مسکن / سسپنس / حربہ ۔۔۔ از ۔۔۔ نجمہ مودی

حربہ ۔۔۔ از ۔۔۔ نجمہ مودی

حربہ ۔۔۔ نجمہ مودی

کلا رامیک پچاس سال سے اوپر کی عورت تھی مگر اس عمر میں بھی چالیس سے زیادہ کی نہیں تھی، اس کا شوہر میک چند سال پہلے انتقال کرچکا تھا مگر اس کی پنشن اور انشورنس کی وجہ سے کلارا کو کوئی مالی پریشانی نہیں ہوئی تھی۔ گھر اپنا تھا۔ صرف ایک ہی بیٹی تھی۔۔۔۔لوسی۔۔۔ اب کلارا کو اس کی شادی کی فکر تھی۔ اس شہر کے ایک جج مسٹر کیمبر لے کا بیٹاجمی ،لوسی کو پسند کرتا تھا اوروہ باقی زندگی آرام سے بسر کرسکتی تھی۔ رات کے گیارہ بج رہے تھے۔ کلارا اپنے کمرے میں ایک فیشن میگزین کی روق گردانی کررہی تھی کہ اس نے باہر کسی کار کے رکنے کی آواز سنی۔ کلارا نے  میگزین ایک طرف رکھا اور اٹھ کر بیڈ روم کی کھڑکی میں جا کھڑی ہوئی۔ جمی کی شاندار اور قیمتی گاڑی کا دروازہ کھلا جس میں سے لوسی اتری۔

کلاراجب بھی جمی اور لوسی کو ساتھ دیکھتی تو اس کا دل خوش ہوجاتا تھا۔ اسے یہ جوڑی بہت پسند تھی۔ جمی، لوسی کے ساتھ بڑے احترام سے پیش آتا تھا۔ وہ دونوں ایک دوسرے کو محبت بھری نظروں سے تیکھتے تو کلارا کو وہ رومانی فلم یاد آجاتی جو اس نے اپنے آنجہانی شوہر میک کے ساتھ شای کے ابتدائی دنوں میں دیکھی تھی۔ اس فلم کے ہیرو ہیروئن بالکل جمی اور لوسی جیسے تھے۔

وہ بڑے محویت کے عالم میں نیچے دیکھ رہی تھی کہ اسے کسی گڑ بڑ کا اندازہ ہوا۔ لوسی کسی بات پر برہم تھی جبکہ جمی اسے منانے کی کوشش کررہا تھا، اس سے التجا کررہا تھا مگر لوسی اس کی بات سننے کو تیار نہیں تھی۔ لوسی کہہ رہی تھی”جمی۔۔۔! میں جانتی ہوں تم ممی کے ڈر سے اندر نہیں آرہے ہو۔ تمہیں ڈر ہے کہ ممی خفا ہوں گی مگر ممی کو یہ بات آج نہیں تو کل ضرور معلوم ہوجائے گی۔ اس وقت بھی تو انہیں افسوس ہوگا”۔

"دیکھو لوسی! میری بات سمجھنے کی کوشش کرو”۔ جمی کہہ رہا تھا”اس میں میرا کوئی قصور نہیں ہے۔ یہ ڈیڈی کی خواہش ہے اور ان کے سامنے۔۔۔”

"جمی !جب میں نے تم سے دوستی کی تھی اور شادی کا فیصلہ کیا تھا تو میرا خیال تھا کہ میں نے ایک صحیح لائف پارٹنر کا فیصلہ کیا تھا تو میرا خیال تھا کہ میں نے ایک صحیح لائف پارٹنر کا انتکاب کیا ہے”۔ لوسی نے غصے سے کہا” میں تمہاری رفاقت میں خود کو محفوظ سمجھ رہی تھی مگر اب پتا چلا ہے کہ تم اب بھی اپنے ممی ڈیڈی کی گود میں سوتے اور دودھ کی بوتل پیتے ہو۔ مجھے اتنے کمزور شوہر کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ جائو چلے جائو۔۔۔ شب بخیر!”

یہ کہہ کر لوسی نے دروازے کے لاک میں چابی لگائی تو جمی نے اسے پیچھے سے پکڑ لیا اور اسے منانے کی کوشش کرنے لگا لیکن لوسی پر تو غصہ سوار تھا اس نے جمی کوزدر سے دھکا دیا اور دروازہ کھول کر اندر آگئی۔ اس نے فوراََ دروازہ بند کرلیا۔

"لوسی! دروازہ کھولو۔۔۔ خدا کے لئے میری بات سمجھنے کی کوشش کرو” جمی باہر سے کہہ رہا تھا۔”تمہیں میری محبت کو اس طرح قتل نہیں کرنا چاہیے”۔

لوسی نے اندر سے کیا جواب دیا، وہ کلارا نہیں بن سکی مگر یہ سب دیکھ کر اور سن کردہ گویا پتھر کی ہوگئی۔ اس کی سمجھ میں نہیں آرہا تھا کہ ان دونوں کا جھگڑا کس بات پر ہوا ہے۔ اس نے کھڑکی سے باہر دیکھا۔ جمی تھوڑی دیر کھڑا حسرت سے بند دروازے کی طرف دیکھتا رہا۔ پھر اپنی گاڑی میں بیٹھا اور واپس چلا گیا۔ کلا راد بے قدموں اپنے بیڈروم سے باہر نکلی اور اس نے آواز دی”لوسی۔۔۔!تم آگئیں؟”

لوسی نے زبان سے کوئی ضواب نہیں دیا مگر اس کے قدموں کی آواز نے کلا را کو جواب دے دیا تھا۔ لوسی سیدھی کچن میں گئی۔ اس نے ریفریجریٹر کا دروازہ کھول کر اس میں دودھ کا بھرا ہوا جگ باہر نکال کر میز پر رکھ دیا اور ایک گلاس لے کر میز پر آگئی۔

"تمہارے ڈیڈی کا بھی یہی حال تھا” کلا را نے مسکراتے ہوئے بیٹی سے کہا” جب انہیں غصہ آتا تو ان بھوک بڑھ جاتی تھی۔ یہی تم کررہی ہو”۔

لوسی نے کوئی جواب نہیں دیا بلکہ جگ میں سے اپنے سامنے رکھے ہوئے گلاس میں دودھ انڈیلا اور خاموشی سے پینے لگی۔ دو تین گھونٹ لینے کے بعد اس نے اپنی ممی کی طرف دیکھا اور بولی”میرا خیال ہے کہ آپ نے میری اور جمی کی باتیں سن لی ہوں گی؟”

