں کھولیں تو ریموٹ پہلے سے قصحا نے پکڑ رکھا تھا۔
”یہ کیا یار مرغے کی وہی ایک ٹانگ‘ مین تمہیں کوئی بھی فضول چیز نہیں دےکھنے دوں گی بلکہ ہمارے ساتھ گرما گرم بحث ہو جائے ساتھ تمہارے فرنچ فرائز بن کر آرہے ہیں آنٹی نے بتایا ہے‘ اور یہ مینرز میں کہیں شامل نہیں کہ مہمانوں کو گھر بلاﺅ ان ہی سے کام کراﺅ اور کمپنی بھی نہ دو۔“ وہ اس کی بات سن کر سیدھی ہوئی اور بولی۔
”ہیلو پہلے تو یہ غلطی درست کرو کہ تم مہمان نہیں ہو‘ مہمان یوں کسی کے گھر کے ہر کونے میں دندناتے نہیں پھرتے اور دوسرا میں تم لوگوں کے ساتھ بیٹھی ہوں تو کیا یہ کافی نہیں اور تیسرا یہ جو فضول گفتگو تم کرتی ہو ناں اس سے میرا یہ فضول سا ٹی وی اور فضول سے اسپورٹس چینل زیادہ معقول ہیں۔ مجھے معلوم ہے آج ملیحہ نامہ کھولا جائے گا۔“
غزنی اسے تنبیہی نگاہوں سے گھورنے لگے تو وہ دوبارہ اپنی سابق پوزیشن پر دراز ہو گئی اور آنکھیں بند کئے چلائی ”جی جی فرنچ فرائز“
”بس بیٹا دو منٹ“ جی جی نے جواب دیا۔
غزنی اور وہ سب شروع ہو چکے تھے بادل نخواستہ اسے بھی سننا پڑا۔
”دےکوھ میں نے اس دن بھی کہا تھا کہ ”وہ محبت ہی کیا جو ہر کسی کو مل جائے“ یہ ہر کسی کو نہیں ملتی یہ بہت ہی اچھے اور نایاب دلوں میں مسکن بناتی ہے۔“
”مثلا ملیحہ جیسے یا وہ اس کے نام نہاد عاشق جیسے دلوں میں۔“ اس نے بات اچکتے ہوئے لقمہ دیا تو شانزے بولی۔
”پلیز بی سیریس یار۔“
”ارے میری سمجھ میں نہیں آرہا یہ سلامتی کونسل کا اجلاس ہو رہا ہے یا گول میز کانفرنس ‘ جو میں سیریس رہوں۔“ جواباً شانزے نے اسے ایسی نظروں سے دےکھا جو کہہ رہی ہو کہ تم سے تو بحث ہی فضول ہے۔ غزنی پھر شروع ہو چکے تھے۔
”دراصل پیار کو پانے کی ہوس نہیں دینے کی لگن ہے وہ جتنا خود کو بانٹتا ہے اتنا ہی بڑھتا ہے وہ صرف دینا جانتا ہے لینا اس کی سرشت نہیں۔“
”تو مطلب یہ کہ آپ کسی سے پیار کئے جاﺅ اور اسے خبر ہی نہ ہو اور وہ آپ کے پیار میں جواباً ایک حوصلہ دیتی مسکراہٹ کا بھی روادار نہ ہو۔“ قصحا نے سوال کیا۔غزنی مسکرائے۔ ”ارے یہی تو اصل پرابلم ہے ہم سمجھ نہیں پا رہے کہ آخر پیار ہے کیا ہم چاہتے ہیں پیار میں ایک ہاتھ دو اور ایک ہاتھ لو‘ لےکن….“
”لےکن کیا کہ صرف ایک انسان پیار کرے‘ اور دوسرا بس حق سمجھ کر وصولے۔“ قصحا پھر بولی۔
”نہیں ایسی بات نہیں ہے قصحا بے شک پیار دونوں طرف سے ہو تو اچھا ہے لےکن اب جیسا ملیحہ کا کیس ہے کہ اس نے جسے چاہا وہ فلرٹ نکلا لےکن اگر ملیحہ کی محبت سچی ہوئی اس کے جذبے سچے ہوئے تو وہ اس کی جانب لوٹے گا ضرور اور اگر نہ بھی لوٹا تو محبت اس سے اپنا آپ منوائے گی ضرور۔“ ”اور اگر ملیحہ کا پیار بھی اسی کے عاشق کی مانند نکلا تو پھر کون کس کی طرف لوٹے گا؟“ وہ سیدھی ہوت پھر سے مداخلت کرتی بولی۔ ”دراصل یہ پیار ویار کچھ نہیں عجیب ڈھکوسلہ ہے۔ دنیا کے مرد عورت کے رشتے میں عجیب پیار ویار جیسے مفروضے گھڑ کے رکھ دئےے ہیں دراصل ملیحہ جیسی لڑکیاں زمانے کا گندہیں جو چھوٹے ذہنوںکی مالک ہیں جو کسی بھی لڑکے کو مٹھائی کی ڈلی سمجھ کر ندیدوں کی مانند اس کی جانب لپکتی ہیں اور اسے پالینا چاہتی ہیں۔“

٭٭٭

بلو جینز پر پیرٹ گرین کرتا پہنے بلیو اسکارف کندھوں پر رکھے‘ سن گلاسز چڑھائے اپنی انسان کو لاکڈ کرتی وہ جیسے ہی مڑی ایک سلور گاڑی تیزی سے اس ے قریب سے گزری اور کیچڑ اس کے کپڑوں پر ثبت کرتی یونیورسٹی گیٹ پر جا رکی۔ غم و غصے کی حالت سے اس کا چہرہ تپ کر سرخ ہو گیا وہ تیزی سے چلتی اس گاڑی تک پہنچی مگر اس میں جو سوار تھا اس سے بھی لمبے لمبے ڈگ بھرتا ہجوم میں غائب ہو گیا۔ وہ بری طرح جھنجلائی۔ ”کوئی بات نہیں بچو تمہیں بخشنے والی میں بھی نہیں‘ تمہارا حشر کر دوں گی۔“ وہ بڑبڑائی ہوئی واش بیسن کی جانب بڑھ گئی۔ کپڑے صاف کرتی وہ آہی رہی تھی کہ قصحا پھولے سانس سمیت بولی۔
”قسم سے ابھی میں تمہاری گمشدگی کی رپورٹ پرنسپل کو کرنے ہی والی تھی کہ ارتضیٰ بخاری کی نسان تو موجود ہے مگر خود وہ غائب ہو چکی ہیں چلو اب جلدی سے چلو سرمغیز کی کلاس اسٹارٹ ہونے والی ہے۔“ پھر اس کے بیزار چہرے کو دےکھتی ہوئی بولی۔ ”یہ رخ زیبا پر بارہ کس خوش میں بج رہے ہیں۔“ جو جواباً ارتضیٰ نے سب بتا دیا تو قصحا سرہلاتی بولی۔
”چلو اب اس بندے کی خیر نہیں سمجھو وہ تو گیا کام سے۔“ یہی باتیں کرتی وہ کلاس میں داخل ہو گئیں۔ وہ تینوں سر مغیز کی فیورٹ اسٹوڈنٹس میں سے تھیں۔ اپنی بے تحاشا ذہانت کی بدولت پروفیسرز سے ایسے ایسے مشکل سوال کرتیں کہ ان کے بھی چھکے چھوٹ جاتے خاص کر جو نئے پروفیسرز آتے تھے ان کو کبھی نہ بخشتیں۔ ورنہ سر مغیز جیسے منجھے ہوئے پروفیسرز ان سے متاثر ضرور تھے مگر وہ ان سے زیادہ تجربہ کار تھے‘ سو انہیں ہر سوال کو جواب دیتے اور انہیں سراہتے۔ وہ بھی اپنے اساتذہ کی بہت عزت کرتی تھیں اور ہر لحاظ سے پرفیکٹ تھیں۔ سو ڈریم گرلز کے خطاب سے مشہور تھیں۔ یہ الگ بات ہے کہ ارتضیٰ کہ یہ خطاب خاصا ناگوار گزرتا تھا۔
وہ کلاسز آف ہوتے ہی گیٹ کی جانب بھاگی‘ سامنے ہی گیٹ سے کچھ فاصلے پر کھڑی سفاری کو دےکھ کر اس نے دوڑتے قدموں کو بریک لگایا اور اس کے قریب جاتی بولی۔
اے مسٹر! تم میں سینس وینس ہے یا نہیں۔“ وہ جو کوئی بھی تھا اس کی جانب بیک کر کے نیچے بیٹھا ٹائر کو چھیڑ رہا تھا۔ اس کے پوچھنے پر جواب آیا۔
”نہیں“
وہ مزید تپ گئی۔
”کیا مطلب‘ نہیں یہ جو تم نے صبح حرکت کی کیا وہ درست تھی؟“
”جی ہاں“ جواب پھر سے آیا۔
”کیا! ادھر منہ کر کے بات کرو تمہارے خیال میں میں بکواس کر رہی ہوں تب سے۔“
”ہاں‘ ہاں‘ بالکل“ جواب پھر موصول ہوا‘ اب اس کی ہمت جواب دے گئی اس نے اسے کندھے سے پکڑ کر پوری طاقت سے ہلا دیا وائٹ کلف شدہ شلوار قمیص میں گندمی رنگت اور کتھئی آنکھوں میں حیرانی لئے مونچھوں تلے دو بھینچے ہوئے لب لئے ہاتھ میں موبائل پکڑے وہ اسے ہی دےکھ رہا تھا اور وہ اسے دےکھ رہی تھی۔ پر کچھ توقف کے بعد وہ بولا۔
”بی بی اگر آپ نے الف سے لے کر ےے تک میرا معائنہ کر لیا ہو تو اس حرکت کی وجہ پوچھنا چاہوں گا۔“ وہ جو اسے یوں یک ٹک دےکھ رہی تھی‘ گڑ بڑا گئی اور بولی۔
”مجھے تم جیسی فلاپ چیزوں کا معائنہ کرنے کا کوئی شوق نہیں ہے‘ میں تم سے صبح والی حرکت کا پوچھ رہی تھی اور الٹے جواب تم دے رہے تھے۔“
”مگر میں نے کب تمہیں جواب دئےے میں تو تمہیں ابھی دےکھ رہا ہوں۔“
” شٹ اپ زیادہ اسمارٹ بننے کی ضرورت نہیں ہے میں تم جیسوں کو اچھی طرح جانتی ہوں۔“
وہ جو اسے یہ کہنے جا رہا تھا کہ وہ تو فون پر بات کر رہا تھا جب اس نے اسے آکر ہلا دیا اور الٹا اسے ہی بول رہی تھی۔ اچانک اس کے اس طرح کہنے پر بولا۔
”اسمارٹ بنتانہیں ہوں‘ میں آل ریڈی اسمارٹ اینڈ ڈیشنگ ہوں۔ اور بائی دا وے مجھ جیسے کتنوں کا تجربہ ہے آپ کو؟“
وہ اس کے اس طرح کہنے پر تلملا گئی اور بولی۔ ”منہ دھو رکھو مسٹر ڈیشنگ اسمارٹ تم جیسوں کو اپنے بارے میں بہت غلط فہمی ہوتی ہے‘ میں تمہارے منہ لگنا پسند نہیں کرتی۔“ اور آگے کو چل دی پھر پیچھے مڑتی ہوئی بولی۔” اور سنو یہ جو تمہارا ٹائر ہے وہ میں نے ہی پنکچر کیا ہے۔“
”کیا؟“ وہ چلایا۔
”کیا نہیں ہاں۔“ وہ اطمینان سے کہتی اپنی نسان میں بیٹھ کر ہوا ہو گئی۔

٭٭٭

گیٹ دھڑ کی آواز سے بند ہوا تھا۔ لاﺅنج میں بیٹھا فہد چونک پڑا‘ سامنے سے سخت تیور لئے اسے آتا دےکھا تو اس کی جانب لپکا۔
”کیا ہوا مسٹر اپالو‘ آج تیور کچھ ٹھیک نہیں لگ رہے!“ وہ پوچھتا پوچھتا اسے صوفے تک لے آیا‘ وہ اپنے بالوں میں مخصوص اسٹائل سے انگلیاں چلاتا ہوا بولا۔
”یار کون پاگل تھی خواہ مخواہ گلے پڑ رہی تھی‘ آغا جان کا فون آیا ہوا تھا میں ان سے بات کر رہا تھا اور وہ سمجھ رہی تھی میں اس سے بات کر رہا ہوں۔ میرا ٹائر بھی پنکچر کر دیا نان سینس۔“
”ریلیکس یار‘ ریلیکس ‘ بڑی بڑی یونیورسٹیز میں ایسی چھوٹی چھوٹی باتیں ہوتی رہتی ہیں۔“ فہد نے کہا تو وہ بولا۔
”تم تو بس خاموش ہی رہو۔“ خاصا گھسا پٹا ڈائےلاگ تھا۔
”میں اس سے قطعی متاثر نہیں‘ اور ہاں کھانا لگواﺅ میں فریش ہو کے آتا ہوں۔“
فہد اور وہ دونوں بہت اچھے دوست تھے۔ وہ بزنس کے سلسلے میں یہاں سیٹل ہوا تھا اور فہد ابھی مزید ڈپلومہ کورسز کر رہا تھا۔
وہ شاپنگ بیگز تھامتی مڑی ہی تھی کہ کسی سے زبردست ٹکر کے باعث زمین بوس ہو گئی۔ کسی نے مضبوط چوڑی ہتھیلی والا ہاتھ آگے بڑھایا تو اس نے کچھ کہنے کو منہ اٹھایا اور سامنے کھڑے شخص کو دےکھ کر چلائی۔ ”تم تم یہاں بھی“ اس شخص کے بھی کم وبیش یہی تاثر تھے۔ وہ کھڑی ہوتی ہوئی بولی۔
”اندھے ہو‘ دےکھ کر نہیں چل سکتے‘ خدا نے جو یہ ہیڈ لائٹس جیسی بڑی بڑی آنکھیں دی ہیں ناں ان سے دےکھا جاتا ہے۔ اور اگر یہ کمزور ہو گئی ہیں تو آنکھوں کا علاج کراﺅ‘ یوں لوگوں سے شتر بے مہار کی طرح ٹکراتے مت پھرو اور ہاں ہو سکے تو دوبارہ چہرہ مت دکھانا اور ہٹو میرے راستے سے۔“ وہ اسے دھکیلتی آگے بڑھ گئی۔ اس سے پہلے کہ وہ آگے بڑھتا موبائل کی بپ بج اٹھی۔ اس نے موبائل نکالا تو موبائل خاموش تھا مگر بپ مسلسل ہو رہی تھی مگر کہاں اس نے اچانک نیچے دےکھا تو ایک موبائل نیچے پڑا تھا وہ موبائل پکڑتا باہر بھاگا مگر وہ جو کوئی بھی تھی جا چکی تھی موبائل کی بیٹری ڈاﺅن ہو رہی تھی جس کی وجہ سے وہ آف ہو گیا اس نے کچھ سوچ کر موبائل پاکٹ میں رکھ لیا۔
وہ ابھی نہا کر نکلا ہی تھا کہ موبائل کی بپ گنگنائی‘ اس نے مسکراتے ہوئے موبائل اٹھالیا۔ دوسری جانب بعجلت پوچھا گیا۔ ”ہیلو کون؟“
”وہی جسے آپ نے فون کیا ہے۔“ دو بدو جواب آیا۔ وہ کچھ الجھی پھر بولی۔
”دیکھئے میں یہ کہنا چاہتی ہوں کہ میں آپ کو نہیں جانتی۔“
”آپ مجھے نہیں جانتیں تو اس میں میرا کیا قصور ہے؟“ جواب پھر آیا وہ سخت جھلائی۔
”دےکھئے پہلے آپ میری بات سنئے جس موبائل سے آپ بات کر رہے ہیں وہ میرا ہے۔ مجھے یاد نہیں آرہا تھا کہ مجھ سے کہا کھو گیا ہے۔ اس لئے اپنے سیل کے نمبر پر ٹرائی کیا آپ نے اٹھایا اگر تلیف نہ ہو تو پلیز مجھے یہ سیل واپس کر جائےے ورنہ آپ بتائےے میں کہاں آکر لے سکتی ہوں۔“ وہ بڑے تحمل سے بات کر رہی تھی۔
دوسری طرف سے جواب آیا۔ ”دےکھئے میں بہت مصروف ہوں آج۔ ایسا کریں کہ آپ شام کو PC میں آجائےے میں وہیں آپ کو موبائل دے دوں گا۔“ وہ اس فرمائش پر اندر تک جل گئی۔
”لےکن میں آپ کو پہچانوں گی کیسے؟“
”اس کی ضرورت نہیں‘ میں آپ کو پہچانتا ہوں۔“ کہہ کر سلسلہ منقطع کر دیا گیا تھا۔
ایسے یہاں بیٹھے آدھا گھنٹہ ہو چکا تھا۔ مگر ابھی تک وہ شخص نہیں آیا تھا تھک کر وہ جانے ہی والی تھی کہ اچانک کسی نے پکارا۔
”ایکسکیوزمی مس“ پیچھے مڑنے پر و چہرہ نظر آیا اسے دےکھ کر وہ چکرا کر رہ گئی۔ اوہ مائی بیڈ لگ اگین۔
”تم پھر یہاں‘ میں نے تمہیں کہا تھا ناں کہ آئندہ اپنا چہرہ مت دکھانا مگر تم ڈھیٹ معلوم ہوتے ہو۔“
”ایکسکیوزمی میڈم! میں یہاں خود نہیں آیا بلکہ آپ نے مجھے باقاعدہ دعوت دی ہے۔“
”میں تمہیں کیوں دعوت دینے لگی‘ تم مجھے پاگل مت بناﺅ۔“
”جی نہیں میں بنی بنائی چیزوں کو دوبارہ نہیں بناتا۔“ وہ پھر سے بولا۔
”وہ اس کا یہ جملہ نظر انداز کر گئی۔ اور بولی ”اپنے آنے کی وجہ بتاﺅ اور یہاں سے دفعان ہو جاﺅ۔“
”یہ رہا آپ کا سیل فون جو آپ وہاں شاپ پر چھوڑ گئی تھیں۔“
”اوہ تو وہ تمہارے پاس تھا۔“
”جی ہاں‘ میرے پاس اور اب یہ ایک شرط پر ملے گا کہ آپ کافی میرے ساتھ پیئیں۔“
”منہ دھو رکھو‘ میں تمہارے ساتھ کافی تو دور پانی نہ پیوں“ جواباً بولی۔
”منہ نہیں میں تو نہا کر آیا ہوں‘ ویسے آپ بار بار منہ کیوں دھلاتی ہیں؟“