"میں تو سو رہی تھی کہ تم دونوں کے زور زور سے بولنے کی وجہ سے میری آنکھ کھل گئی، میرے پلے چند الفاظ ہی پڑے تھے میں پوری بات نہیں سمجھ پائی ہوں آخربات کیا ہے مائی ڈیئر؟”کلارا نے انجان بنتے ہوئے کہا

"میں اس بارے میں کوئی بات نہیں کروں گی۔” لوسی نے منہ پھلاتے ہوئے جواب دیا۔

"لیکن اس بارے میں تم دونوں جو اباتیں کرچکے ہو وہ ہمارے پڑوسی بھی سن چکے ہوں گے”۔ کلارا نے لوسی کے بالوں پر ہاتھ پھیرتے ہوئے کہا”کیا ممی کو نہیں بتائو گی؟”

لوسی چپ رہی تو کلارا نے کہا” تم کسی پولیس افسریا ایف بی آئی کے ایجنٹ کے سامنے نہیں۔۔۔ اپنی ممی کے سامنے بیٹھی ہو۔ کھل کر بات کرو”۔

"پارٹی بہت اچھی تھی”۔ لوسی آہستگی سے کہا”سبھی انجوائے کررہے تھے۔ مجھے بھی بڑا مزہ آیا۔

"کیا اس پارٹی میں جج کیمبر لے اور مسز کیمبر لے بھی تھیں؟” کلارا نے سوال کیا۔

"ہاں۔۔۔ وہ دونوں اور جمی بھی وہاں آئے تھے”۔ لوسی نے مدھم لہجے میں جواب دیا۔

"کیا ان لوگوں نے تمہارے ساتھ کوئی بدسلوکی کی؟” کارا نے کہا” کیا تمہارا دل دکھایا؟”

"نہیں۔۔۔ مگر وہ۔۔۔ دراصل آج جج کیمبرلے نے مجھ سے بات کی تھی”۔ لوسی نے رک رک کر کہا۔

"کیسی بات؟ جلدی بتائو”۔ کلارا بے قراری سے بولی۔

"انہوں نے مجھے بتایا کہ جب تک جمی اپنے پیروں پر کھڑا نہیں ہوجاتا اور خود کمانے کے قابل نہیں ہوجاتا اس وقت تک ہماری شادی نہیں ہوسکتی”۔ لوسی نے کہا۔”ان کا کہنا ہے کہ جمی کو اپنے پیروں پر مضبوطی سے کھڑے ہونے میں چار پانچ سال لگ سکتے ہیں”۔

"چار۔۔۔پانچ۔۔۔سال؟” کلارا نے حیرت سے کہا۔

"اس سے زیادہ وقت بھی لگ سکتا ہے۔” لوسی نے کہا” جج کیمبرلے نے مجھ سے کہا کہ اس وقت تک مجھے انتظار کرنا ہوگا”۔

"اوہ۔۔۔تو جج کیمبرلے چاہتا ہے کہ میں اس انتظار میں بوڑھی ہوجائوں اور ایک روز تمہاری شادی کا ارمان لیے دنیا سے چلی جائوں۔” کلارا نے تلخ لہجے میں کہا۔

"ممی۔۔۔!:” لوسی نے بھرائی ہوئی آواز میں کہا۔ اس کی آواز سے لگ رہا تھا کہ وہ رونے والی ہے۔

"میری بچی! پریشان ہونےکی کوئی ضرورت نہیں ہے”۔ کلارا نے کہا”ابھی تمہاری ممی زندہ ہے”۔

یہ سننے ہی لوسی اٹھی اور اپنی ممی سے لپٹ کر رونے لگی۔ کلارا اسے تھپکنے لگی۔

"دیکھو بیٹا! جمی تم سے محبت کرتا ہے۔ وہ تمہارا دیوانہ ہے۔ تمہارے لیے یہ بڑا کار آمد نکتہ ہے”۔ کلارا نے کہا”تمہاری شادی اسی سے ہوگی۔۔۔ اور ضرور ہوگی”۔

"ممی! ججی کیمبرلے نے ایک منصوبے کے تحت یہ بات کی ہے”۔ لوسی بولی” جب ہماری شادی میں دیر لگے گی تو آہستہ آہستہ ہم ایک دوسرے سے بیزار ہوتے چلے جائیں گے اور آخر کار ایک دوسرے سے جدا ہوجائیں گے۔یہی جج کیمبرلے کا مقصد ہے”۔

"ایسا نہیں ہوگا”۔ کلارا نے ایک عزم کے ساتھ کہا۔

"ایساس ہی ہوگا۔ اس کی بنیاد رکھ دی گئی ہے” لوسی نے بے بسی سے کہا” اب کچھ نہیں ہوسکتا۔ جمی میں اتنی ہمت نہیں کہ وہ اپنے ڈیڈی کے سامنے بول سکے”۔

"تم بے فکر ہوجائو۔ اپنے کمرے میں جائو اور اطمینان سے سو جائو”۔ کلارا نے لوسی کو تسلی دیتے ہوئے کہا۔

"مگر اب ہوگا کیا؟” لوسی نے پوچھا۔

"میں اس بوڑھے بکر ے کو تگنی کا ناچ نچادوں گی”۔کلارا نے کہا”اس کے ساتھ وہ کھیل، کھیلوں گی کہ زندگی بھر یاد رکھے گا”۔

"ممی! وہ ایک جج ہے۔ بہت ذہین اور ہوشیار!” لوسی نے کہا۔

"جب تم اپنی ممی کو ایک جج سے ٹکر لیتے دیکھو گی تو حیران رہ جائو گی”۔ کلا را نے بڑے اعتماد سے کہا۔

لوسی غور سے اپنی ممی کو دیکھتی رہی۔ پھر اپنے کمرے میں چلی گئی۔ کلارا نے سرد آہ بھری او راپنے بیڈ روم کی طرف چل دی مگر وہ کچھ تھکی تھکی سی الگ رہی تھی۔

*-*-*

صبح جب کلارا کی آنکھ کھلی تو وہ سیدھی کچن میں پہنچی کچن میں لوسی تو نہیں تھی مگر اسٹیل کی کیتلی رکھی تھی جس میں سے گرم بھاپ نکل رہی تھی۔ اس کا مطلب یہ تھا کہ لوسی بیدار ہوکر کافی تیار کر چکی تھی۔ کلارا نے ایک پیالی میں کافی انڈیلی اور اس چسکیاں لیتی ہوئی لوسی کے بیڈروم میں پہنچی مگر یہ دیکھ کر وہ حیران رہ گئی کہ لوسی اپنے کمرے میں نہیں تھی۔

کلارا نے لوسی کی الماری دیکھی۔ اس کی درازیں چیک کیس جہاں سے اسے جمی اور لوسی کی تصویر بھی ملی۔ اس تصویر میں وہ دونوں ایک دوسرے کے ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے مسکرارہے تھے۔ اس دراز میں سے کلارا کو ایک اخباری تراشہ بھی ملا جس میں جج کیمبرلے کی ریٹائر منٹ کی خبر تھی۔ خبر محسوس ہورہی تھی۔ چہرے پر نخوت تھی۔ وہ کسی بھی طرح انصاف پسند نہیں لگ رہا تھا۔ کلارا حیران تھی کہ ایسا شخص اتنے طویل عرصے تک جج کے منصب پر کیسے فائز رہا ہے!

"بے وقوف جج۔۔۔! تجھ سے تو میں نمٹوں گی”۔ کلارا نے زیر لب کہا”تو نے جس طرح دو دلوں کو ایک دوسرے سے جدا کرنے کی کوشش ہے، اس کی تجھے سزا ضرور ملے گی”۔

اس نے اخباری تراشہ واپس دراز میں رکھا اور ٹیلی فون کی ڈائریکٹری میں جج کیمبرلے کا فون نمبر تلاش کرنے لگی۔ نمبر مل گیا تو اس نے ٹیلی فون کا ریسیور اٹھایا اور جج کا نمبر ڈائل کرنے لگی۔ دوسری طرف سے کسی نے”ہیلو” کہا تو کلارا مائوتھ پیس میں بولی”کیا میں جج کیمبرلے سے بات کرسکتی ہوں؟”

*-*-*

کلارا نے اس سہ پہر کے لیے جس لباس کا انتخاب کیا وہ سرخ تو نہیں تھا مگر اس پر سرخ پھولوں کا پرنٹ تھا جو اس وقت ہلکا پڑ چکا تھا۔ یہ لباس پہن کر اس نے سر پر بھی سرخ پھولوں کے پرنٹ والا ہیٹ پہن لیا۔ اس کے چہرے پر جو میک اپ تھا اس نے کلارا کو تیس سال کی حسینہ بنا دیا تھا۔ وہ بن ٹھن کر گویا بجلیاں گراتی جج کیمبرلے کے گھر پہنچی اور کال بیل کا بٹن دبایا۔ ایک ملازمہ نے دروازہ کھولا جو صورت سے ساری دنیا سے بیزار لگ رہی تھی۔

"مجھے جج کیمبر لے سے ملنا ہے۔ انہوں نے مجھے بلایا تھا میں نے فون پر جج سے بات کی تھی”۔ کلارا نے کسی فلمی ہیروئن کے سے انداز میں کہا۔

جواب میں ملازمہ نے سر ہلایا اور اپنے ساتھ اندر لے گئی۔ شاید اسے  جج نے بتادیا تھا کہ اس کی کوئی مہمان آنے والی ہے۔ جج کیمبرلے نے اپنی اسٹڈی میں کلارا کا استقبال کیا۔ وہ آتشدان کے سامنے کرسی پر بیٹھا تھا۔ آتشدان میں آگ روشن نہیں تھی۔

"آئو مسزمیک!” جج نے اپنے لہجے کو خوشگوار بناتے ہوئے کہا” مجھے خوشی ہے کہ تم نے مجھے فون کیا اور ملنے بھی آئیں۔ میں تمہارا شکر گزار ہوں”۔

"ہاں۔۔۔ پرانے دوستوں سے مل کر جو خوشی ہوتی ہے اس کا کوئی بدل نہیں ہے”۔ کلارا نے اعتماد سے کہا۔

"کیا پیو گی؟ چائے یا کافی؟” جج نے خلیق لہجے میں کہا”میں معذرت خواہ ہوں کہ اس وقت میری مسز گھر پر نہیں ہیں۔ وہ بے حد مصروف رہتی ہیں، سماجی خدمات کی شوقین ہیں”۔

"اوہ۔۔۔ یہ تو بہت اچھا ہوا کہ تمہاری مسز گھر پر نہیں ہیں”۔ کلارا نے ایک ادا سے کہا”میں چاہتی تھی کہ تم سے اکیلے میں ملوں اور گئے وقتوں کی یادیں تازہ کروں”۔ وہ دیکھ رہی تھی یہ یہ سنتے ہی جج کے رخساروں پر سرخی دوڑ گئی تھی اور وہ حیرت سے اسے دیکھنے لگا تھا۔ پھر اس نے سر جھکا کر دو پیالیوں میں کافی انڈیلنی شروع کردی جو ملازمہ نے ابھی ابھی لا کر رکھی تھی۔

کافی کی پیالی اٹھا کر جج کیمبرلے نے کلارا کے طرف بڑھائی جو کلارا نے مسکراتے ہوئے قبول کرلی۔ پھر جج نےسنجیدگی سے کہا”میرا خیا ل ہے تم جمی او رلوسی کے بارےمیں بات کرنے آئی ہو؟”

"نہیں۔۔۔”کلارا نے پُر اسرار اندازسے مسکراتے ہوئے جج کی آنکھوں میں جھانکا”میں ان کے بارے میں تم سے کوئی بات کرنے نہیں آئی ہوں”۔

"اچھا؟ تو پھر۔۔۔؟” جج کیمبرلے کی آنکھوں میں الجھن تھی۔

"میں جانتی ہوں کہ تم اس نوجوان جوڑے کو خواہ مخواہ کی سزا دینے کا فیصلہ کیاہے”۔ کلارا نے کہا”تمہارا کام ہی لوگوں کو سزاد ینا ہے”۔

"میں سمجھا نہیں۔۔۔”جج نے کچھ کہنا چاہا تو کلارا نے اس کی بات کاٹ دی اور بولی”تم ان دونوں کی شادی صرف اس لیے نہیں ہونے دے رہے ہو کہ کہیں کسی دن انہیں یہ پتا نہ چلا جائے کہ۔۔۔”۔

"کیا پتا نہ چل جائے؟” جج نے جلدی سے سوال کیا۔

"تمہارے اور میرے بارے میں۔۔۔” کلارا نے مسکراتے ہوئے کہا۔

یہ سنتے ہی جج کیمبرلے کی آنکھیں حیرت سے پھیل گئیں۔ اس نے کافی کی پیالی میز پر رکھ دی اور کلارا کی طرف دیکھتے ہوئے بولا”میں اب بھی نہیں کچھ سمجھا مسز میک!” وہ پریشان ہورہا تھا۔