٭٭٭

”انتہائی خبیث انسان ہے وہ۔مجھے کامل امکان لگ رہا ہے کہ اگر اب وہ مجھ سے کہیں بھی ٹکرایا تو میں اسے ضرور شوٹ کر دوں گی اور یہ سب جو میں ے اسے برداشت کیا وہ صرف اس موبائل کے لئے ورنہ میں اس خبیث کے دانت وہیں توڑ دیتی جب وہ ڈنٹونک کا ایڈ بنا مجھے کافی پینے کو کہہ رہا تھا۔ جی چاہتا تھا وہی کافی اس کے سر پر انڈیل دوں۔“ وہ بیڈ پر اوندھی لیٹی تھی جب کہ کتاب نیچے پڑی تھی۔ جیسے وہ کچھ دیر پہلے پڑھ رہی تھی اور ابھی شانزے اور قصحا کے آنے پر وہ یہ موضوع لے بیٹھی تھی۔
”مجھے اتناغصہ آرہا ہے کہ پوچھو مت سیل میں نیا بھی خرید سکتی تھی مگر یہ سیل مجھے ابی نے گفٹ کیا تھا اس لئے میں اسے کھونا نہیں چاہتی تھی اور میری اس مجبوری کا پورا پورا فائدہ اس خبیث نے اٹھایا۔ چھوڑنے والوں میں سے میں بھی نہیں ہوں۔“
”اوکے کول ڈاﺅن یار اور انسانوں کی طرح ہمارے ساتھ یہاں نیچے بیٹھ کر پڑھو ورنہ چلو اسٹڈی روم میں چلتے ہیں۔“ قصحا بولی تو اس نے کہا۔
”قصحا تو اچھی طرح جانتی ہے کہ میں ایسے ہی پڑھتی ہوں ایسے دنیا سے کٹ ہو کر میں رٹے نہیں مارسکتی۔“
رٹے مارنے کی بات پر شانزے بولی۔ ”یہ رٹے مارنا کسے کہا ہم بھی کم ذہین نہیں ہیں انسانوں کی طرح پڑھتے ہیں تمہاری طرح نہیں ٹی وی بھی چل رہا ہے اور واک مین بھی اور منہ بھی۔“
”اچھا تو کیا انسانوں کے علاوہ جانور بھی پڑھتے ہیں۔“ چہرے پر معصومیت اور آنکھوں میں شرارت لئے اس نے اس انداز سے پوچھا کہ وہ دونوں ہنس پڑھیں وہ بھی ان کے ساتھ شامل ہو گئی۔
”اتی! غزنی بھیا کے دوست کی برتھ ڈے پارٹی ہے اور اس نے ہم سب کو انوائےٹ کیا ہے اور تمہیں اور ہمیں بطور خاص کہا بھی ہے اور کارڈ بھی دیا ہے۔“
”شانو! تم پاگل ہو کیا‘ دوست وہ غزنی بھیا کا ہے اور ہم کہاں سے اس کے مہمان بننے چل دیں۔“ شانزے کی بات کے جواب میں ارتضیٰ بولی تو شانزے نے مصنوعی خفگی سے کہا۔
”میں غزنی بھیا کو کہوں گی وہی تمہیں درست کریں گے تم ہمارے بس کی نہیں ہو۔“
اس کی بات پر وہ مسکراتے ہوئے بولی۔ ”عجیب ہو تم بھی شانو یار تمہیں عجیب نہیں لگ رہا کہ دوست وہ غزنی بھیا کے اور ہم خواہ مخواہ انوائےٹڈ ہیں۔“
”یہ تو تم غزنی بھیا سے ہی دریافت کرنا‘ میں نہیں اب کچھ بھی بتانے کی۔“ شانو منہ پھلا کر بولی تو اتی مسکرا دی۔
”چلو جلدی اٹھو۔“ شانو اور قصحا اس کی بات پر حیرانی سے اسے دےکھے گئیں۔
”ارے بابا اب اس دوست کے لئے کچھ خریدنا ہے یا پھر یونہی خالی ہاتھ چلنا ہے چلو مارکیٹ چلتے ہیں۔“ تو وہ دونوں بھی اس کے ساتھ ہولیں۔
سب کے اصرار پر وہ مان گئی تھی اور اب وہ ان سب کے ساتھ چلنے کو تیار تھی۔ بلیک جرسی ویلوٹ کے خوبصورت تراش خراش والے ٹراﺅزر شرٹ کےساتھ لانبا سا دوپٹہ گلے میں لٹکائے‘ ہائی ہیل سینڈل پہنے خمدار گھنے سیاہ بال کھولے کانوں میں سلور آویزے پہنے وہ ہمیشہ سے زیادہ منفرد اور خوبصورت لگ رہی تھی۔ وہ ہمیشہ جینز یا ٹراﺅزر ٹی شرٹس کرتے وغیرہ استعمال کرتی تھی مگر آج قصحا اور شانو کے اصرار پر لڑکیوں والا حلیہ بنا رکھا تھا اسے جیولری سے کوفت تھی مگر بہت مشکل سے ان کے اصرار پر ایئر رنگز اور ہاتھ میں بریسلٹ پہنی تھی۔ البتہ میک اپ کی ان تینوں کو کوئی ضرورت نہیں تھی۔ صرف ہونٹوں پر لائٹ شیڈز کی لپ اسٹک لگا رکھی تھی تینوں نے۔
بڑا سا لان لائٹنگ کی بدولت جگمگا رہا تھا اور ایک رنگ و بو کا سیلاب تھا جو اس بڑے سے محل میں لڈ آرہا تھا۔ پورے گھر کی وائٹ ڈیکوریشن ‘ وائٹ ہاﺅس سے مشابہہ تھی اس محل کو۔ وہ چلتے ہوئے آگے بڑھنے لگیں۔
غزنی نے کہا۔ ”ٹھہرو میں سبط کو ڈھونڈتا ہوں۔“ پھر وہ بلیک کلف شدہ شلوار قمیص میں ملبوس ایک ڈیشنگ سے بندے کے ساتھ آتے دکھائی دئےے۔ اتی کی اس طرف بیک تھی اور وہ ہاتھ میں اونج جوس پکڑے ہوئے تھی۔
”ان سے ملو گرلز یہ ایک انتہائی اچھا بزنس مین اور میرا یونیورسٹی فیلو اور بہت اچھا دوست ہے۔“ غزنی کی آواز پر وہ مڑی اور سامنے کھڑے شخص کو دےکھ کر گلاس اس کے ہاتھ سے چھوٹ گیا۔
”ارے آپ یہاں کیسے؟“ وہ آنکھوں می 140واٹ کا بلب اور شرارت چھپائے بولا۔ تو تلملا گئی اور اسے کڑے تیوروں سے گھورا۔
”ارے سبط! ت ایک دوسرے کو جانتے ہو؟“ اس سے پہلے کہ وہ کچھ بتاتا وہ فوراً بولی۔
”غزنی! یہ شخص کون ہے؟ میں نہیں جانتی؟“
”چلو اب تعارف کروا دیتا ہوں۔ یہی ہے میرا دوست سبطین شاہ کاظمی! عرف سبط میرے ساتھ ہی امریکہ میں بوسٹن میں پڑھتا تھا۔ آج کل بزنس سیٹل کرنے کی غرض سے کراچی آیا ہوا ہے۔“
”اور مس آپ کا کیا نام ہے۔“ وہ اتری سے مخاطب ہوا۔“ وہ اس کی بات نظر انداز کر کے ادھر ادھر دےکھنے لگی تو غزنی بولے۔
”یہ میری بہت اچھی دوست نما بہن ارتضیٰ بخاری ہے اور مستقبل کی ماہر نفسیات ہے اور یہ میری سسٹر شانزے شہود ہے اور یہ قصحا شیرازی یہ تینوں اچھی دوست اور اچھی بہنیں ہیں۔ حالانکہ یہ دونوں میری سسٹر شانزے کی فرینڈز ہیں مگر میں انہیں شانزے کی طرح عزیز رکھتا ہوں کیوں سسٹرز؟“ انہوں نے اپنی بات کی تصدیق چاہی تو وہ دونوں مسکرادیں۔ لان مہمانوں سے بھرتا جا رہا تھا اور ارتضیٰ کو سامنے کھڑے بندے سے حددرجہ کوفت محسوس ہو رہی تھی۔ تبھی لان کے ایک قدرے پر سکون سے گوشے میں جا کھی ہوئی۔ ابھی اسے وہاں کھڑے مشکل سے چند منٹ ہی گزرے ہوں گے اسے وہ آتا دکھائی دیا اس سے پہلے کہ وہ واہاں سے ہٹتی اس نے اسے جالیا اور مسکراتے ہوئے بولا۔
”لگتا ہے ابھی تک آپ پرانی باتیں بھولی نہیں۔“
”مسٹر! زیادہ فری ہونے کی ضرورت نہیں ہے اور جنہیں آپ پرانی باتیں کہہ رہے ہیں وہ اتنی بھی پرانی نہیں کہ انہیں بھلا دوں سمجھے آپ اور رہی بات یہاں آپ کی برتھ ڈے پر آنے کی تو مجھے پتہ ہوتا کہ یہ آپ کی برتھ ڈے پارٹی ہے تو میں کبھی نہیں آتی۔ میں صرف غزنی بھیا کے دوست کی پارٹی میں آئی ہوں۔ آپ غزنی بھیا کے دوست ہی رہیں تو ٹھیک ہوگا‘ میرے دوست بننے کی غلطی مت کےجئے گا۔ مجھے آپ جیسوں سے دوستی پسند نہیں۔“ اور یہ کہتی وہاں سے چلی گئی وہ ہونٹوں پر گہری مسکراہٹ لئے اسے دےکھتا رہا۔

٭٭٭

وہ چلتی ہوئی یونیورسٹی کے گیٹ تک پہنچی تو اس کی شکل دےکھ کر جھلا گئی۔
”ہیلو مس ارتضیٰ آپ یہاں کیسے؟“ آنکھوں سے واضح شرات جھلک رہ تھی اور چہرے پر سنجیدگی کا ماسک چڑھایا گیا تھا۔
”مسٹر سبطین شاہ کاظمی یا تو آپ انتہائی ڈھیٹ انسان ہیں یا پھر بہت بے حس انسان ہیں جو یوں ہر جگہ اپنا یہ منہ لئے حاضر رہتے ہیں۔“
”ارے نہیں ہم تو آپ کے رخ زیبا کی زیارت کرنے آئے تھے مگر حالات ناساز لگ رہے ہیں اور ویسے بھی کسی شاعر نے کیا خوب کہا ہے ناں کہ….!
اے شوق دیدار کیا راز ہے آخر….!
وہ سامنے ہوتے ہیں تو دےکھا نہیں جاتا….!
ویسے آپس کی بات ہے مس میں آپ کی کمپنی کو بہت انجوائے کرتا ہوں نہ جانے کیوں؟ ہاں ایک اور بات….“ وہ چلتے چلتے پلٹا۔“ میں یہاں مغیز انکل سے ملنے آیا تھا۔ فہد کے پایا ہیں وہ اور فہد میرا دوست ہے۔“
وہ خاموشی سے اسے جاتا دےکھتی رہی۔

٭٭٭

اور مجھے محبت ہو گئی‘ ہاں محبت ایسی محبت جس کا انت نہ کوئی‘ بس پیاس ہی پیاس‘ طلب ہی طلب‘ جتنا پالو‘ لگے اب بھی کم ہے‘ جی چاہے محبت‘ محبت کرتی رہوں‘ محبت کی ننھی کونپل کب پھوٹی اور کب تناور درخت بن گئی مجھے معلوم ہی نہ ہوا۔ معلوم تب پڑا جب گھنا درخت دل مین اپنی جڑیں مضبوطی سے دور دور تک پھلا چکا تھا۔بس اب اس درخت کی ٹھنڈی گھنیری چھاﺅں ہے۔
وہ نسبتاً ایک سہانی رومانٹک سی خوشگوار شام تھی‘ ہوا بانہیں پھیلائے گول گول گھوم رہی تھی‘ آسمان پر گہرے بادل چھا رے تھے۔ فضا گنگنارہی تھی‘ اور وہ پنک کلر کے کرتے کے ساتھ بلیو جینز پہنے سرمستی کے عالم میں گاڑی دوڑا رہی تھی۔
اچانک کار ے بریک چرچرائے اور گاڑی ایک جھٹکے سے رک گئی۔ شکر تھا کہ گاڑی Beachکے قریب آکے خراب ہوئی تھی‘ وہ ہنستے ہوئے گاڑی سے باہر آئی‘ جیسے ہی اس کی مسکراہٹ پر اس کے گالوں پر دو گڑھے نمودار ہوئے ویسے ہی بارش کی بوندوں نے مٹی کی زمین پر گڑھے بنانے شروع کر دئےے۔ ٹپ ٹپ کئی قطرے لڑیوں کی صورت زمین پر آئے اور پھر چھم چھم بارش شروع ہو گئی۔ وہ بے اختیار بانہیں کھولے گول گول گھومے گئی‘ کبھی بارش کے قطروں کو ہاتھ پہ جمع کرتی‘ کبھی آنکھیں بند کر کے چہرہ اوپر کئے بارش سے چہرہ دھوتی سمندر کے کنارے کبھی دوڑنے لگتی‘ کبھی اچانک بیٹھ جاتی ایسے ہی بھاگتے بھاگتے وہ کسی سے ٹکرائی دو مضبوط ہاتھوں نے کمر سے تھام کر اسے سہارا دیا۔ سامنے کھڑے شخص کو دےکھ کر وہ چلائی۔
”آپ یہاں بھی۔“ سامنے والے پر کچھ اثر نہ ہوا وہ لہجے میں بے تحاشا خوشی سموتے ہوئے بولا۔
”مجھے یقین نہیں تھا کہ آپ مجھے پھر ایک بار مل جائیں گی۔ ویسے آج ہم پورے ایک ماہ بعد مل رہے ہیں‘ آخری بار ہم اس دن طارق روڈ پر ملے تھے آپ سڑک پہ کھڑی چاٹ کھا رہی تھیں ناں‘ ویسے آپ کی اور میری پسند بہت ملتی ہے‘ دےکھیں اب بس بھی کرین۔ تین ماہ ہو چلے ہیں ہمیں یونہی ایک دوسرے سے ٹکراتے اور لڑتے‘ اب مان جائیں‘ آپ بھی کہ یہ قدرت ہی چاہتی ہے کہ ہم بار بار ملیں۔ تو دوستی کرنے کے بارے میں کیا خیال ہے آپ کا میں اچھا خاصا معقول بندہ ہوں‘ ابھی آپ انجوائے کریں میں چلتا ہوں۔ یہ رہا میرا سیل نمبر‘ جب مجھ سے دوستی کرنے کو دل چاہے تو مجھے کسی بھی وقت رنگ کر لےجئے گا ‘ اوکے میں چلتا ہوں بائے۔“ یہ کہتا وہ نظروں سے اوجھل ہو گیا اور وہ کارڈ پکڑے گم صم سی کھڑی رہ گئی۔
وہ گھر آئی تو شانزے ‘ قصحا ‘ غزنی اور جی جی لاﺅنج میں ہی محفل جمائے بیٹھے تھے۔ اسے دےکھتے ہی شانزے بولی واہ میڈم کہاں سے آرہی ہیں اتنا نہیں ہوا کہ ہم سے بھی پوچھ لیتیں ہم یہاں یہ جشن تمہارے ساتھ منانے کو خواہ مخواہ اتاوے ہو رہے تھے اور ہاں میڈم اکیلی اکیلی انجوائے کر کے آرہی ہیں چلو جلدی سے کپڑے بدل کر آجاﺅیہاں گرم گرم پکڑے‘ سموسے ‘ فرنچ فرائز‘ چکن رول اینڈ پیسٹریز سمیت ٹھنڈی ٹھنڈی کوک اور گرما گرم بحث سے لطف اندوز ہوتے ہیں‘ ہم کراچی والوں کے لئے تو یہ جشن کا سا سماں ہے (ان بلیو وایبل) یا ر نومبر میں بارش ہونا وہ بھی ریکارڈ بارش مزہ آگیا۔ یار ورنہ یوں سمجھو بارش کو بیر ہے کراچی سے یہاں کا رخ شاذونادر ہی کرتی ہے۔ وہ بھی اگست‘ ستمبر میں کچھ ترسی سی بوندیں برسیں اور بس۔“ قصحا نے بھی بارش پر تبصرہ کرتے ہوئے گفتگو میں حصہ لیا۔
”میں ذرا کچن میں جا کر دےکھو کہ سب چیزیں تیار ہوئیں یا نہیں‘ تم لوگ گپیں لگاﺅ اتنی دیر۔“ جی جی وہاں سے اٹھتی ہوئی بولیں۔
ارتضیٰ کپڑے چینج کر کے آئی تو بولی۔ ”ارے جی جی کہاں گئیں۔“ ارتضیٰ اپنی ماں کو جی جی اور باپ کو ابی کہہ کر بلاتی تھی۔
”وہ کچھ میں گئی ہیں۔“ غزنی نے جواب دیا۔ ساتھ ہی غزنی کے موبائل کی بپ گنگنائی۔
”ہیلو غزنی اسپیکنگ!“
”غزنی ! سبطین کا ہائی وے پہ ایکسیڈنٹ ہو گیا ہے تم فوراً یہاں پہنو۔“ اطلاع دینے والا غزنی اور سبطین کا پارٹنر ہمدانی تھا۔
”ہاں ہاں میں ابھی آرہا ہوں۔‘ غزنی موبائل آف کرتے ہوئے بولا۔ ”سوری گرلز دراصل سبط کا ایکسیڈنٹ ہو گیا ہے۔ میں وہاں جا رہا ہوں۔ دعا کرنا ایکسیڈنٹ سیریس نہ ہو۔“ صوفہ پر ٹانگیں سمیٹے بیٹھی ارتضیٰ کو کچھ ہوا اور وہ وہاں سے اٹھ کر چل دی۔ اچانک ایک مسکراتا چہرہ نظروں میں گھوم گیا۔ ”ویسے آپ کی اور میری پسند بہت ملتی ہے۔“ وہ ہولے سے مسکرا دی اور زیر لب بڑبڑائی اور ہم دونوں کی ہنسی بھی بہت ملتی ہے کیونکہ آپ کے داہنے گال پر ہنستے ہوئے ایک گڑھا پڑتا ہے جو آپ کو بہت خوبصورت بناتا ہے پھر خاموش ہو کر کمرے میں چاروں اطراف نظریں دوڑائی وہ کہں نہیں تھا مگر وہ یہیں تھا اس کے بہت پاس۔
ساری رات وہ کروٹیں بدلتی رہی کسی کل اس کو چین نہ آ رہا تھا۔ صبح تھی کہ طلوع نہیں ہو رہی تھی اور رات تھی کہ بڑھتی ہی جا رہی تھی۔ خدا خدا کر کے صبح ہو ئی مگر ابھی صرف سات بجے تھے۔ کچھ سوچ کر وہ اپنی بات پر عمل کرنے سے رک گئی۔ لےکن پھر تھوڑی دیر بعد اٹھی اور اپنا ٹریک سوٹ پہنے باہر آگئی۔ باہر جھانکا تو جی جی کچن میں جا رہی تھیں۔
”مارننگ جی جی“
”مارننگ جانو“
”جی جی! ابی لان میں ہیں کیا؟“ اس کے پوچھنے پر جی جی نے اثبات میں سر ہلایا تو وہ لان میں آگئی۔
”مارننگ ابی“
”اوہ گڈ مارننگ مائی لٹل ڈول۔ کہاں جانے کا ارادہ ہے۔“ اسے ہاتھوں میں کی چین پکڑے دےکھ کر ابی نے پوچھا۔
”بس ابی یہیں پاس میں ڈرائیو کا موڈ ہے۔“ وہ بولی۔
”اوکے بیتا انجوائے دس۔“ ابی نے کہا تو وہ انہیں بائے کہتی گاڑی میں آبیٹھی اور پھر گاڑی ایک گارڈن کے آگے روکتی اندر آگئی۔ بہت سے لوگ وہاں جاگنگ کر رہے تھے۔ وہ مخصوص جگہ دےکھتی اس جانب بڑھ گئی پھر آہستہ سے ٹیوب روز کے پودے کے پاس گئی اور ایک روز توڑ لیا۔ اب وہ دوبارہ گاڑی ہسپتال کے راستے پر دوڑا رہی تھی۔
بڑی سہانی سی صبح تھی۔ ہسپتال بیڈ پر ماتھے اور بازو پر پٹیاں چڑھائے وجود کو دےکھ کر اسے بہت تکلیف ہوئی وہ آہستگی سے چلتی ہوئی اس کے سرہانے کھڑی ہو گئی پھر ٹیوب روز اس کے پہلو میں رکھ دیا۔ کچھ دیر کھڑی اسے دےکھے گئی۔
یہ شخص تو بولتے ہوئے‘ ہنستے ہوئے ہی اچھا لگتا ہے۔ ”جلدی سے ٹھیک ہو جاﺅ اچھے شخص تم اس طرح بالکل اچھے نہیں لگتے۔“ وہ کھڑی یہ سوچ ہی رہی تھی کہ ساکت پڑے وجود میں حرکت ہوئی وہ وہاں سے بھاگنے ہی والی تھی کہ اس کی آواز نے اس کے قدم روک لئے۔
”یہ کیا مس ارتضیٰ مریض کی مزاج پرسی کرنے آئیں اور مریض سے ملے بنا چلی بھی جائیں۔‘
وہ خود کو سنبھالتی ایک دم مڑی اور بولی۔
”بس ہو گئے آپ شروع ابھی آپ چپ چاپ پڑے بہت اچھے لگ رہے تھے۔“
”اچھا اگر میں آپ کو ایسے خاموش اچھا لگتا ہوں تو میں ساری زندگی خاموش رہنے کو تیار ہوں۔ بشرطیکہ میں آپ کو اچھا لگوں۔“ اس نے اسے مصنوعی خفگی سے گھورا اور خاموش رہی۔ کمرے میں معنی خیز سی خاموشی پھیل گئی۔
خاموشی اور گہری ہو گئی‘ تو وہ گھبرا کر جانے ہی والی تھی کہ سبطین نے پکارا۔
”ارتضیٰ ! ایک بات کہوں“ ارتضیٰ نے چونک کر اسے دےکھا۔ کچھ تھا اس کے لہجے میں جس نے ارتضیٰ کو چونکنے پر مجبور کیا۔ وہ بھی اسے ہی دےکھ رہا تھا۔
ارتضیٰ نے گھبرا کے نظروں کا زاویہ بدل دیا۔
وہ ہسپتال سے ڈسچارج ہو کر گھر آ گیا تھا۔ نومبر کا آخر چل رہا تھا۔ فضا میں خنکی رچی ہوئی تھی۔ وہ اپنے کمرے میں گھسی اپنے بیڈ پر سستی سے لیٹی ہوئی تھی جب اس کے موبائل کی بپ گنگنائی تھی‘ اس نے کسلمندی سے موبائل ٹٹولنے کو ادھر ادھر ہاتھ مارا مگر وہ نہ ملا جب اٹھ کے ادھر ادھر ڈھونڈا ت وہ بیڈ کے نیچے کارپیٹ پرگرا مل گیا۔ نمبر دےکھے بنا آن کیا اور بولی۔
”ہیلو کون ہے؟“
”میں بات کر رہا ہوں“ جواب موصول ہوا۔ وہ جھلا کر بولی۔
”میں کون نام ہے تمہارا کوئی؟“
”ارتضیٰ جی میں سبطین بات کر رہا ہوں۔“ اب کے وہ چونکی ہوئی اور بولی۔
”اوہ تو آپ تھے بولئے کیسے فون کیا؟“
”کیا آپ آج میرے گھر آسکتی ہیں۔“ وہ بولا۔
”اوکے‘ کب آنا ہے؟“ ارتضیٰ نے پوچھا تو اس نے کہا۔
”ہو سکے تو ابھی۔“ ارتضیٰ نے ایک نظر گھڑی کو دےکھا وہ گیارہ بجا رہی تھی۔
”اوکے آدھ گھنٹہ میں پہنچتی ہوں کہہ کر اس نے فون بند کر دیا۔
فریش ہو کر وہ باہر نکلی تو تیار تھی۔
وہ گاڑی اس کے گھر کے گیٹ پر روکتی اندر چلی آئی۔ گھر میں خاموشی کا راج تھا۔ وہ آہستہ روی سے چلتی لاﺅنج میں آئی تو وہاں بھی کوئی نہیں تھا۔
”آر یو ہیئر سبطین۔“ وہ وہیں کھڑے کھڑے بولی۔
”ہاں‘ موجود ہوں۔“ اچانک کچن سے سبطین نکلا تو وہ اس کا حلیہ دےکھ کر ہنس دی۔ چہرے پر آٹا لگا ہوا تھا‘ ایپرن پہنے ہوئے تھا۔ چہرے پر اور بھی نجانے کیا لگا ہوا تھا۔ وہ اسے دےکھ کر کھلکھلادی۔
”ارے یہ کیا حالت بنای ہوئی ہے اپنی؟“
”بس ذرا آئسکریم بنانے کی کوشش کر رہا تھا آپ کے لئے مگر بن ہی نہ سکی اور آپ بھی آگئیں۔“
”اوہ گاڈ جائےے جا کر حلیہ درست کر کے آئےے میں یہیں ہوں۔“ وہ فریش ہونے چل دیا۔
”بس دو منٹ میں آتا ہوں میں تب تک آپ بیٹھئے۔“ وہ کچن میں گئی فریج کھولا تو ڈھیر ساری فریش اسٹرابریز پڑی تھیں۔ اس کے ذہن میں ایک آئےڈیا آیا ساتھ ہی فریش کریم پڑی تھ۔ اس نے آئسنگ شوگر کریم میں ڈال کر پھینٹی اور کریم میں تازہ اسٹرابریز ڈال کر فریزر میں وہ شیشے کا باﺅل رکھ دیا۔ پھر پیپسی کے دو کین نکالے اور دو آئسکریم کپ اور دو فوک لیتی باہر ٹیبل پر آگئی۔ تب تک سبطین بھی آگیا تو وہ شیشے کا باﺅل لینے چل دی۔ جس میں کریم اور اسٹرابریز تھیں۔ وہ کاموشی سے اسے دےکھ رہاتھا۔ وہ ٹیبل پر باﺅل رکھ کر صوفے پر بیٹھتی ہوئی بولی۔ ”لو یہ کھاﺅ آئی یم شیور یہ تمہیں بہت مزے کا لگے گا‘ یہ میری ایجاد ہے اور میں اکثر یہ کھاتی ہوں۔“ اس نے فوک سے اسٹرابری اٹھاتے اپنے باﺅل میں ڈالی اور پھر پیپسی کا سپ لیتی ہوئی بولی۔ ”واہ مزہ آگیا تم بھی لونا۔“ وہ بھی اس کے ساتھ کھانے لگا۔
”یہ واقعی بہت مزے کا ہے۔ اگلی بار پھر کبھی بھی یہ بنا کر دینا بلکہ مین تو کہتا ہوں ہمیشہ بنا کر دینا۔“ وہ گھمبیر لہجے میں بولا۔ ارتضیٰ نے چونک کر اسے دےکھا وہ بھی اسے ہی دےکھ رہا تھا۔ بس آنکھیں آپس میں گفتگو کرنے لگیں۔ وہ دونوں ہی خاموش تھے۔
”آپ نے میری بات کا جواب نہیں دیا۔“ وہ ماحول کا سکوت توڑتے ہوئے بولا۔ وہ اپنی جگہ سے اٹھتی ہوئی بولی۔
”سبطین! میں آج سے پہلے کبھی کسی لڑکے کے گھر میں یوں نہیں آئی نہ ہی یوں کبھی اسے اپنے ہاتھوں سے کچھ بنا کے دیا ہے‘ سوائے آپ کے‘ اب اسے آپ سمجھیں یہ آپ کی مرضی۔“ یہ کہتی وہ باہر دوڑگئی۔ سبطین کی نظروں کی تپش اسے اپنی کمر پہ محسوس ہوئی۔ وہ آج بہت خوش تھی بہت سرشارمگن سی۔ آج اسے یہ دنیا نئی نئی اورپیاری لگ رہی تھی۔
پھر اپنے لفظوں پر خود ہی غور کرنے لگی کیا واقعی اس شخص میں کچھ ایسا ہے کہ ارتضیٰ بخاری کو پیار ہو گیا آخر وہ کیا چیز ہے جو مجھے اس کی جانب کھینچتی ہے کیا میں بھی ان ہی لڑکیوں کی طرح عشق بگھار رہی ہوں یا؟نہیں میرا پیار ان جیسا نہیں ہے‘ میں واقعی سبطین سے سچا پیار کرتی ہوں۔ مگر پیار کیسے ہو گیا یہ کب ہو گیا میری زندگی میں تو ایسی کسی بات کی گنجائش نہیں نکلتی تھی پھر میں نے چند ماہ کی شناسائی می کسی شخص کو اپنا پیار اپنا دل اپنا اختیار کیسے سونپ دیا۔ ارتضیٰ بخاری کو یہ ان میچور ٹی سوٹ نہیں کرتی اس کی ترجیحات میں یہ پیار ویار تو کہیں نہیں تھا پھر کب اور کہاں کچھ ایسا غلط ہوا کہ مین خود اپنی ہی کہی باتوں‘ خود اپنے ہی کئے دعوﺅں کو بھلا بیٹھی‘ نہیں یہ سب ٹھیک نہیں جو ہو گیا سو ہو گیا اب اور نہیں۔
وہ کئی دن اس سے کتراتی رہی پھر اچانک اس کا سامنا ہو گیا۔ وہ طارق روڈ پر اپنی ہی سوچوں میں چلتی جا رہی تھی جب کسی گاڑی کے بریک چرچرائے اور کسی نے اسے دھکا دیا تھا۔ وہ کسی شاپ کے باہر فرش پر اوندھے منہ گری تھی مگر اسے بچانے والا خود خون میں لت پت سڑک پر گرا تھا۔ وہ اٹھ کر اس تک پہنچی تو سبط کو دےکھ کر حیران رہ گئی۔ ساری رات وہ ICUمیں رہا وہ ساری رات رو رو کر دعا کرتی رہی۔ خدا سے اسے مانگتی رہی۔
”اے خدا آج تک میں نے آپ سے کچھ نہیں مانگا کیونکہ مجھے مانگنے کی ضرورت ہی پےش نہیں آئی لےکن پھر آپ نے سبط کو میری زندگی میں بھیجا لےکن میں نے آپ کی طرف سے اس انعام اس تحفے کو ٹھکرا دیا یہ اس کی سزا ہے بس ایک بار اسے واپس لوٹا دیں‘ ایک بار۔“ اور پھر واقعی اس کی دعا سن لی گئی تھی اور اس کے سبط کو لوٹا دیا گیا تھا اور وہ بھی اس کی جانب لوٹ گئی تھی۔

٭٭٭

آج وہ سبط کے گھر پر موجود تھی اور اس کے کمرے میں بیٹھی اس سے گپ شپ لگا رہی تھی۔ جب اچانک لائٹ چلی گئی ارتضیٰ نے چیخ ماری اور ایک ہی جست میں چھلانگ لگا کر سبطین کے سینے سے جا لگی۔ سبطین نے اسے نرمی سے خود سے علیحدہ کیا اور اس کا ہاتھ پکڑ کر بولا۔ ”ارے یہ کیا ہماری ارتضیٰ ڈر پوکہے۔“ اور کینڈلز روشن کرنے لگا۔ روشنی کے ہوتے ہی ماحول اچانک بہت رومانٹک ہو گیا۔ اس پر اسرار سی روشنی میں وہ سبطین کے بہت قریب کھڑی تھی اتنا کہ اس کی سانسوں کا ارتعاش سن رہی تھی اور محسوس کر رہی تھی۔ پھر اچانک سبطین نے اسے دیوار سے لگا دا اور خود اس کے بہت قریب ہو گیا۔ نظروں کا تصاد ہوا اور وہ کمرے میں لگی دوسری کینڈلز کی طرح ایک کینڈل بن گئی اور سبطین آگ۔ سبطین کی آنکھوں اور قربت کی آگ اسے قطرہ قطرہ پگھلا رہی تھی۔ اس کے ہونٹ لرز نے لگے اور خود وہ پسینے میں بھیگ گئی۔
اب وہ سبطین کی نظروں کو مزید نہیں دےکھ سکتی تھی اس نے پلکیں گرادیں پلکیں بھی ہولے ہو لے لرز رہی تھی۔ سبطین کچھ اور قریب ہوا اس نے اپنا ہاتھ چھڑانا چاہا مگر چھڑانہ سکی۔وہ اسے پیچھے دھکیلتی باہر کو بھاگ گئی اور اس کی نظروں نے دور تک اس کا تعاقب کیا تھا۔
14فروری ٹھیک صبح پانچ بجے اس کے موبائل کی بپ گنگنائی نہ جانے کیوں مگر اس کے دل نے ایک بیٹ مس کی تھی اور پھر موبائل اسکرین پر جگمگاتے نمبر کو دےکھ کر اسے معلوم ہو گیا کہ اس کے دل نے ایسا کیوں کیا تھا۔
”ہیلو! ہیلو ارتضیٰ ہیپی برتھ ڈے ٹو یو ہیپی برتھ ڈے ٹو مائی ڈیئر“ وہ گنگنا رہا تھا اور اس ک گنگناہٹ ارتضیٰ کے دل میں اتررہی تھی۔ ”ہیلو ارتضیٰ آریو ہیئر۔“ وہ اس کی خاموشی پر بولا تو وہ بولی۔
”ہاں سن رہی ہوں۔“
”دےکھا آج سب سے پہلے میں نے ہی تمہین وش کیا ہے‘ اب شام میں فون کروں گا۔ تمہارے لئے ایک سرپرائز ہے اوکے بائے۔“ فون بند ہو چکا تھا۔ وہ پھر سے آنکھیں موند کر لیٹ گئی مگر اب نیند کہاں آنی تھی۔ بس وہ یونہی آنکھیں موندے لیٹی رہی۔