"کیمبرلے ! تمہیں تو یاد بھی نہیں ہوگا کہ کبھی تمہارے اور میرے درمیان محبت کا رشتہ استوار ہوا تھا”۔ کلارا نے شوخی سے کہا” ویسے میں بھولنے والی چیز نہیں ہوں۔ میرا دعویٰ ہے کہ تمہیں سب کچھ یاد ہے مگر تم جان بوجھ کر انجان بن رہے ہو”۔

"مجھے کچھ یاد نہیں۔۔۔ یقین کرو۔۔۔” جج نے بے چارگی سے کہا۔

"میرا خیال ہے اس لباس اور حیلے میں تم  مجھے پہچان نہیں پارہے ہو”۔ کلارا لہرا کر بولی” وہ بھی کیا زمانہ تھا۔۔۔میں اس سے قطعی مختلف نہیں، جیسی آج نظر آرہی ہوں۔ کاش۔۔۔ میں تمہیں اس زمانے کی اپنی کوئی تصویر دکھا پاتی، تمہیں تو وہ آگ بھی یاد نہیں ہوگی جو میرے اپارٹمنٹ میں لگی تھی۔۔۔ مگر اس وقت تک ہمارے راستے جدا ہوچکے تھے۔ مجھے غور سے دیکھو۔۔۔ میری عمر ضرور زیادہ ہوگئی ہے مگر شکل صورت ابھی تک وہی ہے۔۔۔ کوشش کرو۔۔۔ شاید تمہیں کچھ یاد آجائے”۔

جج کیمبرلے کا چہرہ سرخ ہورہا تھا۔ وہ گہرے گہرے سانس لےرہا تھا۔ اس نے کئی مرتبہ کلارا کی طرف غورسے دیکھا مگر اس کے ہونٹ کپکپا کر رہ گئے۔ وہ کچھ نہیں کہہ سکا تھوڑی دیر بعد اس نے کہا”مسز میک! تمہیں غلط فہمی ہوئی ہے۔میرا اور تمہارا کبھی کسی قسم کا کوئی تعلق نہیں رہا۔۔۔ میں نے تمہیں پہلے کبھی نہیں دیکھا”۔

"کیمبرلے ! کوشش کرو”۔ کلارا نے کہا”تمہیں شکاگو تو یاد ہوگا۔ وہ جھیل کا کنارا اور اس کے اوپر روشن چاند۔۔۔ اس وقت تم بالکل جوان تھے۔ ۔۔ لڑکیاں تمہاری دیوانی تھیں۔۔۔ تم مینڈولن بہت اچھا بجاتے تھے”۔

"شکاگو؟” جج نے چونک کر کہا””مگر وہاں تو میں برسوں۔۔۔ بلکہ بیس یا تیس سال پہلے ہوتا تھا۔ اس بات کو طویل عرصہ گزر چکا ہے۔ میں اس زمانے کی ہر بات بھول چکا ہوں”۔

"تم بھول چکے ہو مگر مجھے سب یاد ہے” کلارا نے رومانی انداز میں کہا” مجھے اس زمانے کا ایک ایک دن اور ہر دن کا ہر لمحہ یاد ہے۔۔۔ مجھے اس کی راتوں کا ایک ایک پل آج بھی یاد ہے۔ کیا ان دنوں کو بھلایا جاسکتا ہے؟”

"کیا۔۔۔ تم۔۔۔ للی ہو؟” جج نے الجھن زدہ لہجے میں پوچھا”۔کلارا نے کہا”مجھے غور سے دیکھو۔ میں ہی للی ہوں۔ میں نے تمہیں اپنا نام للی بتایا تھا جبکہ میرا اصل نام کلارا تھا۔ مگر میں نے تم سے اپنا اصل نام چھپایا تھا۔۔۔ مجھے ڈرتھا کہ کہیں بدنام نہ ہوجائوں”۔

"للی۔۔۔ ! یہ تم ہو؟ اوہ میرے خدا!” جج کیمبرلے نے کلارا کی طرف آنکھیں پھاڑ کر دیکھتے ہوئےکہا”مگر مجھے یقین نہیں آرہا "۔

"یہ سچ ہے”۔ کلارا نے شیریں آواز میں کہا۔ یکا یک اس کی آواز میں اداسی آگئی۔ "بہرحال میری زندگی اچھی نہیں گزری۔ میرا شوہر میک کوئی اچھا شوہر ثابت نہیں ہوا۔ اسے عورت کے ساتھ رہنے کا سلیقہ نہیں آتا تھا۔ کاش۔۔۔میری تم سے شادی ہوئی ہوتی تو میری زندگی بھی سنور جاتی۔ لیکن تمہیں تو اعلیٰ خاندان کی دولت مند لڑکی کی تلاش تھی جبکہ میں ایک معمولی خاندان کی غریب لڑکی تھی۔ تمہارا اور میرا کوئی جوڑ نہیں تھا۔”

"اوہ! یہ تم کس قسم کی باتیں کرنے لگیں؟” جج کیمبرلے نے اٹھتے ہوئے کہا۔ "اس واقعے کو تیس برس گزر چکے ہیں۔ اب ان باتوں کو یاد کرنے کا کیا فائدہ؟”

"میں تو بس ایسے ہی چلی آئی تھی۔” کلارا نے جج سے کہا "سوچا تھا کہ تمہارے اور تمہاری بیوی کے ساتھ بیٹھ کر ان یادوں کو پھر سے تازہ کروں گی۔ تمہاری مسز کو بتائوں گی کہ تم نے مجھ سے کیسے کیسے خون کن وعدے کئے تھے۔”

"میری بیوی کا اس معاملے سے کیا تعلق؟” جج نے تیزی سے کہا۔

"میں جانتی ہوں کہ اس کا معاملے سے کوئی تعلق نہیں ہے”۔کلارا نے مسکراتے ہوئے کہا”مگر اسے اس کہانی میں ضرور دل چسپی ہوگی۔۔۔ ممکن ہے وہ یہ قصہ سن کر خوب ہنستے۔۔۔”

"میں تمہیں ایسا نہیں کرنے دوں گا”۔ کیمبرلے نے غصے سے کہا” اس طرح تو میری بیوی اَپ سیٹ ہوجائے گی۔۔۔ اور یہ کہانی ہی فضول ہے۔۔۔ اس کا مجھ سے بھی کوئی تعلق نہیں ہے۔۔۔ میں تمہیں ایسا کچھ نہیں کرنے دوں گا”۔