٭٭٭

سب مہمان آچکے تھے ہر طرف گہما گہمی تھی لےکن ارتضیٰ ان سب سے پےش نظر یہ سوچے جا رہی تھی کہ آخر وہ سرپرائز کیا ہے جو سبطین نے مجھے دینا ہے۔ کیا وہ کہیں خود تو نہیں آرہا۔ اس کے دل نے سرگوشی کی۔ وہ تیار ہونے چل دی۔ بہت دل سے تیار ہوئی تھی آج وہ۔ بلیک چوڑی دار پائجامے کے ساتھ ریڈکلر کی اونچی اسٹائلش سی شرت پہنے ساتھ ریڈ اور بلیک دوپٹہ لئے کانوں میں بالیاں اور ہاتھوں میں ڈھیروں کانچ کی چوڑیاں پہنے وہ غضب ڈھا رہی تھ مگر جس کے لئے اس نے یہ روپ دھارا تھا وہ ہی نہیں تھا۔ قصحا نے اسے دےکھا تو بے ہوش ہونے کی ایکٹنگ کرتی بولی۔ ”میں تو گئی کام سے۔ ارے پانی نہ گرانا میری تیاری خراب ہو جائے گی۔“
ارتضیٰ اس کی شرارت سمجھتے ہوئے خود بھی ہنس دی۔
”اور یہ جو تم آج باقی بچارے لوگوں خاص کر لڑکوں کو اپنے حسن سے پریشان کروگی اس کا کیا؟“ تو وہ قصحا کی بات پر پھر سے مسکرادی۔
وہ کیک کاٹ کر ابھی فارغ ہی ہوئی تھی کہ سبطین کا فون آگیا۔ اس نے دھڑکتے دل کے ساتھ فون کانوں سے لگایا۔ دوسری طرف سبطین کی دلکش آواز ابھری۔ ”ہیلوارتضیٰ ایک بر پھر بہت بہت مبارکباد قبول کرو۔“
”تھینک یو سبطین۔“ ارتضیٰ نے کہا تو سبطین بولا۔
”اب مجھے بھی مبارک باد دو۔“
”ارتضیٰ اس کی اس بات پر حیرانی سے بولی۔ ”تمہیں بھی مبارکباد مگر کس بات کی؟“
”پہلے مبارکباد تو دو پھر بتاتا ہوں۔“ ارتضیٰ مسکرا دی اور بولی۔
”اچھا بابا بہت بہت مبارک ہو تمہیں۔“ تو وہ بولا۔
”میری آج شادی ہے ارتضیٰ ‘ اپنی بچپن کی منگ سے۔“ ارتضیٰ کے ہاتھ سے فون گرتے گرتے رہ گیا پھر ہمت مجتمع کر کے بولی۔
”تم مذاق کر رہے ہو نا سبطین۔“ وہ اس کی بات سن کر مسکرادیا۔
”ارے نہیں اس میں مذاق کی کیا بات ہے‘ شادی جیسا معاملہ مذاق میں تو نہیں لیا جاتا میں واقعی سچ کہہ رہا ہوں‘ ہاں یہ افسوس ہے کہ میں تمہیں یعنی اپنی سب سے اچھی دوست کو انوائےٹ نہ کر سکا مگر یہ سب اتنا اچانک ہو گیا کہ مجھے تمہیں بتانے کا موقع نہ مل سکا لیکن پرامس شہر لوٹنے پر میں تمہیں ایک اچھی سی ٹریٹ دوں گا۔“ ارتضیٰ کے ہاتھ سے فون چھوٹ کر نیچے جا گرا وہ زمین پر بیٹھی چلی گئی۔
وہ رونا چاہتی تھیءمگر اسے لگا اس کی آںکھیں بھی بے وفا ہو گئی ہیں‘ اسے اپنی آنکھوں میں ریت چبھتی محسوس ہوئی وہ چلانا چاہتی تھی مگر آواز کہیں گم ہو گئی تھی۔ وہ سوگ و خوشی کا امتزاج بنی بیٹھی تھی یہاں تک کہ سوگ و خوشی کا منظر اس کا لباس بھی عیاں کر رہا تھا۔

اس کے ذہن میں کچھ الفاظ بھڑ کی مانند پھڑ پھڑائے۔ (زمانے کی گند ہیں یہ ملیحہ جیسی لڑکیاں) کس حق کے ساتھ یہ غیر مرد کے ساتھ گلچھڑے اڑاتی پھرتی ہیں۔ مجھے ایسے لوگوں سے قطعی کوئی ہمدردی نہیں جو خود جانتے بوجھتے ہوئے اپنے پیروں پر کلہاڑی مارتے ہیں اور پھر خود ہی در ددرد چلاتے ہیں۔“ بہت سے جملے مل جل کر اس کے ذہن میںکربلاہٹ مچانے لگے۔
اس نے اپنے کانوں پر ہاتھ رکھ لئے اور آنکھیں زور سے میچ لیں مگر آوازیں تو اتر سے آرہی تھیں پھر اس کے اندر کوئی طنز یہ مسکرایا کیوں ارتضیٰ بخاری کیا تم نائلہ‘ سفینہ اور ملیحہ سے مختلف ہو‘ کیا تم نے بھ وہیں نہیں کیا جو تب انہوں نے کیا تھا‘ (مگر میرا پیار پیار تھا اور ان سے مختلف تھا) اس نے بودا سا جواز گھڑا۔ کوئی قہقہہ لگا کر اس کے اندر ہنس دیا۔
”ارتضیٰ بی بی ہر بے وقوف بے وقوفی کرنے سے پہلے یہی سوچتا ہے کہ اس جیسا عقل مند کوئی اور نہیں!“
مگر میں تو واقعی سبطین سے سچی محبت کی۔ پھر کوئی اس کے اندر استہزائیہ ہنسی ہنس کے بولا اچھا ملیحہ نے بھی ایسی ہی محبت کی تھی۔ تب تم نے کیوں نہ مانا وہ سر پکڑ کر اندھیروں میں گم ہوتی چلی گئی۔

٭٭٭

ڈاکٹر ریحان! ڈاکٹر شاہ کو میرے کیبن میں بھیجئے فوراً۔“ ڈاکٹر حماد نے اپنے گلاسز لگاتے ہوئے فائل اپنے آگے رکھتے ڈاکٹر ریحان سے کہا۔
”سرمے آئی کم ان۔“
”یس بیٹھئے ڈاکٹر شاہ مجھے آپ سے کچھ بات کرنی ہے۔“
”جی فرمائےے سر۔“ وہ مودب انداز میں بولا۔
ڈاکٹر حماد فائل بند کر کے ایک طرف رکھتے ہوئے ڈاکٹر شاہ سے بولے۔
”ڈاکٹر یہ 201کا کیا کیس ہے؟ آخر وہ کب حل ہوگا پچھلے چار سال سے وہ کیس آپ کے پاس ہے‘ آخر پیشنٹ اب تک ٹھیک کیوں نہیں ہوا؟“
”سر میں نے اپنی ہر ممکن کوشش کی ہے اور تبھی پےشنٹ کومہ سے باہر آیا ہے‘ ورنہ تو وہ بالکل سروائیو نہیں کر رہا تھا اور کامل امکان تھا کہ وہ ساری زندگی یونہی پڑا رہتا۔ اب بس وہ پیشنٹ میرے ساتھ تعاون نہیں کر رہا مگر آئی ای شیور کہ میں اسے بولنے اور باتیں کرنے کے لئے اکسانے میں کامیاب ہو جاﺅں گا۔“ ڈاکٹر شاہ ڈاکٹر حماد کو تفصیلاً جواب دیتے ہوئے بولے۔
”اوکے ڈاکٹر شاہ آپ جائےے اور اپنی کوشش جاری رکھئے۔“ ڈاکٹر حماد نے مسکراتے ہوئے کہا تو ڈاکٹر شاہ تھینک یو سر کہتے ہوئے باہر آگئے۔
”ڈاکٹر شاہ نے روم نمبر201میں داخل ہوتے ہوئے ایک نظر بیڈ پر پڑے ساکت وجود پر ڈالی اور مسکرا کر بولے۔
”ہیلو پیشنٹ ہاﺅ آر یو۔“ پھر کوئی بھی جواب موصول نہ ہونے پر قریب پڑے اسٹول پر بیٹھتے ہوئے بولے۔ ”دراسل ہم سب نے آپ کو پیشنٹ پیشنٹ کہہ کہہ کر پےشنٹ ہی بنا دیا ہے۔ اب جبکہ آپ بالکل ٹھیک ہیں تو تب بھی ہم آپ کو پےشنٹ ہی کہہ رہے ہیں چلیں آج سے میں آپ کو دوست کہوں گا‘ کیسا ہے؟ سب سے بیسٹ دوست ٹھیک ہے ناں۔“ ڈاکٹر شاہ نے پھر سے اسے مخاطب کیا مگر ساکت پڑے وجود میں کوئی حرکت نہ ہوئی۔
ڈاکٹر شاہ چند لمحے ساکت وجود کو پریشانی سے دےکھتے رہے پھر اٹھتے ہوئے بولے۔ ”اچھا دوست میں کل پھر آﺅں گا تم سے ڈھیر ساری باتیں کرنے۔ تم کل تیار رہنا میں کل تمہارا تفصیلی انٹرویو کرنے والا ہوں۔ کل تم چپ نہیں رہ پاﺅ گے‘ میں تمہیں بولنے پر مجبور کر دوں گا۔“ اور پھر باہر چلے گئے۔
”ہیلو دوست ہاﺅ آر یو‘ دےکھو آج میں حسب وعدہ یہاں موجود ہوں‘ اور اب تم سے ڈھیر ساری باتیں بھی کرنی ہیں مجھے۔ سو آج میں یہ خاموشی بالکل بھی برداشت نہیں کروں گا۔“
”ڈاکٹر شاہ پےشنٹ نمبر201سے باتیں کرتے کہہ رہے تھے۔ ”چلو سب سے پہلے اپنا نام بتاﺅ۔“ جواب نہ پا کر وہ بولے۔ ”اچھا چلو یہ بتاﺅں کہ تمہاری ہابی کیا ہے؟“ جواب پھر ندارد۔ ”اچھا چلو اپنا فیورٹ رنگ بتاﺅ‘ اپنا فیورٹ ہیرو بتاﺅ‘ اینڈ وغیرہ وغیرہ۔“ لےکن ساکت وجود جوں کا توں پڑا رہا۔ ”جلدی سے ٹھیک ہو جاﺅ اچھی لڑکی تم اس طرح خاموش پڑی بالکل اچھی نہیں لگتی‘ آئی ایم شیور کہ جب تم ہنستی ہو گی‘ باتیں کرتی ہوگی تو بہت اچھی لگتی ہوگی‘ بظاہر لگتا ہے زندگی تمہارے اندر کہیں مر سی گئی ہے‘ مگر زندگی اب بھی تمہارے اندر کہیں کسی کونے میں چھپی سانس لے رہی ہے اس زندگی کو ایک بار پھر سے اپنی آنکھوں میں بھر دو پھر سے زندگی کو جیﺅ کیونکہ وہ اوپر والا بھی یہی چاہتا ہے ورنہ تمہارا اتنا زبردست نروس بریک ڈاﺅن ہوا تھا پھر تم چار سال تک کومہ میں رہیں پھر ایک دن تم کومہ سے باہر آگئیں حالانکہ تم نے تو سروائیو کرنا ہی چھوڑ دیا تھا اور تمہارا کومہ سے باہر آنا ناممکن تھا مگر یہ سب اس خدا کی مرضی اور تمہارے چاہنے والوں کی دعاﺅں کی بدولت ممکن ہوگیا‘ تمہیں پتہ ہے کہ وہ لوگ تمہیں کتنا چاہتے ہیں‘ کتنا پیار کرتے ہیں ان چار سالوں میں وہ مر مر کے جئے ہیں۔ اس آس پر کہ شاید تم ان کی جانب لوٹ آﺅ‘ تمہیں پتہ ہے جب تمہارا باپ تمہیں یہاں لے کر آیا تو اتنا بوڑھا اتنا بے بس نہیں تھا جتنا کہ اسے ان چار سالوں نے کر دیا ہے۔ اور جس دن انہیں تمہارے کومہ سے باہر آنے کی خوشخبری ملی وہ پھر سے جی اٹھے ان چار سالوں میں پہلی بار یں نے ان کے چہرے پر خوشی کو ڈیرہ جماتے دےکھا‘ ان سب کو جو تمہارے اپنے ہیں‘ مگر تم نے پھر سے ان کی امیدوں کو توڑ دیا۔ تم کسی سے نہ بات کرتی ہو نہ حرکت کرتی ہو‘ حالانکہ تمہیں کومہ سے باہر آئے ایک ماہ ہو چلا ہے‘ خوشی کی جوت ان کی آنکھوں سے پھر بجھ رہی ہے‘ اور اس کی وجہ تم ہو‘ کیسی بے حس لڑکی ہو تم کہ جو لوگ تمہیں اتنا چاہتے ہیں تم نے انہیں ہی دکھ میں مبتلا کر رکھا ہے مگر اب تم سن لو تمہیں اپنی اس خاموشی کو توڑنا ہوگا۔“ ڈاکٹر شاہ نے اس کی خاموشی پر اسے اچھا خاصا لیکچر دے ڈالا۔
ڈاکٹر شاہ آج پھر سے اپنی پیشنٹ 201کے کمرے میں مجود تھے اور اسے باتیں کرنے پر اکسا رہے تھے۔ ”ہیلو دوست تو تم نے کیا سوچا تم اپنی اس چپ کو توڑوگی یا نہیں‘ آخر تم کیوں نہیں سمجھتی کہ یہ جو تمہاری چپ ہے تمہارے گھر والوں کا کتنا نقصان کر رہی ہے دےکھو میں جانتا ہوں تم بہت اچھی لڑکی ہو اور بہت پیار کرنے والی بھی ہوگی تبھی تو تمہیں پیار کرنے والے لوگ اتنے زیادہ ہیں وہ تم سے بے تحاشا پیار کرتے ہیں تم بھی تو ان سے پیار کرتی ہوگی پھر کیوں نہیں دکھائی دیتے تمہیں ان کے آنسو ان کے دکھ‘ وائے دوست وائے‘ اگر تم ان سے پیار کرتی ہو تو پھر تم اپنی چپ کو ضرور توڑو گی تم ایسا ضرور کرو گی اور ابھی کے ابھی کروگی۔“
ڈاکٹر شاہ پر یقین لہجے میں کہہ رہے تھے۔ ساکت پڑے وجود میں کوئی حرکت نہ ہوئی ہاں مگر سی گرین پتھریلی برناف آنکھوں کے کسی کونے سے برف پگھلی تھی اور نیچے کا منظر واضح ہوا تھا۔ ان آنکھوں میں زندگی اپنی آخر سانسیں بچائے چھپی بیٹھی تھی جبکہ ان آنکھوں میں تمام جذبے تمام خوشیاں دم توڑ چکی تھیں اور ان کی موت پر ماتم کرنے کوئی نہیں آیا تھا۔ ڈاکٹر شاہ کو کچھ امید ہوئی تو وہ مزید بولے۔
”دوست لوٹ آﺅ اپنی زندگی کی جانب اپنے پیاروں کی جانب تم بہت پیاری لڑکی ہو‘ سب تم سے پیار کرت ہیں‘ کوئی تم سے نفرت نہیں کر سکتا‘ کوئی تمہیں دھوکہ نہیں دے سکتا‘ اور تمہیں کیا چاہئے جس کی زندگی میں اتنی محبتیں ہوں وہیں انسان زندگی سے مایوس ہو جائے‘ ایسا کیسے ہو سکتا ہے؟“
سی گرین آنکھوں میں برف پگھل رہی تھی اور نیچے کے منظر میں جانے آنکھوں میں کیسی تڑپ تھی کہ آنکھوں نے حرکت کی تھی اور پھر ڈاکٹر شاہ کے چہرے کی جانب جا کر رک گئیں۔ غصہ‘ نفرت‘ تڑپ ‘ دھوکہ‘ کسک اور بے اعتباری بے حسی کیا کچھ نہیں تھا ان آنکھوں میں جو جمع ہو کر دھیمے دھیمے لا رہا تھا۔ ڈاکٹر شاہ چند ثانےے اسے دےکھتے رہے پھر باہر چل دئےے۔
”ڈاکٹر شاہ! بہت بہت مبارک ہو آخر چار سال دو ماہ بعد یہ کیس ختم ہو ہی گیا آج میں بھی حقیقی معنوں میں بہت خوش ہوں۔“ ڈاکٹر حماد خوش ہوتے ہوئے بولے۔ آج ڈاکٹر شاہ بہت خوش تھے۔ کیونکہ پیشنٹ 201ہوش و خرد کی دنیا میں لوٹ چکا تھا اور وہ پےشنٹ کوئی اور نہیں بلکہ ارتضیٰ بخاری تھی وہ آج ڈسچارج ہونے والی تھی کیونکہ ایک ہفتہ پہلے اس نے اپنی خاموشی کا خول توڑ دیا تھا لےکن پھر بھی کوئی کمی تھی لےکن وہ سب اسی بات پر بہت خوش تھے کہ وہ بولنے لگی ہے‘ بے شک وہ بولنا صرف ہوں ہاں تک محدود تھا۔ مگر ان کا خیال تھا کہ آہستہ آہستہ وہ ٹھیک ہو جائے گی۔
”ٹھینک یو ڈاکٹر شاہ ‘ آئی ایم پرسنلی تھینکڈ یو آپ جان نہیں سکتے کہ آج ہم سب کو آپ نے پھر سے نئی زندگی دی ہے۔“ یہ شانزے تھی جو خوشی سے بھرپور آواز میں بول رہی تھی۔
”ارے شکریہ کیسا یہ تو میری ڈیوٹی تھی۔ “ جواباً ڈاکٹر شاہ بولے تھے۔

٭٭٭

آج حسب معمول اس کے کمرے میں میلہ سا لگا ہوا تھا۔ وہ سب اپنی اپنی ہانکے جا رہے تھے مگر سب کی کوشش یہی تھی کہ وہ بھی ان کے ساتھ گفتگو میں شریک ہو مگر وہ خاموشی سے بیٹھی انہیںدےکھ رہی تھی۔ اسی اثناءمیں ڈاکٹر شاہ بھی چلے آئے ۔ گھر آئے اسے دو ہفتے ہو چلے تھے اور اس بیچ ڈاکٹر شاہ دوسری بار آچکے تھے۔
”ہیلو دوست ! اینڈ ایوری باڈی کہیں میں نے آپ سب کو ڈسٹرب تو نہیں کیا؟“ ڈاکٹر شاہ اندر آتے ہوئے بولے۔
”ارے نہیں ڈاکٹر صاحب آئےے بیٹھےے کےجئے اپنی دوست سے باتیں‘ ہم سے تو اس نے بہت سی باتیں کر لیں۔“ شانزے ذرا غصے سے بولی۔ ڈاکٹر شاہ مسکرا دئےے اور اس کی جانب دےکھتے ہوئے بولے۔
”کیوں دوست‘ آپ اب بھی ان سے بات نہیں کرتیں۔“ ارتضیٰ نے ایک نظر اسے دےکھا اور بمشکل بولی۔
”کرتی ہوں۔“ شانزے اس کے جواب دینےپر بولی۔ ”شکر ہے کفرٹونا خدا خدا کر کے۔“
”ڈاکٹر شاہ اگر آپ کے پاس کچھ ٹائم ہو تو پلیز مجھ بوڑھی پر بھی عنایت کر دےجئے۔“ وہ جو اپنے کمرے میں سوچوں میں غرق بیٹھا تھا‘ اپنی ماں کی آواز پر چونکا۔
”اوہ میری پیاری ینگ سویٹ بیوٹی فل مما سارا ٹائم آپ ہی کا تو ہے۔“ وہ ان کی بانہیں تھامتا انہیں پاس بٹھاتا بولا۔
”بس بس‘ یہ بتا کہ کن سوچوں میں غلطاں تھے۔“ وہ اس کے ماتھے پر پیار کرتی بولیں۔
”بس کچھ خاص نہیں یونہی 201کے بارے میں سوچ رہا تھا۔“
”201“ مما اس کے جواب پر متعجب ہوئیں۔
”آئی مین مائی پےشنٹ201وہی چار سال پرانا والا کیس ارتضیٰ بخاری کا۔“ وہ وضاحت کرتے ہوئے بولا۔
”اچھا وہ پےشنٹ‘ اب تو وہ ٹھیک ہے ناں۔“ مما بات سمجھتے ہوئے بولیں۔
”یس مما وہ اب پہلے سے کافی بہتر ہے۔“
”اچھا اب نیچے آجاﺅ تمہارے پاپا بھی آنے والے ہوں گے میں ڈنر لگاتی ہوں۔“ وہ اسے اطلاع دیتے کمرے سے باہر آگئیں۔
اور وہ سوچنے لگا کہ آخر ایسا کیا ہوا ہوگا اس لڑکی کے ساتھ جو وہ زندگی سے اس قدر مایوس ہے جو بھی ہے میں اسے زندگی کی طرف لوٹاﺅں گا۔ وہ دل میں مصمم ارادہ کرتا ہوا بولا۔

٭٭٭

وہ گاڑی سمندر کنارے روکتے ہوئے سوچنے لگا کیا یہ شہر اس شہر کے باسی کیا اس کی گلی کے وہ راستے اور کیا وہ خود مجھے پہچان پائے گی۔ کیا اب بھی وہ یہاں ہی ہوگی یا اوہ گاڈ کیا پتہ اس کی شادی ہو چکی ہو۔ اوہ میرے خدا میں نے اس بارے میں تو سوچا ہی نہیں۔ ابھی اس سوچ سے ہی مجھے اتنی تکلیف ہو رہی ہے تو جب میں نے اسے اپنی شادی کے بارے میں بتایا ہوگا تو تب اس کی کیا حالت ہوئی ہوگی۔وہ گاڑی سے باہر نکل آیا اور سڑک پر چلنے لگا یہ میں نے تب کیوں نہ سوچا‘ اب اس بات کو سوچ کر ہی مجھے اتنی تکلیف ہو رہی ہے تو اس نے یہ سب کیونکر سہا ہوگا۔ میرا خیال کتنا خودغرض تھا‘ کیا اب بھی وہ مجھ جیسے انسان کے انتظار میں بیٹھی ہوگی؟ کیا اب بھی اس کا گھر وہیں ہوگا‘ نمبر اس کے پاس بھی تھا وہی سیل فون ہوگا‘ اسی نمبر کا‘ اس کے دل میں ایک موہوم سی امید جاگی۔ اس نے اپنا سیل فون اٹھا کر ایک نمبر ڈائل کیا۔ دوسری طرف بدستور بیل ہو رہی تھی۔ بیل کے ساتھ اس کے دل کی دھڑکن بھی بج رہی تھی۔ بیل مسلسل ہو رہی تھی پھر بھی اس نے ہمت نہیں ہاری فون کٹ گیا۔ اس نے دوبارہ کوشش کی اب کے چوتھی بیل پر فون اٹھا لیا گیا۔
”ہیلو!“ ایک سرد آواز نے اس کے اندر سنسنی دوڑا دی۔ وہ اپنی جگہ ساکت ہو گیا۔ دوسری طرف بھی مکمل خاموشی تھی لےکن وہ خاموشی کافی معنی خیز تھی چند سانسوں کا تبادلہ دونوں طرف سے ہو رہا تھا۔ ”سب….سبطین….“ دوسری طرف ایک سرگوشی ابھری۔
اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہتا ایک بائےک نے اسے ٹکر ماری اور وہ اندھیروں میں گم ہوتا چلا گیا۔
جب اسے ہوش آیا تو وہ کسی کمرے میں لیٹا ہوا تھا کمرے میں نائٹ بلب روشن تھا‘ وہ چند لمحے کمرے کو گھورتا رہا پھر یکدم اٹھ کے بیٹھ گیا۔ اسے یاد آیا کہ وہ بیچ سڑک پر چل رہا تھا جب کسی بائےک نے اسے ٹکر ماری تھی۔ اس کے بعد اسے ہوش آیا تو وہ یہاں پڑا ہوا تھا اس نے گھڑی کی جانب دےکھا جو دو بجا رہی تھی۔ وہ شش و پنج میں مبتلا ایک بار پھر بستر پر دراز ہو گیا۔
گھڑی چھ بجا رہی تھی جب وہ اٹھا اور واش روم کی طرف چل دیا۔ منہ پر پانی کے چھپاکے مارنے کے بعد وہ باہر نکل آیا۔سامنے ہی اسے جاگنگ سوٹ پہنے ایک لڑکا نظر آیا لڑکا بھی اسے دےکھ چکا تھا سو مسکراتے ہوئے اس کی طرف بڑھا۔
”ارے آپ جاگ گئے‘ اب کیسی طبیعت ہے آپ کی؟“ وہ اس سے سوال کرتا اسے صوفے کی جانب لے آیا پھر اس کے جواب کا انتظار کئے بغیر بولا۔ ”مجھے احتشام حماد کہتے ہیں اور آپ کو؟“ وہ اس کے سوال کے جواب میں بولا۔
”سبطین شاہ کاظمی۔“ لڑکا مسکرایا اور بولا۔
”گڈ نیم ویسے ہمارے گھر بھی ایک مسٹر شاہ رہتے ہیں میرے بڑے بھیا۔ میں آپ کو ان سے ملواتا ہوں وہی آپ کو یہاں لے کر آئے ہیں۔“ اور پھر تھوڑی دیر بعد اس کے ساتھ ایک اور شخص تھا۔ ساتھ میں ایک عورت بھی تھی جو ان کی ماں لگتی تھی۔ نجانے کیوں مگر وہ اس عورت کو دےکھ کر چونکا تھا۔ کم و بیش یہی تاثرات اس عورت کے بھی تھے۔
”مجھے ڈاکٹر رضا شاہ کہتے ہیں اور آپ کو؟“ دوسرا شخص اس سے سوال کر رہا تھا۔ وہ جواباً بولا۔
”مجھے سبطین شاہ کاظمی کہتے ہیں۔“ اب کے وہ عورت بری طرح چونکی تھی۔
”ارے کمال ہے میرا نام بھی رضا شاہ کاظمی ہے۔“ وہ ہنستا ہوا بولا۔
وہ عورت بے چین ہو کر بولی۔
”بیٹا تمہارے پاپا کا کیا نام ہے؟“ سبطین نے اس سوال پر الجھی نظروں سے اس عورت کو دےکھا پھر بولا۔
”سکندر شاہ کاظمی۔“
”سس…. سکندر تم سکندر کے بیٹے ہو‘ تم تم میرے بیٹے ہو۔“ وہ فرط جذبات سے لڑکھڑاتی زبان سے بولیں تو وہاں موجود سب اس عورت کو حیرانی سے تکنے لگے وہ عورت آہستہ آہستہ بولنے لگی۔
”بیٹا جب رات کو تمہیں رضا زخمی حالت میں گھر لایا تو تمہارے چہرے کو دےکھ کر میں چونکی تھی کیونکہ تم میں سکندر کی بہت شباہت تھی‘ پھر جب اب تم کو دےکھا تو تمہاری آنکھیں دےکھ کر چونک گئی تمہاری کتھئی آنکھوں کا رنگ میری آنکھوں جیسا تھا‘ جب تم نے نام بتایا تو میرا شک یقین میں بدل گیا‘ یہ رضا تمہارا بھائی ہے‘ میں نے اسے بھی سب کچھ بتا دیا تھا‘ اسی لئے اس کے نام کے ساتھ اس کے باپ کا نام ہی استعمال ہوتا ہے۔ اور یہ میرا تیسرا بیٹا احتشام ہے‘ حماد اور میرا افزاعلوی کا بیٹا‘ جب مجھ سے تمہیں اور تمہارے باپ کو چھین لیا گیا تو حماد ہی میرا سہارا بنے تھے بیٹا‘ مجھے یقین نہیں آرہا کہ آج تم یہاں میرے پاس ہو‘ میں تمہارے لئے لمحہ لمحہ تڑپی ہوں‘ اور آج اچانک چند ہی لمحوں میں مجھ پر یہ انکشاف ہو گیا کہ تم ہی میرے سبط ہو پھر وہ جھجکتے ہوئے بولیں۔ بیٹا تمہارے پاپا کیسے ہیں؟“
”وہ جواباً بولا۔ ”وہ اب اس دنیا میں نہیں ہیں۔“
”اوہ میرے خدا۔“ وہ عورت منہ پر ہاتھ رکھے رونے لگیں۔ وہ عورت کوئی اور نہیں سبطین شاہ کی ماں تھی۔ وہ بھی اس کے گلے لگ کے رونے لگا۔
کبھی کبھی زندگی میں کچھ عمل کس تیزی سے رونما ہو جاتے ہیں یہ سب کتنا اچانک ہو گیا تھا ہر کوئی اب بھی اپنی اپنی جگہ دنگ تھا۔ یہ تو اس قدرت کا کرشمہ ہے کہ آج پورے آٹھائیس سال بعد وہ اپنی ماں سے مل رہا تھا۔ اس سے پہلے وہ اسے تین سال کی عمر میں ملی تھی۔ وہ یہاں ارتضیٰ سے ملنے آیا تھا مگر مجھے یہاں میرے اپنے بھی مل گئے۔ اب بس مجھے ارتضیٰ سے ملنا ہے اسےک بار صرف ایک بار وہ مجھے مل جائے پھر مجھے موت بھی آجائے تو کوئی فکر نہیں ہے۔ میں آج ہی نکلتا ہوں اس کے گھر کی طرف کیا پتہ وہ مجھے وہاںمل جائے۔ نہ جانے وہ مجھے پہچانے گی بھی یا نہیں۔ وہ یہی باتیں سوچتا باہر نکل آیا۔

٭٭٭

”ارتضیٰ! جانو ڈاکٹر شاہ آئے ہیں‘ انہیں یہیں بھیج دوں کا آپ باہر آﺅ گی۔“ جی جی اس کے کمرے میں جھانکتی بولیں۔
”یہیں بھیج دیں۔“ وہ مختصر جواب دے کر خاموش ہوگئی۔
”ہیلو دوست‘ کیسی ہو؟“ وہ اندر آتے ہوئے بولا۔
”ٹھیک ہوں۔“ ارتضیٰ نے مختصراً جواب دیا۔
”آج میں بہت خوش ہوں دوست‘ آج مجھے میرے بھیا مل گئے ہیں اور آج میں آپ کو ایک اور بات کہنا چاہتا ہوں‘ میں خود نہیں جانتا کہ کب یہ خواہش میرے دل میں پیدا ہو گئی‘ بس اچانک ہی دراصل‘ آپ مجھے اچھی لگتی ہیں اور میں آپ سے شادی کرنا چاہتا ہوں‘ میں آپ کی رضا جاننا چاہتا ہوں پھر اپنی ممی کو بھیجوں گا‘ آپ کا اس بارے میں کیا خیال ہے؟“ وہ اس کی طرف دےکھتے ہوئے بولا جو اپنی جگہ سن ہوئی تھی اس انکشاف پر۔
وہ وہاں سے اٹھ کر چل دیا۔ ”دوست میں آپ کے جواب کا منتظر رہوں گا اور آپ جو بھی فیصلہ کریں گی وہ میرے لئے نہایت محترم ہوگا فیصلہ جو بھی ہو ہم اچھے دوست رہیں گے ہمیشہ۔“
وہ اپنی جگہ سن بیٹھی تھی جب شانزے چلی آئی۔
”اتی! سنا ہے ڈاکٹر شاہ آئے تھے ویسے بہت اچھے انسا ہیں یار کچھ بھی کہو بندہ ہے اچھا خاصا ڈیشنگ ۔ تمہارا کیا خیال ہے؟“ وہ اسے دےکھتے ہوئے پوچھنے لگی۔ مگر ارتضیٰ خاموش رہی۔
”افوہ ایک تو میں تمہاری اس خاموشی سے بہت عاجز ہوں‘ پتہ نہیں تمہارا یہ چپ شاہ کا روزہ کب ٹوٹے گا۔ ہاں لےکن میں تمہیں ایک ایسی بات بتانے والی ہوں جس کو سن کر تم چپ نہیں رہ سکو گی۔ وہ کیا ہے ناں کہ یہ جو تمہارے ڈاکٹر ہیں ناں ڈاکٹر رضا شاہ یہ مجھے بہت اچھے لگتے ہیں‘ پتہ ہی نہیں چلا کہ کب یہ سب ہو گیا‘ یہ خبر میں نے سب سے پہلے تمہیں دی ہے اور اب میں چاہتی ہوں کہ تم ان کی بھی مرضی معلوم کرو‘ تم ایسا کر سکتی ہو تو‘ ایسا کرو گی ناں؟“ شانزے ارتضیٰ کا ہاتھ پکڑے اس سے پوچھ رہی تھی۔
اور وہ اس کی طرف دےکھتے ہوئے سوچ رہی تھی۔ یا اللہ آج کیا انکشافات کا دن ہے اب بس کوئی اور انکشاف نہ ہو مجھ پر ورنہ شاید اب کے میں سہہ نہ پاﺅں گی۔ مگر میری چھٹی حسن مجھے کچھ اور ہی پیغام دے رہی ہے۔
اور پھر ٹھیک رات ایک بجے جس کا فون آیا اس نے اس کی چھٹی حس کی تصدیق کر دی۔ یہ اس کا وہی پرانا موبائل تھا جو اسے ابی نے گفٹ کیا تھا اور اس کے کوما میں رہنے کے بعد بھی ابی اس موبائل کو اسی نمبر سے استعمال کرتے رہے تھے اور اس کی واپس پر اسے دوبارہ دے دیا کیونکہ وہ جانتے تھے کہ یہ موبائل اسے بہت عزیز ہے۔
وہ فون سبطین شاہ کا تھا۔ پہلے بھی ایک دن اس نے خاموش فون کیا تھا اور وہ تو اس کی خوشبو پہچانتی تھی مگر اب اتنے سال بعد پھر اسے اس کی یاد کیسے آگئی۔ پہلے فون کو وہ اپنا وہم سمجھ کر جھٹلانا چاہتی تھی مگر اب اس کے دوسرے فون نے اس کے وہم کو یقین میں بدل دیا‘ وہ اس سے ملنا چاہتا تھا پھر سے پورے چار سال تین ماہ بعد اسے اپنی آنکھوں کا گلیشز چٹختا محسوس ہوا‘ اس کی آنکھوں کا فرش گیلا ہو رہا تھا۔ آج چار سال تین ماہ بعد اس نے اپنے دل کو دھڑکتے پایا۔ وہ سسکیاں بھر کر جی بھرکر رونا چاہتی تھی اور آنکھیں اس کا ساتھ دے رہی تھیں۔ اسے اب بھی وہ لمحہ یاد تھا جب اس کے آنسو خشک ہوئے تھے اور زندگی کی ساری حسیات اس کے اندر دم توڑ گئی تھیں۔
وہ لمحہ جب زندگی اسے سبطین سے یوں دور لے گئی تھی‘جیسے ہوا بادل کو اڑا کر کہیں دور لے جاتی ہے‘ اسے ایسا لگا جیسے سبطین شاہ نے ہاتھ سے پکڑ کر اسے ایسی جگہ لا پٹخا ہے‘ جہاں گرم صحرا ہے دور دور تک پانی کا کوئی نشان نہیں اور تپتا سورج عین اس کے سر پر کھڑا اسے جلا رہا ہے۔ وہ ننگے پاﺅں ننگے سرتہی داماں تہی دست اس صحرا میں کھڑی ہے پھر یم دم ایک برف کا گلیشئر اس کی جانب بڑھا اور اس کے سارے جذبے ساری حسیات سرد پڑ گئیں‘ وہ رونا چاہتی تھی مگر آنکھوں میں پانی نہیں صرف خشک ریت تھی وہ چلانا چاہتی تھی مگر اس کی آواز برف ہو چکی تھی اور آج پھر چار سال کے عرصے کے بعد وہ برف اسی شخص کی بدولت پگھلی تھی۔ آج چار سال بعد اس کی آنکھوں میں ریت کی جگہ پانی نے لے لی تھی۔ میں ارتضیٰ بخاری جو پیار کو فضول وقت کا ضیاع اور پتہ نہیں کیا کیا کہتی تھی‘ نے اپنی زندگی کے ایک سال میں سبطین کی ہمراہی میں اس کی محبت کو جیا اور پھر چار سال تک اس کی محبت کے لئے جیتی رہی۔ میں نے سبطین شاہ سے اس قدر ٹوٹ کے پیار کیا کہ پھر کچھ اور کرنے کے قابل ہی نہ رہی‘ میری زندگی میں آنے والا پہلا شخص تھا جس کے لئے میں نے دعا کی تھی۔ جسے میں نے مانگا تھا ورنہ آج تک مجھے کبھی مانگنا نہ پڑا‘ صرف اسے مانگا اور وہی نہ ملا۔ زندگی میں یہ بات بہت تکلیف دہ ہوتی ہے کہ آپ جس شے کی تمنا ہر شے سے ہٹ کر کریں وہی تمنا ادھور ی رہ جائے۔ زندگی میرے اندر اپنی آخری سانسیں لے رہی ہے۔ نہ جانے کیوں وہ کس لئے اب تک سانس لے رہی ہے میرے اندر۔ اکثر آباد جگہیں جب برباد ہوتی ہیں تو وہاں صرف کھنڈر رہ جاتا ہے اور وہ بھی کسی نہ کسی دن ڈھے جاتا ہے۔ میرے اندر بھی زندگی اسی کھنڈر کی مانند ہے اور پھر ایک دن وہ بھی ڈھے جائے گی۔ میں خود نہیں جانتی کہ وہ کیسی بے خود لہر ہے جو میرے دل کے سمندر میں رہ رہ کر اٹھتی ہے مین تو اس پیار کی قائل نہ تھی پھر کیا ہوا کیسے ہوا کہ میں اسیر جذبہ عشق ہو گئی۔ میں تو اس کے پیار میں ایسا کھوئی کہ پھر وہی وہ رہا میری زندگی میں اور کسی کی گنجائش باقی نہ رہی۔
جب وہ ملا تو مجھے لگا کہ ارتضیٰ کہیں کھو گئی ہے اور اب جو ہے وہ سبطین ہے‘ ارتضیٰ کے اندر اباہر چہار سو بطین اس کے علاوہ اب ارتضیٰ کی زندگی میں کوئی نہیں رہا اور پھر کبھی کسی کی گنجائش نہیں نکلی۔ا دھوری چیزیں کبھی کبھی بہت تکلیف دیتی ہیں۔ ادھوری رہ جانے والی چیزیں ہمیشہ ایک آس میں ہی رہتی ہیں کہ شاید کبھی وہ پوری ہو جائے۔ جو بھی ہے یہ میری دیوانگی ہے پیار ہے یا پاگل پن بس ارتضیٰ کی زندگی سبطین کے محور میں ہی گھومتی ہے۔