"واقعی۔۔۔ کیا تم ایسا کرو گے؟” کلارا نے کہا۔

"ہاں! ” جج نے کہا۔ وہ غصے سے سرخ ہورہا تھا۔”للی! خدا کے واسطے ایسا کچھ مت کرنا ورنہ میری بیوی مر جائے گی۔ وہ پہلے ہی دل کی مریضہ ہے”۔

"وہ ایسے مرنے والی نہیں ہے”۔ کلارا نے کہا”وہ سماجی فلاح وبہبود کے کام کرتی ہے۔ ہٹی کٹی اور چاق وچوبند ہے۔کیوں نہ میں بھی اس کی خدمات حاصل کرلوں؟ ممکن ہے میرا بھی بھلا ہوجائے”۔

"کیا تمہیں رقم چاہیے؟” جج نے سپاٹ لہجے میں کہا”بولو کتنی رقم چاہیے تمہیں؟ رقم لو، اپنا منہ بند کرکے یہاں سے روانہ ہو جائو”۔

"مجھے تمہاری دولت کی ضرورت نہیں ہے۔” کلارا نے تیزی سے کہا”میری آنجہانی شوہر نے میرے لیے اتنا کچھ چھوڑا ہے کہ میں آرام سے زندگی گزار سکتی ہوں۔۔۔ بس اتنا کردو کہ اپنے بیٹے جمی سے میری بیٹی لوسی سے شادی کرنے کی اجازت دے دو”۔

"اوہ! تو یہ بات ہے” جج کیمبرلے نے زہریلے لہجے میں کہا "تم مجھے بلیک میل کرنے آئی ہو”۔

"مجھے معلوم تھا کہ تم یہی کہو گے”۔ کلارا نے کہا” اگر ایک نوجوان لڑکا اور لڑکی اپنی مرضی سے شادی کرنا چاہتے ہیں اور اس میں اس کی حمایت کرتی ہوں تویہ بلیک میلنگ نہیں ہے”۔

"میں جمی کو لوسی سے شادی کرنے سے نہیں روک رہا”۔ جج کیمبرلے نے کہا”میں نے تو صرف انتظار کرنے کے لیے کہا تھا۔۔۔ وہ بھی محض مشورہ دیا تھا۔ میں چاہتا تھا کہ جمی اپنے پیروں پر کھڑا ہوجائے۔ اس سے لوسی کا ہی فائدہ ہوتا۔ اس کا شوہر مالی طور پر زیادہ مضبوط ہوجاتا۔”

"جج کیمبرلے! میں نے اس طرح کے بہت سے کیسز دیکھے ہیں”۔ کلارا نے کہا” اس طرح کے معاملات میں جتنی دیر لگتی ہے اتنے ہی معاملات بگڑتے چلے جاتے ہیں۔ اور ایک وقت وہ آتا ہے جب لڑکا اور لڑکی ایک دوسرے کی صورت سے بھی بیزار ہوجاتے ہیں”۔

"مگر میں نے سوچا تھا کہ جمی کو۔۔۔” جج کیمبرلے نے کہا تو کلارا نے اس کی بات کاٹ دی او ربولی۔”میں جانتی ہوں تم نے کیا سوچا تھا۔۔۔ تم نے سوچا تھا کہ جمی کو یورپ بھیج دو گے جہاں وہ چند سال میں لوسی کی صورت بھی بھول جائے گا اور تم وہیں کسی دولت مند لڑکی سے اس کی شادی کرادو گے۔۔۔ ہے نا؟” کلارا کی آواز میں تلخی تھی۔

جج کیمبرلے بے بسی کے عالم میں کلارا کو دیکھتا رہا اور دوبارہ اپنی کرسی پر بیٹھ گیا۔ اس نے کہا” تم اچھا نہیں کررہی ہو للی!”

"کیمبرلے ! میں کوئی غلط کام نہیں کررہی بلکہ تمہیں ایک اچھا، مفید اور معقول مشورہ دے رہی ہوں” کلارا نے کہا تو جج محض سر ہلا کر رہ گیا۔

"ٹھیک ہے۔۔ مجھے اس معاملے پر غور کرنے کے لیے کچھ مہلت دو”۔ جج نے کہا تو کلارا نے آمادگی سے سرہلا دیا۔

*-*-*

شادی کے لیے جولائی کا مہینہ مقرر ہوا۔ لوسی جون میں شادی کرنا چاہتی تھی مگر چونکہ کافی کام کرنے تھے۔ عرسی لباس تیار کرانا تھا اور دوسرے بہت سے کام تھے اس لیے جولائی کا مہینہ طے ہوا۔ کلارا بے حد مصروف تھی۔ بیٹی کی شادی کی تیاریوں نے اسے تھکا دیا تھ امگر اسے یہ تھکن خوشگوار لگ رہی تھی۔ ان مصروف دنوں میں وہ صرف دو مرتبہ جج کیمبرلے سے ملی تھی۔ اس دوران وہ جج کے ساتھ بڑے مہذب اور باوقار طریقے سے پیش آئی۔کیمبرلے اس بدلی ہوئی للی کو دیکھ کر حیران تھا۔ وہ واقعی دلہن کی ماں لگ رہی تھی۔ اس میں جج کو نہ تو کوئی گھٹیا پن نظر آیا اور نہ جج نے اس کے منہ سے کوئی ناشائستہ بات سنی۔

ایک ملاقات میں تو جج کیمبرلے کی بیوی بھی موجود تھی۔ کلارا اس سے دوستانہ اور خوشگوار انداز میں  ملی تھی۔ مسز کیمبرلے بھی اس کے ساتھ عزت سے پیش آئی تھی۔شادی سے ایک روز پہلے کلارا کی کیمبرلے سے دوسری ملاقات ہوئی۔ اس ملاقات  میں وہ دونوں اکیلے تھے۔

"مسز میک!” کیمبرلے نے کلارا سے کہا” اب مجھےاپنے اگلے منصوبے کے بارے میں بتائو”۔

"کیمبرلے ! تم بالکل فکر نہ کرو۔ "کلارا نے جج سے کہا” میں تمہاری بات کا مطلب خوب سمجھ رہی ہوں”۔

"تمہاری بیوی کو تمہارے اور میرے تعلقات کے بارے میں کبھی کچھ پتا نہیں چلے گا۔ یہ میرا وعدہ ہے”۔ کلارا نے ٹھوس لہجے میں کہا۔