٭٭٭

”بھیا تو یہ سب اچانک ہی ہو گیا ہے کچھ سمجھ میں ہی نہ آیا مگر اب تو مجھے میری ایک پیشنٹ کی طرف جانا ہے جو میری دوست بھی ہے پھر رات کو پکا ہم ڈنر باہر کریں گے ٹھیک ہے ناں۔“ یہ رضا شاہ تھا جو سبطین کے کمرے میں آیا تھا۔
”اچھا بھائی میں چلتا ہوں اپنا خیال رکھئے گا۔“ یہ کہتا ہوا وہ کمرے سے باہر چل دیا۔ اب اس کا رخ ارتضیٰ کے گھر کی جانب تھا۔
وہ ارتضیٰ کے کمرے میں بیٹھا تھا اور وہ بھی اس کے سامنے گومگو کی کیفیت میں بیٹھی تھی۔ جیسے بولنے کو لفظ ترتیب دے رہی ہو۔ پھر کچھ توقف کے بعد وہ بولی۔
”ڈاکٹر رضا شاہ! آج میں آپ سے پےشنٹ بن کر نہیں بلکہ دوست بن کر بات کرنا چاہتی ہوں۔ آپ بے شک بہت اچھے انسان ہیں اور بلاشبہ جو بھی لڑکی آپ کی زندگی میں شامل ہوگی وہ بہت خوش قسمت ہوگی۔ وہ لڑکی کوئی بھی ہو سکتی ہے مگر ارتضیٰ بخاری نہیں ہو سکتی کیونہ وہ نہ آپ کے لئے نہ کسی اور کے لئے‘ کسی کے لئے بھی خوش قسمتی نہیں بن سکتی۔ خوشی کا ہند سہ اس کی زندگی کی ڈکشنری میں نہیں ہے۔ مگر ایک لڑکی ہے جو آپ کو آپ کی زندگی کو خوشیوں سے بھر سکتی ہے مگر میں نہیں اور میں کیوں نہیں فی الحال آپ اس کا جواب مجھ سے مت مانگیں۔ وقت آنے پر خود ہی آپ کو پتہ چل جائے گا۔ بہرحال ےری یہ آپ سے پہلیہ اور آخری درخواست ہے کہ آپ اس لڑکی سے شادی کر لیں اسے اپنی زندگی میں شامل کر لیں جو آپ کو چاہتی ہے وہ لڑکی شانزے ہے۔ ڈاکٹر رضا کیا آپ میری یہ خواہش مانیں گے۔ اس لڑکی نے چار سال تک میری خاطر شادی نہیں کی مگر اب میں چاہتی ہوں کہ میری ہی وجہ سے اس لڑکی کو زندگی کی سب سے بڑی خوشی مل جائے بولئے ڈاکٹر رضا آپ میری اس خواہش کو پورا کری گے؟“ وہ اس کی طرف دےکھتے وئے بولی۔ تو وہ جواباً بولا۔
”ارتضیٰ! آپ نے زندگی میں پہلی بار مجھ سے کچھ مانگا ہے‘ اور میں آپ کو مایوس نہیں کروں گا لےکن مجھے بس کچھ وقت چاہئے۔ میں آپ کو بہت جلد مثبت جواب دوں گا۔ میں نے آپ سے کہا تھا کہ آپکے فےصلے کا میں احترام کروں گا اور یہ رشتہ نہیں تو کیا ہوا ہم دوست تو ہمیشہ رہیں گے اور اب میں چلتا ہوں اوکے۔“ یہ کہتا وہ اس کے کمرے سے نکل گیا۔ ارتضیٰ نے ٹھنڈی آہ بھر کر بیڈ کی پشت سے سرٹکا دیا اور آنکھیں موندلیں۔
وہ آنکھیں موندے سوچ رہی تھی کہ صبح کا دن اس کے لئے کون سی قیامت لانے والا ہے وہ کیسے اس دشمن جاں کا سامنا کر پائے گی‘ جو پچھلے پانچ سالوں سے اس کے دل میںبراجمان ہے۔ ایک سال اس کے ساتھ گزرا باقی چار سال اس کے ساتھ کو پانے کے لئے گزر گئے۔ اسے سوچ سوچ کر محسوس کرتی اور انہی محسوسات کی خوشبو کے سہارے اس نے چار سال گزار دئےے کوئی گتھی تھی جو وہ سلجھا نا چارہ رہی تھی مگر کوئی سرا ہاتھ نہ آرہا تھا اور وہ گتھی کچھ اور الجھ رہی تھی۔ سب گڈمڈ ہو رہا تھا۔ عجب الجھن تھی کہ جو سلجھ کے نہ دے رہی تھی۔
شام پورے افق پر چھا رہی تھی۔ ڈوبتے سورج سے رشتہ ٹوٹنے کے غم میں آسمان پر سو گواری کی سرخی چھائی ہوئی تھی ہوا ساکن تھی اور ہر کوئی حیران تھا اور خوش بھی کہ ہسپتال سے واپسی کے بعد یہ پہلا موقع تھا جب وہ گھر سے باہر جا رہی تھی۔ کیسا انکشاف تھا یہ کہ سبطین شاہ ڈاکٹر رضا شاہ کا بھائی تھا۔ تبھی تو ارتضیٰ کو کبھی کبھی اس کے خدوخال میں کسی کا عکس نظر آتا تھا مگر یہ سمجھ کر ٹال جاتی کہ وہ تو اسے ہر چہرے میں ہی تلاش کر تی ہے۔ آج صبح ہی ڈاکٹر شاہ یہ بتانے آیا تھا کہ اس نے رات بھر سوچا اور اب یہ فیصلہ کیا ہے کہ وہ شانزے سے شادی کر لے گا اور پھر باتوں ہی باتوں میں ذکر اس کے بچھڑے بھائی کا نکل گیا تو وہ اس کے بارے میں بتانے لگا اور ایک اور انکشاف تب ہوا جب اس نے اپنے بھیا کی تصیور دکھائی۔ یہ زندگی بھی بڑے عجیب ہے‘ انسان کو جس بات کا علم ہونا ہوتا ہے کسی بھی طریقے سے ہو جاتا ہے اور جس کا علم نہیں ہونا ہوتا تو پھر لاکھ کوشش کر دےکھو نہیں ہوتا۔

٭٭٭

سمندر کے کنارے وہ دونوں خاموش کھڑے تھے۔ اور خاموشی باتیں کر رہی تھی۔ سامنے کھڑے شخص کی آنکھوں سے آنسو بہہ رہے تھے اور اس کے دل پر گر کر جمتے جا رہے تھے۔ وہ اسے آہستہ آہستہ اپنے بچپن سے لے کر اس سے ملنے تک کے واقعات بتانے لگا کہ کس طرح مکتون نے اسے عورت سے متفنر کر دیا اور کس طرح وہ عورت ذات کو گزند پہنچانے لگا مگر ارتضیٰ پھر میری زندگی میں تم آئیں۔ میں اول روز سے تمہیں چاہنے لگا تھا مگر احساس تن ہوا جب تم میری زندگی سے نکل گئیں اور درنجف داخل ہوگئی۔ تم سے پیار کے ادراک نے مجھے شروع سال تک تو اتنا خود سے ناراض رکھا کہ میں درنجف اور خود پر ظلم کرنے لگا۔ زندگی سے کٹ کر رہ گیا مجھے ہر لمحہ تم یاد آتیں ‘ میں تمہیں بھلانا چاہتا‘ مگر جس شدت سے تمہیں بھلانا چاہتا اسی شدت سے تم مجھے یاد آتیں۔ میں بہت شرمندہ ہوں تمہارا گناہ گار ہوں ارتضیٰ مجھے کسی کل چین نہیں ملتا۔
”ارتضیٰ! تم ‘ میں تمہیں کیسے بتاﺅں تم سے بچھڑنے کے چار سال تک میں تمہیں بھلانے میں لگا رہا مگر ان چار سالوں میں ایک بھی لمحہ ایسا نہیں گزرا جب تم مجھے یاد نہ آئی ہو۔ میں نے یہ بھی کوشش کی کہ اب درنجف میری زندگی میں آچکی ہے تو اس کے ساتھ ہی زندگی گزاروں مگر ایسا بھی نہیں ہو سکا۔ میں اب بھی بہت پیاسا ہوں‘ میں تمہیں بھلاتے بھلاتے خود کو بھول گیا ہوں اور ارتضیٰ اب صرف مجھے تم ہی یاد ہو اور شاید تمہارے علاوہ اب کسی کی گنجائش میری زندگی میں نہ نکل سکے۔ پلیز ارتضیٰ ایک بار سبطین شاہ کی زندگی میں لوٹ آﺅ۔ درنجف میری زندگی سے نکل گئی ہے‘ اس نے مجھ سے طلاق لے لی۔ وہ بھی مجھ سے آزاد ہو کر کوئی اچھا ہمسفر لے گی پلیز ارتضیٰ تم لوٹ آﺅ۔“ وہ اس سے لوٹنے کو کہہ رہا تھا اور وہ سوچ رہی تھی کہ کیا جواب دے۔
”ارتضیٰ! کہو نا خاموش کیوں ہو کچھ تو بتاﺅ کچھ کہو تم نے یہ چار سال کےسے کاٹے۔ کیا تم نے مجھ سے بچھڑ کر مجھے یاد کیا‘ کہو نا ارتضیٰ کیامیں اب بھی تمہارے دل میں بستا ہوں‘ یا تمہاری زندگی میں کوئی اور آچکا ہے۔“
”ارتضی جدائی کی دھوپ‘ نارسائی کی آگ مجھے جلاتی ہے اور واحد تمہاری ہی چھاﺅں ہے جس میں آکر میرا جلتا وجود کچھ راحت پائے گا۔ مجھے اپنی چھاﺅں بخش دو‘ ارتضیٰ یوں چپ نہ رہو کوئی شکوہ‘ کوئی گلہ کچھ تو کہو ارتضیٰ۔“
وہ تھک کر ریت پر بیٹھتا چلا گیا اور سمندر کی لہروں پر نظر جما کر بولا۔ ”ارتضیٰ! محبت شاید تلخ کافی جیسی ہوتی ہے جس کا ذائقہ تو بہت اچھا ہوتا ہے مگر وہ تلخ بھی ہوتی ہے‘ ارتضیٰ کبھی ایسا ہوتا ہے ناں کہ منزل آپ کے قریب ہو اور آپ اسے پہچانیں ہی ناں اور جب منزل کا ادراک ہو تو تب تک آپ راستہ بھول چکے ہوں۔ ارتضیٰ سبطین شاہ نے تمہیں چاہا ہے ‘ تمہیں روح کی خواہش ہی نہیں بلکہ روں میں حصہ دار بنایا ہے‘ تم صرف میرے دل میں ہی نہیں میرے پورے وجود میں بستی ہو‘ عجب ہیں یہ محبتوں کے سلسلے بھی‘ کہیں منزل نہیں ملتی تو کہیں راستہ نہیں ملتا‘ ارتضیٰ میں سوچتا ہوں اگر ارتضیٰ سبطین کی زندگی میں نہ ہوتی تو پھر سبطین کی زندگی میں کیا ہوتا۔ ارتضیٰ لوٹ آﺅ‘ اپنے سبطین کے پاس‘ ہم اپنی نئی دنیا بسائیں گے جس میں‘ میں ہوں گا ت ہو گی اور ہماری محبت ‘ ارتضیٰ میں کب سے بول رہا ہوں لےکن تم جب سے آئی ہو خاموش ہو کیا تم کچھ نہیں کہو گی۔ کچھ ہو ارتضیٰ‘ یوں خاموش مت رہو‘ مجھے تمہاری خاموشی کھلتی ہے‘ ارتضیٰ کیا تم میرے پاس نہیں لوٹو گی‘ ایک بار صرف ایک بار مجھ پر اعتبار تو کر کے دےکھو‘ ایک بار صرف ایک بار۔“ وہ ملتجیانہ نگاہوں سے اسے دےکھتے کہہ رہا تھا۔
وہ بانہیں کھولے اس کا منتظر تھا۔ وہ بولی کچھ نہیں مگر آگے بڑھی اور ان پیاسی بانہوں میں سماتی چلی گئی یہی اس کا جواب تھا۔

٭….٭….٭

بارے KAHAANY.COM

Check Also

تیرے پیار میں پاگل ہوئے ۔۔۔ از ۔۔۔ روبینہ غلام نبی

تیرے پیار میں پاگل ہوئے ۔۔۔ روبینہ غلام نبی ………… پتھر بنا دیا مجھے رونے …

387 comments

  1. Building memerable video marketing, pay per click advertising redondo beach. Thumbs up! i love hermosa beach seo redondo beach seo and manhattan beach seo.

  2. Nice write up. jesse grillo and . You’ve made my day! Thx again.

  3. there’s a social advertising structures company helping clients, creating championship social advertising structures.

  4. Building highly focused adwords advertising structures plus brand campaigns plus referral advertising hermosa beach.

  5. Hello! I know this is kind of off topic but I was wondering which blog platform are you using for this website?

    I’m getting fed up of WordPress because I’ve had issues with hackers and
    I’m looking at options for another platform. I would be awesome if you could point
    me in the direction of a good platform.

  6. After I initially commented I seem to have clicked the Notify me when new comments are added checkbox and from now on every time a statement is added I receive quite a few emails with the same brief review. There has to be an easy method you are able to remove me from that service? Appreciate it!

  7. Very good info. Lucky me I found your blog by chance (stumbleupon). I’ve book marked it for later!

  8. Hi there! This article couldn’t be written any better!
    Reading through this article reminds me of my previous
    roommate! He always kept talking about this. I am
    going to send this information to him. Fairly certain he will have a great read.
    Thank you for sharing!

  9. Hello there, I do think your website might be having web browser
    compatibility problems. Whenever I look at your internet page in Safari, it looks
    fine but when opening in Internet Explorer, it has some
    overlapping issues. I merely wanted to give you a
    quick heads up! Aside from that, wonderful blog page!

  10. Everything is very open with a really clear explanation of the challenges.

    It was definitely informative. Your site is useful.
    Many thanks for sharing!

  11. Pretty! This has been a really wonderful post. Many thanks for delivering this
    info.

  12. Day ago i got some cool info about Omega 3 stuff and now i very wanna get it. But i want a quality, some premium omega 3 fish oil. I’ve got this carlson omega 3 . What do you think about this Carlson brand?

  13. Day ago i read some shocking info about Omega 3 foods and now i very wanna buy it. But i’m not really sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i want to get it with best price. Any idea?

  14. Хотите узнать подробнее, паттайя выборы президента россии фото http://thailandi.info/otzyvy-turistov/ – More info!..

    самые интересные экскурсии в паттайе отзывы
    развлечения и экскурсии в паттайе цены 2017
    паттайе новые развлечения и экскурсии
    экскурсии в паттайе нонг-нуч
    экскурсии в паттайе малайзия

  15. Day ago i got some shocking info about Omega 3 foods and now i really wanna get it. But i’m not absolutely sure which benefits will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i want to purchase it with good price. Any idea?

  16. Yesterday i read some cool info about Omega 3 foods and now i very wanna get it. But i’m not 100% sure which benefits will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i want to buy it with best price. Any idea?

  17. Yesterday i got some interesting info about Omega 3 stuff and now i really wanna buy it. But i’m not 100% sure which benefits will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i wanna purchase it with best price. Any idea?

  18. Yesterday i got some shocking info about Omega 3 stuff and now i really wanna get it. But i’m not really sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i wanna get it with good price. Any idea?

  19. Day ago i got some amazing info about Omega 3 stuff and now i very wanna get it. But i’m not absolutely sure which pluses will i have. I’ve found this omega 3 info , and now i wanna buy it with best price. Any idea?

  20. Day ago i read some shocking info about Omega 3 stuff and now i very wanna get it. But i’m not absolutely sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and now i want to get it with best price. Any idea?

  21. Yesterday i read some amazing info about Omega 3 stuff and now i really wanna buy it. But i’m not really sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and now i want to get it with best price. Any idea?

  22. Oh my goodness! Impressive article dude! Many thanks, However I am experiencing difficulties with your rss.

    I don’t understand why I can’t subscribe to it. Is there anybody getting the
    same RSS problems? Anyone who knows the answer will you kindly
    respond? Thanks!!

  23. Yesterday i read some interesting info about Omega 3 stuff and now i really wanna get it. But i’m not absolutely sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and now i wanna get it with lowest price. Any idea?

  24. Day ago i got some amazing info about Omega 3 foods and now i really wanna get it. But i’m not absolutely sure which benefits will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i want to buy it with best price. Any idea?

  25. Day ago i got some amazing info about Omega 3 stuff and now i very wanna get it. But i’m not really sure which benefits will i have. I’ve found this omega 3 info , and now i wanna purchase it with best price. Any idea?

  26. Yesterday i got some shocking info about Omega 3 stuff and now i really wanna buy it. But i’m not 100% sure which benefits will i have. I’ve found this omega 3 info , and now i want to get it with lowest price. Any idea?

  27. Day ago i got some shocking info about Omega 3 foods and now i very wanna buy it. But i’m not 100% sure which benefits will i have. I’ve found this omega 3 info , and now i want to get it with good price. Any idea?

  28. Day ago i read some amazing info about Omega 3 foods and now i very wanna buy it. But i’m not really sure which benefits will i have. I’ve got this omega 3 info , and now i want to get it with best price. Any idea?

  29. Yesterday i read some shocking info about Omega 3 foods and now i really wanna buy it. But i’m not really sure which pluses will i have. I’ve found this omega 3 info , and currently i wanna get it with lowest price. Any idea?