"میرا مطلب یہ نہیں تھا”۔ جج نے سرد آہ بھرتے ہوئے کہا”میں اتنا سنگ دل بھی نہیں۔۔۔ گوشت پوست کا انسان ہوں”۔

"میں جانتی ہوں۔۔۔ خوب جانتی ہوں۔” کلارا نے کہا۔ک

"اگر تمہیں کسی چیز کی ضرورت ہو۔۔۔ میرا مطلب ہے ،رقم وغیرہ کی۔۔۔ تو بلا تکلف مجھے بتا دینا”۔ کیمبرلے نے کہا۔

"کیمبرلے! میں نے تم سے کہا تھا نا کہ میرے پاس زندگی بسر کرنے کے لئے سب کچھ ہے۔ صرف لوسی کا بوجھ تھا۔ یہ اتر گیا تو میں گزارا کرلوں گی”۔ کلارا نے قدرے افسردگی سے کہا۔” وہاں میں نے ایک چھوٹے سے مکان کا سودا کرلیا ہے”۔

"اچھا۔۔۔! "کیمبرلے نے کہا۔ کلارا نے محسوس کرلیا تھا کہ جج کی آواز میں سکون تھا جیسے اسے کسی بہت بڑے بوجھ سے نجات مل گئی ہو”شکریہ للی!”

*-*-*

شام کو جب کلارا اپنے گھر پہنچی تو اسے لوسی نہ کچن میں نظر آئی اور نہ ہی ڈرائنگ روم یں۔ اس کے بیڈ روم کا دروازہ بھی بند تھا۔ وہ دروازہ کھول کر اندر داخل ہوئی جہاں لوسی اپنے بستر پر بیٹھی دیوار پر لگی پینٹنگ کی طرف دیکھے رہی تھی۔

"کیا بات ہے بیٹا؟” کلارا نے اس کے پاس بیٹھتے ہوئے شفقت سے اس کے سر پر ہاتھ پھرتے ہوئے سوال کیا”تمہارے چہرے پر اس قدر اداسی کیوں ہے؟”

"کچھ نہیں ممی۔۔۔!” لوسی نے بیزاری سے کہا۔

"مگر تمہاری ممی کی نظروں سے کچھ پوشیدہ نہیں رہ سکتا”۔ کلارا نے تشویش سے کہا”مجھے نہیں بتائوگی؟”

لوسی نے اس کی طرف دیکھا تو کلارا کو اس کی آنکھوں میں تیری نمی نظر آگئی۔

"کیا بات ہے میری جان؟” کلارا نے بے قراری سے کہا۔

"ممی ! آج آپ ج کیمبرلے کے گھر گئی تھیں؟” لوسی نے بھرائی ہوئی آواز میں پوچھا تو کلارا نے اقراری میں سر ہلا دیا۔

"جس وقت آپ جمی کے ڈیڈی سے باتیں کررہی تھیں تو اتفاق سے میں برابر والے کمرے میں تھی۔ "لوسی نے کہا”میں نے ساری بات سن لی تھی”۔

"اوہ۔۔۔ تو تمہیں یہ بات معلوم ہوگئی کہ کسی زمانے میں، میں اور جج کیمبرلے۔۔۔” کہتے کہتے کلارا رک گئی۔ پھر اس نے زور دار قہقہہ لگایا۔ لوسی حیرت سے اپنی ممی کو دیکھ رہی تھی۔ اس کا خیال تھا کہ یہ بات سن کر اس کی ماں پاگل ہوجائے گی اور اپنی صفائی پیش کرنے لگے گی مگر وہ تو مسلسل ہنس رہی تھی جیسے لوسی نے کوئی لطیفہ سنا دیا ہو۔

"بے وقوف لڑکی! اپنی ممی پر شک کرتی ہے”۔ کلارا نے اپنی ہنسی روک کر کہا” کیا تیری ممی ایسی گئی گزری ہے کہ وہ۔۔۔”

"تو وہ سب کیاتھا جو آپ نے جج سے کہا تھا؟” لوسی نے بھولپن سے پوچھا” اور وہ للی کون ہے؟”

"میں نے اس جج کو بے وقوف بنا دیا جو اپنے آپ کو دنیا کا سب سے عقل مند انسان سمجھتا ہے”۔ کلارا نے ہنستے ہوئے کہا”اس کا خیال تھا کہ انصاف کی کرسی پر بیٹھ کر وہ ہر ایک پر مرضی مسلط کرے گا مگر میں نے اس کا غرور تو ڑ دیا ہے۔ اسے بتا دیا کہوہ ایک بے وقوف انسان ہے۔۔۔ اور یہ کہ وہ دو محبت کرنے والوں کو ملنے سے نہیں روک سکتا۔”

"ممی۔۔۔!مجھے وپری بات بتائیں”۔ لوسی نے ضد کی۔

"میرانام کلارا ہے۔۔۔ للی نہیں”۔ کلارا نے کہا”یہی سچ ہے۔۔۔ میں نے جج کیمبرلے کو نہ پہلے کبھی دیکھا تھا اور نہ جب میں اس کے گھر گئی تھی اور اس کے ساتھ للی والا ڈراما کیا تھا۔ میں نے اسے خوب اُلو بنایا اور اتنا نفسیانی دبائو ڈالا کہ وہ اپنے منہ سے یہ قبول کر بیٹھا کہ اس نے کسی زمانے میں للی نامی لڑکی سے دوستی کی تھی۔ للی کانام مجھے پہلے معلوم نہیں تھا۔ میں جانتی تھی کہ ہر مرد کی زندگی میں کوئی نہ کوئی عورت ضرور ہوتی ہے۔۔۔ کیمبرلے کی زندگی میں بھی ہوگی جس کا اس نے اعتراف کرلیا اور میں اسے یقین دلانے میں کامیاب ہوگئی کہ میں ہی اس کی سابقہ محبوبہ للی ہوں۔ اب یہ آنسو پونچھ ڈالو اور اس عروسی لباس کو پہن کر دیکھو۔ اس کی فٹنگ تو صحیح ہے ناں؟”

 

*-**-**-*

بارے KAHAANY.COM

Check Also

” جب رونگٹے کھڑے ہو گئے "

شیرازی ہاﺅس کا یہ وسیع و عریض ڈرائینگ روم اور گھر کے مکینوں کا رہن …

98 comments

  1. Hi to every body, it’s my first visit of this weblog; this website
    includes amazing and actually good material in support of readers.

  2. Hi, I think your website might be having browser compatibility issues.
    When I look at your blog in Firefox, it looks fine but when opening in Internet Explorer, it has some overlapping.
    I just wanted to give you a quick heads up!
    Other then that, fantastic blog!