  30. Yesterday i read some cool info about Omega 3 stuff and now i really wanna get it. But i’m not 100% sure which pluses will i have. I’ve found this omega 3 info , and currently i wanna buy it with good price. Any idea?

  31. Day ago i read some shocking info about Omega 3 stuff and now i very wanna get it. But i’m not absolutely sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and now i want to buy it with best price. Any idea?

  32. Day ago i got some interesting info about Omega 3 stuff and now i really wanna get it. But i’m not absolutely sure which pluses will i have. I’ve found this omega 3 info , and currently i want to buy it with lowest price. Any idea?

  33. Day ago i read some shocking info about Omega 3 stuff and now i really wanna buy it. But i’m not absolutely sure which benefits will i have. I’ve found this omega 3 info , and currently i wanna buy it with best price. Any idea?

  34. Day ago i got some amazing info about Omega 3 foods and now i very wanna get it. But i’m not really sure which pluses will i have. I’ve got this omega 3 info , and currently i wanna purchase it with good price. Any idea?

  35. Avito777Nats

    Пополение баланса Авито (Avito) за 50% | Телеграмм @a1garant

    Здравствуйте, дорогие друзья!

    Рады предоставить Всем вам сервис по пополнению баланса на действующие активные аккаунты Avito (а также, абсолютно новые). Если Вам необходимы определенные балансы – пишите, будем решать. Потратить можно на турбо продажи, любые платные услуги Авито (Avito).

    Аккаунты не Брут. Живут долго.

    Процент пополнения в нашу сторону и стоимость готовых аккаунтов: 50% от баланса на аккаунте.
    Если необходим залив на ваш аккаунт, в этом случае требуются логин и пароль Вашего акка для доступа к форме оплаты, пополнения баланса.
    Для постоянных клиентов гибкая система бонусов и скидок!
    Гарантия:

    И, конечно же ничто не укрепляет доверие, как – Постоплата!!! Вперед денег не просим… А также, гасим Штрафы ГИБДД за 65% …

    Оплата:
    ЯндексДеньги, Webmoney (профессиональные счета)
    Рады сотрудничеству!

    Залив Авито канал Телеграмм @t.me/avito50
    ________

    пополнение кошелька авито
    авито акции +и скидки
    авито ру
    авито дать объявление бесплатно без регистрации
    авито пылесос со скидкой москва

  36. Yesterday i read new amazing knowledge about Omega 3 stuff and now i really wanna purchase it. But i need a quality, only premium omega 3 fish oil. I’ve got this premium omega 3 fish oil link. What do you know about Carlson brand?

  37. Avia777raig

    Авиабилеты по РУ за 60 процентов от цены кассы. по МИРУ – 50%| Телеграмм @AviaRussia только этот, другие не используем.

    Надежно. Выгодно. Без слётов. И БЕЗ каких-либо проблем.

    Оплата:
    ЯндексДеньги, Webmoney (профессиональные счета)
    Рады сотрудничеству!
    ________

    авиабилеты дешево победа
    авиабилеты дешево s7 москва худжанд
    туту авиабилеты дешево онлайн
    озон тревел авиабилеты дешевые билеты купить
    купить дешево авиабилеты онлайн без комиссии

  38. Yesterday i got new shocking info about Omega 3 foods and now i really wanna get it. But i want a best, only premium omega 3 fish oil. I’ve seen this premium omega 3 fish oil url. What do you know about this brand?

  39. it is like you wrote the book on it or something. That is a smart way of thinking about it. Spot on with this. I am continually browsing online for tips that can help me. I shared this on my blog and 83 of my friends have already read it.

  40. I really love your writing style and how well you express your ideas. I found this on WordPress I am impressed, I need to say. Extremely helpful posts. I simply have to tell you that your write ups are really valuable.

  41. You are more fun than bubble wrap. I bookmarked it to my bookmark site list and will be checking back soon. I enjoy the stuff you provide here and can not wait to take a look when I get home.

  42. Художественная ковка во Владивостоке Ковка – kovka-vl.ru

  43. I know seasoned Google Plus pros would agree with your blog. Kudos.

  44. I think the admin of this web page is really working hard in support of his web site, since here every material is quality based information. It is very informative and you are obviously very knowledgeable in this area. Is there new information.

  45. Your creative potential seems limitless. Your posts are a shock. A lot of info to take into consideration. Our community is better because you are in it. Somehow you make time stop and fly at the same time.

  46. DorogiKRDK

    [url=http://rrr.regiongsm.ru/33]
    [img]http://rrr.regiongsm.ru/32 [/img]
    [/url]
    Благоустройство и асфальтрование в Краснодаре и г.Сочи. Решение любого вопроса по асфальтоукладке и дорожным работам. Качественно

    Подробнее… Благоустройство-Краснодар.РФ … 7(861) 241 2345
    ___________________________
    асфальтирование дорог слои
    ведомственная программа благоустройство
    благоустройство крыш жилых домов
    муп благоустройство ленинского района
    муниципальная целевая программа благоустройство придомовых территорий

  47. Day ago i read some amazing info about Omega 3 stuff and now i really want to get it. But i want a quality, only premium omega 3 fish oil. I’ve seen this [url=https://www.omega-3.club/premium-fish-oil-carlson.html] premium omega 3 fish oil [/url] url. What do you think about Carlson brand?

  48. I’m curious to find out what blog platform you
    are using? I’m having some minor security issues with my
    latest website and I’d like to find something more secure.
    Do you have any suggestions?

  49. Wonderful article! That is the kind of information that are supposed
    to be shared across the net. Shame on Google for
    not positioning this submit higher! Come on over and discuss with my website .

    Thank you =)

  50. Excellent beat ! I would like to apprentice while you amend
    your web site, how could i subscribe for a blog web site?

    The account aided me a acceptable deal. I have been tiny bit acquainted of this your broadcast provided
    shiny transparent idea

  51. Hello Dear, are you truly visiting this site on a regular basis, if so after that you will absolutely take fastidious experience.

  52. I know this if off topic but I’m looking into starting my own blog
    and was wondering what all is needed to get set up?
    I’m assuming having a blog like yours would cost a pretty penny?
    I’m not very internet smart so I’m not 100% positive.
    Any suggestions or advice would be greatly appreciated.

    Cheers

  53. I absolutely love your site.. Great colors & theme.
    Did you make this amazing site yourself? Please reply back as I’m looking to create my own personal site and
    want to learn where you got this from or exactly what the theme
    is named. Kudos!

  54. Thanks for writing this. excellent post and thought|Thanks for expressing your own posts I�d constantly stick to|Thank you almost all for the details.

  55. Are you active on Website? Geez, that is unbelievable. Without proper research, your readers will not be interested and you would lose credibility. I have added your website to my Facebook bookmarks You are a very persuasive writer.

  56. Neat blog. A lot of stuff to take into consideration. There is ordinary, and then there is you. There are certainly a lot of information to take into consideration. Thumbs up!

  57. You already know this but you are wonderful. I was reading your blog and my stupid ferret threw a mug all over my lap top! Well this is strange… your website was loaded when I turned on my Iphone.

  58. cbd gummies cannabis gummies sale [url=https://hempgummies.us/]buy cbd gummies online[/url] cbd Gummies vitamins
    cannabis gummies CBD Gummies Reviews CBD Cannabis Gummies cbd gummies

  59. I like what you guys are up too. Such clever work and reporting! Keep up the superb works guys I have incorporated you guys to my blogroll. I think it’ll improve the value of my web site .

  60. Good Morning, happy that i found on this in bing. Thanks!

  61. alternativ till i Sverige, http://sverige-apotek.life/elcontrol.html , receptfri malmö.

  62. I adore gathering useful info, this post has got me even more info! .

  63. Over the counter countries http://hempfieldcob.org/css/pharmacy/trusopt.html#cheap_trusopt how can you buy real online in usa.

  64. Ha, here from bing, this is what i was looking for.

  65. cbd oil for cancer patients cbd oil for anxiety in dogs [url=https://notehub.org/dlh0e]cbd oil dosage for chronic pain[/url] cbd oil side effects in cats

    cbd oil for skin cancer treatment cbd oil for cancer patients chocolate cbd oil for pain dosage cbd oil side effects stomach pain gas

  66. Good Morning, glad that i found on this in google. Thanks!

  67. google brought me here. Cheers!

  68. This is good. Thanks!

  69. best cbd oil for pain management best cbd oil for pain management [url=https://cbdoil4u.org/cbd-oil-for-pain/]cbd hemp oil for pain[/url] cbd oil for pain relief where to buy
    cbd cannabis oil for pain cbd oil for pain cbd oil for pain for sale cbd hemp oil for pain

  70. Awesome, this is what I was searching for in yahoo

  71. Online kaufen per uberweisung http://www.handmadesoapuk.org/wp-includes/certificates/apotheke/duowin.html online bestellen ohne rezept gunstig.

  72. Acheter sans ordonnance en belgique http://fenedgefestival.co.uk/weekend/machform/css/pharmacie/doxy.html sans ordonnance en France.

  73. Achat en france http://inesrojo.com/swf/pharmacie/progesteronum.html pharmacie qui vendsans ordonnance en Belgique.

  74. tabletten ohne rezept http://lazerstation.com/translator/apotheke/twynsta.html generika online bestellen schweiz.

  75. Comment acheter dusans ordonnance en suisse http://buryaikido.org.uk/css/pharmacie/memoril.html moins cher lille.

  76. Como comprar en medellin http://www.westnewcastleacademy.org/wp-includes/certificates/farmacia/melox.html se puede comprar sin receta en farmacias Argentina.

  77. Donde puedo comprar ecuador http://ruthtittensor.co.uk/css/farmacia/nasonex.html comprar online rapido.

  78. Compra generico en España http://www.midkentmetals.co.uk/wp-content/farmacia/chloroquine.html se puede comprar en una farmacia.

  79. This WILL be performed. As well amazing toward free.

  80. siti sicuri per acquisto generico http://www.portofmostyn.co.uk/screenshot/farmacia/bupron-sr.html generico senza ricetta Italia.

  81. generico online pagamento alla consegna http://heliad.co.uk/my_pdfs/farmacia/urecholine.html dove comprare a Roma.

  82. acquistare generico con paypal http://thehouse.florist/resources/2058/farmacia/minesse.html in farmacia senza ricetta medica.

  83. Ha, here from bing, this is what i was looking for.

  84. Great, google took me stright here. thanks btw for post. Cheers!

  85. I would like to thank you for the efforts you have put in writing this site. I’m hoping the same high-grade site post from you in the upcoming as well. In fact your creative writing skills has inspired me to get my own blog now. Actually the blogging is spreading its wings quickly. Your write up is a great example of it.

  86. Ha, here from yahoo, this is what i was searching for.

  87. Awesome, this is what I was looking for in yahoo

  88. Kopen bij drogist online, http://www.prefast.co.uk/wp-includes/css/apotheek/valsacor.html , online bestellen zonder recept nederland.

  89. Bestellen bij drogist rotterdam, http://www.hanan.pk/wp-includes/css/apotheek/zetri.html , niet voorschrift online.

  90. Hi there colleagues, nice post and pleasant arguments commented here,
    I am genuinely enjoying by these.

  91. I just like the valuable info you provide on your articles.
    I’ll bookmark your blog and take a look at once more here frequently.
    I am fairly sure I will be informed lots of new stuff proper
    right here! Best of luck for the following!

  92. I was wondering if you ever thought of changing the structure of
    your site? Its very well written; I love what youve got
    to say. But maybe you could a little more in the way of content
    so people could connect with it better. Youve got an awful lot of
    text for only having one or 2 images. Maybe you could space it out better?

  93. Thanks on your marvelous posting! I truly enjoyed reading it, you could be a great author.I will be sure
    to bookmark your blog and may come back very soon. I want
    to encourage you to continue your great job, have a nice
    holiday weekend!

  94. The other day, while I was at work, my sister stole my iphone and tested to
    see if it can survive a 30 foot drop, just
    so she can be a youtube sensation. My iPad is now destroyed and she has 83 views.
    I know this is entirely off topic but I had
    to share it with someone!

  95. Wonderful website you have here but I was curious about if you knew of
    any community forums that cover the same topics discussed in this article?
    I’d really love to be a part of online community where I can get opinions from other
    experienced people that share the same interest.
    If you have any recommendations, please let me know.
    Thank you!

  96. Its like you read my thoughts! You seem to grasp a lot about this,
    such as you wrote the e book in it or something. I think that you
    simply could do with some % to force the message home a bit,
    however instead of that, this is excellent blog.
    An excellent read. I’ll definitely be back.

  97. I like the helpful information you provide in your articles.
    I’ll bookmark your weblog and check again here regularly. I am quite sure I will learn plenty of new stuff right here!
    Good luck for the next!

  98. Very soon this site will be famous amid all blogging visitors, due to it’s nice articles or reviews

  99. Valuable info. Fortunate me I found your site by chance, and
    I’m surprised why this twist of fate did not took place earlier!
    I bookmarked it.

  100. The other day, while I was at work, my sister stole my apple ipad and tested
    to see if it can survive a thirty foot drop, just so she can be a youtube sensation. My iPad is now destroyed and she has 83 views.

    I know this is totally off topic but I had to share it with
    someone!

  101. Wow, amazing weblog structure! How long have you been running a blog for?
    you make blogging look easy. The full glance of your website is fantastic, as well
    as the content material!

  102. What’s Taking place i am new to this, I stumbled upon this I have
    found It absolutely helpful and it has helped me out loads.
    I am hoping to give a contribution & aid different users like its aided me.
    Good job.

  103. This paragraph is actually a nice one it helps new the web viewers, who are wishing in favor of
    blogging.

  104. Excellent article. I am experiencing some of these issues as well..

  105. Hmm is anyone else having problems with the pictures on this blog
    loading? I’m trying to determine if its a problem on my end or
    if it’s the blog. Any feed-back would be greatly appreciated.

  106. Wow, that’s what I was exploring for, what a stuff!
    present here at this web site, thanks admin of this site.

  107. I need to to thank you for this excellent
    read!! I absolutely loved every little bit of it. I have got you saved as a favorite to check
    out new things you post…

  108. Great, yahoo took me stright here. thanks btw for info. Cheers!

  109. Great, this is what I was looking for in yahoo

  110. I like, will read more. Thanks!

  111. This i like. Cheers!

  112. I could not refrain from commenting. Very well written!

  113. My coder is trying to convince me to move to .net from PHP.
    I have always disliked the idea because of the costs.
    But he’s tryiong none the less. I’ve been using
    WordPress on a variety of websites for about a year and am worried about switching to another
    platform. I have heard very good things about blogengine.net.

    Is there a way I can transfer all my wordpress posts into it?
    Any kind of help would be greatly appreciated!

  114. yahoo brought me here. Cheers!

  115. Heya are using WordPress for your blog platform? I’m new to the blog world but I’m
    trying to get started and create my own. Do you require any html coding knowledge to
    make your own blog? Any help would be greatly appreciated!

  116. I was able to find good information from your content.

  117. Greetings! This is my first comment here so I just wanted to give a quick shout out and tell you I truly enjoy reading through
    your blog posts. Can you recommend any other blogs/websites/forums that deal
    with the same topics? Thank you!

  118. I enjoy what you guys are up too. Such clever work and exposure!
    Keep up the superb works guys I’ve you guys
    to blogroll.

  119. I’m extremely inspired together with your writing skills
    as well as with the structure on your blog. Is this a paid topic or did you modify it
    yourself? Anyway stay up the excellent quality writing,
    it is uncommon to see a great weblog like this
    one nowadays..

  120. Keep this going please, great job!

  121. I delight in, result in I found exactly what I used to be looking for.
    You have ended my 4 day lengthy hunt! God Bless you man. Have
    a great day. Bye

  122. It’s wonderful that you are getting ideas from this post as
    well as from our discussion made at this time.

  123. Hello I am so grateful I found your webpage, I really found you by mistake, while I was browsing on Bing for something else,
    Anyhow I am here now and would just like to say thanks for a incredible post and a
    all round enjoyable blog (I also love the theme/design), I don’t have time to go through it all at the
    minute but I have saved it and also added your RSS feeds, so when I have time I
    will be back to read a great deal more, Please do keep up the
    superb jo.

  124. It is not my first time to visit this web site, i am browsing this web page
    dailly and take good facts from here daily.

  125. Hi colleagues, its impressive paragraph regarding cultureand completely explained,
    keep it up all the time.

  126. Hi, google lead me here, keep up good work.

  127. Wonderful blog! I found it while surfing around on Yahoo News.
    Do you have any suggestions on how to get listed in Yahoo News?
    I’ve been trying for a while but I never seem to get there!
    Appreciate it

  128. I know this if off topic but I’m looking into starting my own weblog and was wondering what all is needed to get
    setup? I’m assuming having a blog like yours would cost a pretty penny?
    I’m not very web smart so I’m not 100% sure. Any recommendations or advice would
    be greatly appreciated. Many thanks

  129. Pretty section of content. I just stumbled upon your site
    and in accession capital to assert that I acquire in fact enjoyed account your blog posts.
    Any way I will be subscribing to your feeds and even I
    achievement you access consistently rapidly.

  130. Hey just wanted to give you a quick heads up and let you know a few of the
    pictures aren’t loading correctly. I’m not sure why but I think its a linking issue.
    I’ve tried it in two different web browsers and both
    show the same outcome.

  131. Pretty! This was an extremely wonderful article.
    Many thanks for supplying this information.

  132. If you would like to increase your know-how just keep visiting this site and be updated with
    the hottest information posted here.

  133. I absolutely love your blog and find most of your post’s to be just what I’m looking for.
    Would you offer guest writers to write content for you?
    I wouldn’t mind producing a post or elaborating on a number of the subjects you write about here.

    Again, awesome weblog!

  134. It’s awesome to visit this site and reading the views of all
    friends about this post, while I am also keen of
    getting experience.

  135. Hi there just wanted to give you a quick heads up. The words in your post seem to be running off the screen in Opera.
    I’m not sure if this is a formatting issue or something to do with
    browser compatibility but I thought I’d post to let
    you know. The style and design look great though!
    Hope you get the problem fixed soon. Many thanks

  136. Admiring the hard work you put into your blog and
    detailed information you offer. It’s nice to come across a blog every once in a while that isn’t the same out of date rehashed
    material. Great read! I’ve bookmarked your site
    and I’m including your RSS feeds to my Google account.