  3. Everything is very open with a very clear explanation of the challenges.
    It was really informative. Your website is very useful.
    Thanks for sharing!

  4. Heya! I just wanted to ask if you ever have any
    problems with hackers? My last blog (wordpress) was hacked and I ended up losing many months of hard work due to no backup.
    Do you have any methods to stop hackers?

  5. Having read this I believed it was very enlightening. I appreciate you finding the time and effort
    to put this informative article together. I once again find myself spending
    a significant amount of time both reading and posting comments.
    But so what, it was still worthwhile!

  6. I loved as much as you will receive carried out right
    here. The sketch is tasteful, your authored material stylish.
    nonetheless, you command get bought an shakiness over that
    you wish be delivering the following. unwell unquestionably come more formerly again as exactly the same nearly
    a lot often inside case you shield this increase.

  7. What’s up, the whole thing is going nicely here and ofcourse every one is sharing facts, that’s genuinely
    excellent, keep up writing.

  8. Hello, I read your new stuff regularly. Your story-telling style is awesome, keep up the good work!

  9. Does your website have a contact page? I’m having problems locating it but,
    I’d like to send you an e-mail. I’ve got some creative ideas for your blog you
    might be interested in hearing. Either way, great site and I look
    forward to seeing it develop over time.

  10. Thank you for sharing your thoughts. I really appreciate your efforts and I will be waiting for your
    next write ups thank you once again.

  11. I appreciate you sharing this article post.Much thanks again. Keep writing.

  12. Say, you got a nice blog post.Really looking forward to read more. Keep writing.

  13. I don’t even know how I ended up here, but I thought
    this post was great. I don’t know who you are but definitely
    you’re going to a famous blogger if you are not already 😉 Cheers!

  14. This is a topic that is near to my heart…
    Many thanks! Where are your contact details though?

  15. Wow, wonderful blog layout! How long have you been blogging for?
    you make blogging look easy. The overall look of your website is great,
    let alone the content!

  16. Wow, amazing blog layout! How long have you been blogging
    for? you make blogging look easy. The overall look of your
    web site is wonderful, let alone the content!

  17. I absolutely love your blog.. Great colors & theme. Did you
    develop this site yourself? Please reply back as
    I’m wanting to create my very own website and would like
    to know where you got this from or exactly what the
    theme is named. Thank you!

  18. I was curious if you ever thought of changing the page layout of your site?
    Its very well written; I love what youve got to say. But maybe you could
    a little more in the way of content so people could connect with it better.
    Youve got an awful lot of text for only having one or 2 images.
    Maybe you could space it out better?

  19. I don’t even know the way I finished up here, however I assumed this post was once good.
    I do not know who you are however certainly you’re going to a famous blogger should
    you are not already. Cheers!

  20. You really make it seem so easy with your presentation but I in finding this matter to be really
    something which I think I’d by no means understand. It sort of feels too complicated and extremely huge for me.
    I am taking a look ahead for your next put
    up, I’ll attempt to get the hold of it!

  21. Hello there I am so grateful I found your weblog, I
    really found you by error, while I was browsing on Askjeeve
    for something else, Anyways I am here now and would just like to say cheers for a fantastic post and a all round interesting blog (I also love the theme/design), I don’t have time to look
    over it all at the minute but I have bookmarked it and also included your RSS feeds, so when I have time
    I will be back to read much more, Please do keep up
    the awesome b.

  22. Remarkable! Its really awesome post, I have got much clear idea about from this article.

  23. Hi, i think that i saw you visited my web
    site so i came to “return the favor”.I am attempting to
    find things to improve my site!I suppose its ok to use a few
    of your ideas!!

  24. Howdy this is somewhat of off topic but I was wanting to know if
    blogs use WYSIWYG editors or if you have to manually code with HTML.
    I’m starting a blog soon but have no coding experience so I wanted to get guidance from someone with experience.
    Any help would be enormously appreciated!

  25. I am extremely inspired along with your writing talents as smartly as with
    the layout to your blog. Is this a paid theme or did you customize it yourself?

    Either way keep up the excellent quality writing, it is uncommon to peer a nice weblog
    like this one today..

  26. Pretty great post. I simply stumbled upon your weblog and wished to mention that I’ve really enjoyed browsing your
    weblog posts. After all I will be subscribing to your feed and I hope you write once
    more very soon!

  27. Nice read. hobbies include tai chi the code card game and collecting music albums.

  28. Thumbs up! love jesse grillo and hermosa beach seo.

  29. Nice read. ever think about data mining? were you aware there is business that constructs real estate agent data mining and seo advertising?

  30. Heya are using WordPress for your site platform?
    I’m new to the blog world but I’m trying to get
    started and create my own. Do you require any html coding
    expertise to make your own blog? Any help would
    be greatly appreciated!

  31. I am in fact delighted to read this web site posts which contains plenty of valuable facts,
    thanks for providing these data.

  32. Heya! I just wanted to ask if you ever have any problems with hackers?

    My last blog (wordpress) was hacked and I ended up losing many months of
    hard work due to no backup. Do you have any methods to stop hackers?

  33. Link exchange is nothing else except it is simply placing
    the other person’s webpage link on your page at appropriate place and other person will also do
    same in favor of you.

  34. Appreciate the recommendation. Will try
    it out.

  35. I like the valuable information you provide in your articles.
    I’ll bookmark your blog and check again here frequently.
    I am quite certain I will learn plenty of new stuff right here!
    Good luck for the next!

  36. Hi, Neat post. There’s an issue together with your web site in web explorer,
    could check this? IE still is the marketplace chief and
    a huge section of people will leave out your wonderful writing because of this problem.

  37. I really liked your blog.Really looking forward to read more. Will read on…

  38. I have been browsing online more than 2 hours today, yet I never found any interesting article like yours. It’s pretty worth enough for me. Personally, if all site owners and bloggers made good content as you did, the web will be much more useful than ever before.

  39. I think the admin of this web page is really working hard in support of his web site, since here every material is quality based information. I have been looking everywhere for this! In any case I’ll be subscribing to your feed and I’m hoping you write once more very soon!

  40. impeccable,hair bundles https://www.youtube.com/watch?v=koiFnDsfNPU magnifique,colis express, sérieux,indulgence

  41. I book-marked it to my bookmark site list and will be checking back soon. Writing a guest post is not so hard. Thanks for sharing your info. Anyhow, fantastic blog!

  42. To think, I was confused a minute ago. I had a quick question in which I’d like to ask if you don’t mind. Thanks for sharing your info.