  137. Good day! I could have sworn I’ve visited this site before but after
    browsing through some of the articles I realized it’s new to me.
    Anyways, I’m definitely pleased I came across it and I’ll be book-marking it and checking back regularly!

  138. Admiring the time and energy you put into your website and detailed information you present.
    It’s awesome to come across a blog every once in a while that isn’t the same old rehashed information. Wonderful read!
    I’ve bookmarked your site and I’m adding your RSS feeds to my Google account.

  139. No matter if some one searches for his vital thing, thus he/she wants to be available that in detail, so that thing is maintained over here.

  140. We absolutely love your blog and find a lot of your
    post’s to be exactly what I’m looking for. Do you offer guest writers to write content for you?
    I wouldn’t mind producing a post or elaborating on some of the subjects
    you write concerning here. Again, awesome blog!

  141. I really like your blog.. very nice colors & theme. Did you
    design this website yourself or did you hire someone to
    do it for you? Plz respond as I’m looking to construct my own blog and would like to know where u got this from.

    kudos

  142. Hello there, You’ve done a great job. I will definitely digg it and personally suggest to my friends.
    I’m sure they will be benefited from this site.

  143. Pretty! This has been a really wonderful article.
    Thank you for supplying these details.

  144. My partner and I stumbled over here coming from a different website and thought
    I might as well check things out. I like what I
    see so now i am following you. Look forward to looking over your web page
    again.

  145. What a information of un-ambiguity and preserveness of precious experience on the topic of unexpected feelings.

  146. Highly descriptive blog, I liked that a lot. Will there
    be a part 2?

  147. We’re a group of volunteers and starting a new scheme in our
    community. Your web site offered us with valuable information to work on. You have done
    an impressive process and our whole community can be grateful to you.

  148. I just like the valuable info you provide to your articles.
    I will bookmark your blog and test again right here regularly.
    I’m moderately sure I will be informed many new stuff
    right here! Good luck for the following!

  149. You made some good points there. I checked on the net
    for more information about the issue and found most individuals will go along with your
    views on this site.

  150. Great blog you have here.. It’s hard to find high quality writing like yours these days.

    I truly appreciate individuals like you! Take care!!

  151. Hello there! This is kind of off topic but I need some guidance from an established
    blog. Is it tough to set up your own blog? I’m not very techincal but I can figure things out pretty
    quick. I’m thinking about setting up my own but I’m not sure where to begin. Do you have any ideas or suggestions?

    With thanks

  152. It’s actually very complex in this active life to listen news on TV, thus I only use world
    wide web for that reason, and take the most recent news.

  153. Hi, just wanted to mention, I enjoyed this post.
    It was helpful. Keep on posting!

  154. Thankfulness to my father who shared with me on the topic of this weblog, this weblog is genuinely amazing.

  155. Hi there to all, for the reason that I am genuinely eager of reading this blog’s post to be updated daily.
    It carries pleasant stuff.

  156. Asking questions are actually fastidious thing if
    you are not understanding anything fully, but this piece of writing presents good understanding even.

  157. My coder is trying to convince me to move to .net from PHP.
    I have always disliked the idea because of the expenses. But he’s
    tryiong none the less. I’ve been using Movable-type on a number of websites for about a year and am concerned about switching to another
    platform. I have heard good things about blogengine.net.
    Is there a way I can import all my wordpress posts into it?
    Any help would be really appreciated!

  158. Simply wish to say your article is as astounding.
    The clearness in your post is just excellent and i
    can assume you are an expert on this subject. Fine
    with your permission allow me to grab your feed to keep up to
    date with forthcoming post. Thanks a million and please keep up the enjoyable
    work.

  159. Thanks for sharing your thoughts on tinder. Regards

  160. Do you have a spam problem on this website; I also
    am a blogger, and I was wanting to know your situation; many of us have created
    some nice practices and we are looking to trade strategies with
    others, be sure to shoot me an e-mail if interested.

  161. Thank You for this.

  162. I just could not leave your website prior to suggesting that I actually enjoyed the usual information a
    person provide in your visitors? Is gonna be again regularly to check up on new posts

  163. Hi! I’m at work browsing your blog from my new iphone 3gs!
    Just wanted to say I love reading through your blog
    and look forward to all your posts! Keep up the outstanding work!

  164. What’s up all, here every one is sharing such
    know-how, therefore it’s fastidious to read this website, and I used to go to see this website all the time.

  165. Hello there, I found your blog by the use of Google even as searching for
    a related topic, your site came up, it seems great.
    I have bookmarked it in my google bookmarks.
    Hello there, just turned into alert to your weblog through Google, and located that
    it’s really informative. I am going to watch out for brussels.
    I will appreciate when you proceed this in future.
    Numerous people will likely be benefited out of your writing.
    Cheers!

  166. Thanks a lot for this awesome article! I genuinely appreciated reading it.I will be sure to bookmark this page and definitely will come back very soon. I would love to suggest you to ultimately continue your excellent work, even blog about medical malpractice law firms as well, have a fine evening!

  167. If you are going for finest contents like myself, only pay a quick
    visit this web page all the time for the reason that it
    provides quality contents, thanks

  168. Hi there! This is kind of off topic but I need some help
    from an established blog. Is it very hard to set up your
    own blog? I’m not very techincal but I can figure things out pretty
    fast. I’m thinking about making my own but I’m not sure where
    to begin. Do you have any tips or suggestions?
    With thanks

  169. I have been browsing online more than 2 hours today, yet I never found any interesting
    article like yours. It is pretty worth enough for me. In my view, if all webmasters and bloggers made
    good content as you did, the net will be much more useful
    than ever before.

  170. There is certainly a great deal to learn about this issue.
    I love all the points you made.

  171. It’s nearly impossible to find educated people on this subject, however, you seem
    like you know what you’re talking about! Thanks

  172. Every weekend i used to go to see this site, because i want enjoyment,
    since this this website conations in fact fastidious funny material too.

  173. Heya i am for the first time here. I came across this board and I
    to find It really useful & it helped me out
    a lot. I’m hoping to provide one thing back and help others like you
    aided me.

  174. I have fun with, cause I discovered just what I was looking for.
    You’ve ended my four day long hunt! God Bless you man. Have a great day.
    Bye

  175. Greetings I am so excited I found your web site, I really found you by accident, while I was browsing on Google for something else,
    Anyways I am here now and would just like to say thanks for a remarkable post and a all
    round interesting blog (I also love the theme/design), I don’t have time to
    look over it all at the minute but I have saved it and also added in your RSS feeds,
    so when I have time I will be back to read a great deal more, Please do keep up the superb job.

  176. Woah! I’m really digging the template/theme of this site.

    It’s simple, yet effective. A lot of times it’s challenging to get that "perfect balance” between superb usability and visual appearance.

    I must say you’ve done a amazing job with this. Also, the blog loads super fast for me on Safari.

    Exceptional Blog!

  177. Hey there! I just wish to offer you a big thumbs up
    for your great information you’ve got here on this post.

    I am returning to your site for more soon.

  178. Hello There. I found your blog using msn. This is an extremely well written article.
    I’ll be sure to bookmark it and come back to read
    more of your useful information. Thanks for the post.

    I will definitely comeback.

  179. Attractive portion of content. I just stumbled upon your web site and
    in accession capital to claim that I get actually enjoyed account your blog
    posts. Any way I’ll be subscribing on your augment and even I success you get entry to
    consistently rapidly.

  180. Hello, I enjoy reading through your article. I wanted to write a little comment to support you.

  181. Link exchange is nothing else but it is simply placing the
    other person’s blog link on your page at appropriate place and
    other person will also do similar in support
    of you.

  182. Very soon this web site will be famous among all blogging users, due to it’s good
    articles or reviews

  183. always i used to read smaller posts which as well clear their motive, and that is also happening
    with this piece of writing which I am reading here.

  184. What’s up to all, it’s actually a good for me to pay a
    quick visit this web page, it includes valuable Information.

  185. I am regular visitor, how are you everybody? This piece of writing posted at this website is
    truly fastidious.

  186. I’m now not positive the place you’re getting your information, but good topic.
    I must spend a while learning more or working out more. Thanks for great
    info I was on the lookout for this information for my mission.

  187. You are completely right. I really enjoyed looking through this and I will get back for more as soon as possible. My own internet site is dealing with omega xl best price, you might take a glance if you are interested in this.

  188. I have been exploring for a bit for any high quality articles or weblog posts in this kind of house .
    Exploring in Yahoo I eventually stumbled upon this web site.
    Studying this info So i’m satisfied to show that I’ve an incredibly excellent uncanny feeling I came upon just what
    I needed. I such a lot indubitably will make sure to don?t forget this web site and provides it a
    look regularly.

  189. Great information. Lucky me I found your blog by accident
    (stumbleupon). I’ve bookmarked it for later!

  190. Definitely consider that which you said. Your favourite reason appeared to be on the internet the easiest thing to be mindful of.

    I say to you, I definitely get irked whilst
    folks think about issues that they just do
    not know about. You managed to hit the nail upon the top and defined out
    the entire thing without having side effect , people can take a signal.
    Will likely be back to get more. Thank you

  191. Could you please explain more

  192. you’re actually a excellent webmaster. The website loading velocity is amazing.
    It sort of feels that you’re doing any unique trick. Moreover, The contents are masterwork.
    you’ve performed a great process in this subject!

  193. Attractive section of content. I just stumbled upon your website and
    in accession capital to assert that I acquire actually enjoyed account your blog posts.
    Any way I’ll be subscribing to your augment and even I
    achievement you access consistently rapidly.

  194. Wow, amazing blog layout! How long have you been blogging for?
    you make blogging look easy. The overall look of your site is excellent, let alone the content!

  195. These are genuinely wonderful ideas in concerning blogging.
    You have touched some fastidious points
    here. Any way keep up wrinting.

  196. Hi to all, how is all, I think every one is getting more from this web page,
    and your views are nice in support of new people.

  197. I’m amazed, I must say. Seldom do I come across a blog that’s both educative and engaging, and let me tell you,
    you’ve hit the nail on the head. The issue is an issue that not enough people are speaking intelligently about.
    I’m very happy that I found this during my hunt for something relating to this.

  198. I’ve been surfing on-line greater than three hours lately, but I never discovered
    any interesting article like yours. It is beautiful worth sufficient for me.
    In my view, if all site owners and bloggers made good content material as
    you did, the net will be much more helpful than ever before.

  199. An outstanding share! I’ve just forwarded this onto a co-worker who had been conducting a little research on this.
    And he in fact ordered me dinner simply because I stumbled upon it for him…
    lol. So allow me to reword this…. Thanks for the meal!!
    But yeah, thanks for spending some time to talk about this matter here on your site.

  200. Remarkable! Its in fact awesome post, I have got much clear idea concerning from this post.

  201. I am really impressed with your writing talents and also with the format
    to your blog. Is this a paid topic or did you
    customize it your self? Either way keep up the nice quality writing, it’s rare to look a nice weblog like this one today..

  202. Hello! Do you know if they make any plugins to help with SEO?
    I’m trying to get my blog to rank for some targeted keywords but I’m
    not seeing very good success. If you know of any please share.
    Cheers!

  203. Great blog here! Also your site loads up fast!

    What host are you using? Can I get your affiliate link to your host?

    I wish my website loaded up as fast as yours lol

  204. Excellent write-up. I certainly love this website. Keep
    writing!

  205. Thanks for finally writing about >پیاسی بانہیں ۔۔۔ از ۔۔۔ ملائکہ بخاری
    – کہانی <Liked it!

  206. Thanks , I’ve just been searching for info approximately this topic for
    ages and yours is the best I’ve discovered so far.

    But, what concerning the conclusion? Are you sure about the supply?

  207. I like it when people come together and share opinions.
    Great website, stick with it!

  208. Hello there! I could have sworn I’ve been to this website before but
    after reading through some of the post I realized it’s new to me.
    Anyhow, I’m definitely happy I found it and I’ll be book-marking and checking back frequently!

  209. It’s not my first time to pay a quick visit this website, i am visiting this site dailly and
    obtain good data from here daily.

  210. Heya i’m for the first time here. I came across this board and I find It
    really useful & it helped me out much. I hope to give something back and help others like
    you aided me.

  211. I really like what you guys tend to be up too. This kind of clever
    work and exposure! Keep up the terrific works guys I’ve you
    guys to blogroll.

  212. Your style is very unique in comparison to other people I’ve read stuff from.
    I appreciate you for posting when you’ve got the opportunity, Guess I
    will just bookmark this page.

  213. This blog was… how do you say it? Relevant!!
    Finally I have found something which helped me. Kudos!

  214. Exceptional post however I was wanting to know if you could write a litte
    more on this subject? I’d be very thankful
    if you could elaborate a little bit further. Thanks!

  215. An intriguing discussion is worth comment. I believe that you ought to write more
    on this subject, it may not be a taboo subject but generally people do not discuss such issues.

    To the next! Many thanks!!

  216. I think everything wrote made a great deal of sense. But, consider
    this, suppose you were to write a awesome title? I ain’t saying your information is not good, however suppose you added a title that makes people
    desire more? I mean پیاسی بانہیں ۔۔۔ از ۔۔۔ ملائکہ بخاری – کہانی is a little plain. You might peek at Yahoo’s home page
    and see how they create post headlines to get people interested.
    You might add a video or a picture or two to grab readers interested about everything’ve written. Just my opinion, it could make
    your blog a little livelier.

  217. We are a gaggle of volunteers and opening a brand new scheme
    in our community. Your web site offered us with helpful information to work on. You’ve done an impressive process and our entire community can be grateful to you.

  218. Your mode of explaining everything in this paragraph
    is truly nice, every one be capable of without
    difficulty understand it, Thanks a lot.

  219. I am not sure where you are getting your information, but great topic.
    I needs to spend some time learning much more or understanding more.

    Thanks for wonderful information I was looking for this information for my mission.

  220. Hello there! This post couldn’t be written any better!

    Reading through this post reminds me of my previous room mate!
    He always kept talking about this. I will
    forward this page to him. Fairly certain he will have a good read.
    Thanks for sharing!

  221. I’m not that much of a online reader to be honest
    but your sites really nice, keep it up! I’ll go ahead and bookmark your website to come back in the future.
    Cheers

  222. Ni hao, here from yanex, i enjoyng this, will come back again.

  223. It’s in fact very complicated in this full of activity life to listen news on TV, so I just use web for
    that purpose, and get the latest information.

  224. Hey, google lead me here, keep up great work.

  225. We’re a bunch of volunteers and opening a new scheme
    in our community. Your website offered us with useful
    info to work on. You have done an impressive job and our entire community can be grateful
    to you.

  226. Thanks designed for sharing such a pleasant thinking,
    post is fastidious, thats why i have read it fully

  227. very nice post, i actually love this web site, carry on it

  228. Together with every thing which seems to be building within this subject material, all your perspectives happen to be relatively radical. Nevertheless, I am sorry, because I can not give credence to your entire theory, all be it refreshing none the less. It seems to us that your comments are generally not totally rationalized and in fact you are yourself not even completely certain of your argument. In any event I did appreciate reading it.

  229. stays on topic and states valid points. Thank you.

  230. wonderful issues altogether, you just won a brand new reader.
    What might you recommend in regards to your post
    that you simply made a few days in the past? Any certain?

  231. I’ve been browsing online more than three hours today, yet
    I never found any interesting article like yours. It’s pretty worth enough for
    me. In my view, if all webmasters and bloggers
    made good content as you did, the internet will be much more useful than ever before.

  232. Found this on MSN and I’m happy I did. Well written article.

  233. Nice post. I learn something totally new and challenging on websites I stumbleupon everyday.
    It’s always helpful to read content from other writers and use a
    little something from other sites.

  234. I love reading through and I believe this website got some genuinely utilitarian stuff on it! .

  235. Great blog! Do you have any hints for aspiring writers?

    I’m hoping to start my own blog soon but I’m a little
    lost on everything. Would you recommend starting with a free platform
    like WordPress or go for a paid option? There are so many choices out there that I’m totally overwhelmed ..
    Any tips? Cheers!

  236. I really enjoy examining on this internet site , it has got great posts .

  237. Highlights: Enjoy the most exciting and adventurous tour of Dubai. Embark on the golden sand dunes of Dubai this season! Dubai VIP by Hummer Desert Safari …

  238. Sep 20, 2017 – The Arabian Nights arrived in the West 300 years ago and its stories have entranced generations of children and seduced adults with a vision …

  239. Hi! I’ve been reading your site for a long time now and finally got the courage to go ahead and give you a
    shout out from Austin Tx! Just wanted to say keep up the great work!

  240. You are certainly correct and I trust you. If you wish, we could as well talk regarding coloured upvc window frames, one thing which intrigues me. Your website is definitely impressive, regards!

  241. Hit the desert and indulge in activities true to the Bedouin lifestyle. Evening desert safari , buffet dinner & entertainment with transportation options by Off Road …

  242. Dune Dinner Safari 4×4 (Evening). To Book Call Now: 00971 50 703 5111. Depart from the hotel and drive up to the deflation point, for deflating tires before …

  243. Does your site have a contact page? I’m having problems locating it but, I’d like to send you an email.
    I’ve got some creative ideas for your blog you might
    be interested in hearing. Either way, great website and I look forward to seeing it improve over
    time.

  244. Hmm is anyone else encountering problems with the pictures on this blog loading?
    I’m trying to figure out if its a problem on my end or if it’s the blog.
    Any feed-back would be greatly appreciated.

  245. Very interesting points you have remarked, appreciate it for putting up.

  246. I loved as much as you will receive carried out right here.
    The sketch is tasteful, your authored subject matter
    stylish. nonetheless, you command get bought an edginess over that you wish
    be delivering the following. unwell unquestionably
    come further formerly again as exactly the same nearly a lot often inside case you shield
    this hike.

  247. I like, will read more. Thanks!

  248. Thank you for another informative site. Where else could I get that type of information written in such an ideal way? I’ve a project that I am just now working on, and I have been on the look out for such info.

  249. You are totally right, I would really like to find out new information on this subject! I am also curious about Arvind Pandit Kansas because I believe it is very trendy presently. Keep it up!

  250. Cheers, great stuff, Me enjoying.

  251. Respect to website author , some wonderful entropy.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Translate »
error: Content is protected !!