  43. Interesting content. are you in need of profitable south bay instagram marketing structures?

  44. Some nice points there. Hit me up! I have been surfing on-line more than 3 hours today.

  45. super charges high return on investment product marketing structures and customer acquisition structures plus wordpress structures for hair salon redondo. Nice write up. i am huge fan of hermosa beach marketing hermosa beach marketing and manhattan beach marketing.

  46. Super charging manhattan beach web. Great read. i am huge fan of redondo beach seo and hermosa beach seo.

  47. Thumbs up! online businesss online structures and brand campaigns.

  48. Very great post. I just stumbled upon your weblog and wished to say that I’ve truly enjoyed surfing around your blog posts. After all I’ll be subscribing for your rss feed and I’m hoping you write once more very soon!

  49. Great post.Really thank you! Cool.

  50. Really appreciate you sharing this blog.Much thanks again. Much obliged.

  51. Enjoyed every bit of your article.Thanks Again. Cool.

  52. Howdy! Do you know if they make any plugins to safeguard against hackers? I’m kinda paranoid about losing everything I’ve worked hard on. Any suggestions?
    adult onesie http://www.aouclass.net/modules.php?name=Your_Account&op=userinfo&username=DoyleSparr

  53. Very good blog.Really looking forward to read more. Fantastic.

  54. Wow, great article.Really looking forward to read more. Great.

  55. I am so grateful for your article post.Really thank you! Fantastic.

  56. Im grateful for the post.Really thank you!

  57. Im grateful for the article.Much thanks again. Keep writing.

  58. Say, you got a nice article. Keep writing.

  59. I feel like people should send you cash for this amazing material. If your articles are always this helpful, I will be back. Your posts really makes me think. When I turned on my browser this website was loaded.

  60. Beyond useful information. I bet you make babies smile. You saved me a lot of hassle just now. I have learned new things through your write up. Right here is some really useful info.

  61. When I browsed your post I could feel myself getting smarter. To think, I was confused a minute ago. Any new news.

  62. I could not resist commenting. I had to take a break from building a coffee table to write your blog.

  63. This page was running when I opened my computer. I have added your article to my LinkedIn I willfor sure follow your social media sites.

  64. I have been surfing on-line more than 3 hours today. Thx again. I am going to follow you on Twitter. I bet you make babies smile. Geez, that is unbelievable.

  65. Extremely good short posts. I enjoyed reading this. Extremely helpful blogs. Are there other pages you work on?

  66. I know old school Website professionals would love this. I love articles like this one but I find myself spending hours simply browsing and reading.

  67. Thank you! I willfor sure follow your other sites. I truly think this write up needs much more consideration. I will probably be again to read much more, thanks for that info.

  68. It’s amazing to go to see this web page and reading the views of all mates concerning this paragraph, while I am also zealous of
    getting know-how.

  69. Have you ever considered writing an e-book or guest authoring on other websites?
    I have a blog based on the same topics you discuss and would love to have you share some stories/information. I know my subscribers would enjoy your work.
    If you’re even remotely interested, feel free to shoot me an e mail.

  70. I truly appreciate this post.Really thank you! Awesome.

  71. Hello I am so delighted I found your blog, I really found you by error, while I was
    looking on Yahoo for something else, Anyhow I am here
    now and would just like to say many thanks for a tremendous post and a
    all round interesting blog (I also love the theme/design), I
    don’t have time to go through it all at the minute but I have bookmarked
    it and also included your RSS feeds, so when I have time I will
    be back to read much more, Please do keep up the fantastic job.

  72. Can I simply just say what a comfort to uncover someone
    that genuinely understands what they’re discussing online.
    You definitely know how to bring a problem to light and make it important.
    A lot more people need to look at this and understand this side of your story.
    I was surprised you aren’t more popular because you surely possess the gift.

  73. Hi mates, how is the whole thing, and what you would like to say regarding
    this article, in my view its really amazing designed for me.

  74. Hey! Do you know if they make any plugins to help with SEO?

    I’m trying to get my blog to rank for some targeted keywords but I’m not seeing
    very good results. If you know of any please share.
    Cheers!

  75. Hello, I log on to your new stuff on a regular basis.
    Your story-telling style is awesome, keep it up!

  76. Magnificent goods from you, man. I’ve remember your
    stuff previous to and you are just too magnificent. I actually like what you have bought here, really like what
    you’re stating and the way in which in which you say it. You’re making it entertaining
    and you still take care of to stay it wise.

    I can not wait to learn much more from you.
    This is actually a wonderful website.

  77. I do accept as true with all of the ideas you’ve introduced for your post.
    They are very convincing and will definitely work.
    Nonetheless, the posts are very short for novices.

    May just you please extend them a little from subsequent time?
    Thank you for the post.

  78. I bet you do crossword puzzles in ink. I will be subscribing to your feed.

  79. Thank you! In my view, if all webmasters and bloggers made just right content material as you did, the web might be a lot more helpful than ever before. Thanks for sharing this interesting website with us. I wants to be a master in this topic someday. This stuff is great.

  80. My professor is trying to learn more on this issue. I enjoyed your blog. I am hoping you write once more very soon! Keep it up! It is really shocking you do not have more followers.

  81. I will like your social channels. Guess I will just book mark this blog. Who raised you? They deserve a medal for a job well done. Your website has a kind of aura surrounding it. There are certainly a lot of info to take into consideration.

  82. Enjoyed every bit of your article.Really thank you! Fantastic.

  83. Major thanks for the article post.Much thanks again. Awesome.

  84. I truly appreciate this article.Much thanks again. Want more.

  85. I discovered your blog web site on google and test a few of your early posts. Continue to keep up the very good operate. I just further up your RSS feed to my MSN Information Reader. Searching for forward to reading extra from you afterward!…

  86. Great, yahoo took me stright here. thanks btw for this. Cheers!

  87. Very interesting points you have remarked, thanks for putting up.

  88. Hi, yahoo lead me here, keep up nice work.

  89. I really liked your article.Really thank you! Great.

  90. Thanks so much for the blog article. Really Cool.

  91. Me enjoying, will read more. Cheers!

  92. Hello, yahoo lead me here, keep up great work.

  93. Thanks again for the blog.Thanks Again. Great.

  94. Great, this is what I was browsing for in yahoo

  95. Looking forward to reading more. Great article. Great.

  96. I can’t consider a babysitter or else I’d be there!! Consequently disappointed towards pass up…. At the time & in which is the up coming evening marketThanks!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Translate »
error: Content is protected !!