مسکن / کلاسیکی

کلاسیکی

فردوس بریں ۔۔۔۔ قسط 5

فردوس بریں (قسط 5) پھر وہی عالم عناصر دیر کی آزاد رساں غفلت اور بے ہوشی کے بعد حسین ذرا ہوشیار رہنے لگا تھا کہ کان میں آواز آئی: ” اے جسم خاکی! اُٹھ اور اس برزخ کبریٰ کا ہاتھ چوم جو تیرا امام ہے اور جس نے صرف تیرے …

آگے پڑھیں

باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش (قسط 5)

باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش (قسط 5) میری بے قراری اور نالہ و زاری دیکھ کر ان کی بھی حالت اضطراب کی ہو گئی۔ آب دیدہ ہو کر بے اختیار گلے سے لگا لیا۔ اور اس کی تدبیر کی خاطر حکم کیا۔ حکیموں نے قوتِ دل اور خلل …

آگے پڑھیں

فردوس بریں ۔۔۔۔ قسط 4

حسین کو نہیں خبر کہ یہ غفلت کتنی دی تلک اُس پر طاری رہی، لیکن مدہوشی تھوڑی تھوڑی کم ہوئی تھی اور نشۂ غفلت اُترنا شروع ہوا تھا کہ ایک نہایت ہی دل کش اور وجد پیدا کرنے والے نغمے کی آواز کان میں آئی اور ایسا معلوم ہوا کہ …

آگے پڑھیں

باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش (قسط 4)

بارے آفتاب تمام دن کا مسافر تھکا ہوا، گرتا پڑتا اپنے محل میں داخل ہوا اور ماہتاب دیوان خانے میں اپنے مصاحبوں کو ساتھ لے کر نکل بیٹھا، اس وقت دائی آئی اور مجھ سے کہنے لگی کہ چلو پادشاہ زادی نے یاد فرمایا ہے۔ میں اس کے ہمراہ ہو …

آگے پڑھیں

فردوس بریں ۔۔۔۔ تیسری قسط ۔۔۔۔ ملاءِ اعلیٰ کا سفر

امام نجم الدین نیشا پوری اس عہد کے بہت بڑے امام تھے۔تمام زمانے میں ان کی اور ان کے علم و فضل کی شہرت تھی اور شاید کوئی مقام نہ ہو گا جہاں ان کے شاگرد مسلمانوں کی ایک بڑی جماعت کی مقتدائی نہ کر رہے ہوں۔حسین کے وہ استاد …

آگے پڑھیں

باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش (قسط 3)

سیر دوسرے درویش کی جب دوسرے درویش کے کہنے کی نوبت پہنچی، وہ چار زانو ہو بیٹھا اور بولا۔ اے یارو! اس فقیر کا ٹک ماجرا سنو! میں ابتدا سے کہتا ہوں تا انتہا سنو! جس کا علاج کر نہیں سکتا کوئی حکیم ہے گا ہمارا درد نپت لا دوا …

آگے پڑھیں

فردوس بریں ۔۔۔۔ دوسری قسط ۔۔۔۔ بہ مے سجادہ رنگین کن گرت پیر مغاں گوید

صبح کا وقت تھا اور نسیم کے جھونکے چل رہے تھے کہ مرغانَ سحر نے اپنے نشیمنوں سے نکل نکل کے حسین کو خواب بے ہوشی سے جگایا۔ خمار کی سی کروٹیں بدل کے آنکھیں ملتا ہوا اُٹھا اور چاروں طرف مڑ مڑ کے دیکھا مگر زمرد کا کہیں پتا …

آگے پڑھیں

فردوس بریں ۔۔۔۔ پہلی قسط ۔۔۔۔۔ پریوں کا غول

اب تو سنہ ٦٥٠ ہجری ہے، مگر اس سے ڈیڑھ سو سال پیشتر سے سیاحوں اور خاصۃً حاجیوں کے لئے وہ کچی اور اونچی نیچی سڑک نہایت ہی اندیشہ ناک اور پرخطر ہے جو بحر حزر (کیسپین سی) کے جنوبی ساحل سے شروع ہو ئی ہے اور شہر آمل میں …

آگے پڑھیں

باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش (قسط 2)

  یہ فقیر بہ موجب حکم کے مہمان داری میں حاضر تھا، ہر چند جوان ہم پیالہ ہم نوالہ ہونے کو مجوز ہوتا تھا، پر میں ہرگز اُس پری کے خوف کے مارے اپنا دل کھانے پینے یا سیر تماشے کی طرف رجوع نہ کرتا تھا۔ اور عُذر مہمان داری …

آگے پڑھیں

” باغ و بہار یعنی قصہ چہار درویش "

 سیر میں چہار درویش کے یوں لکھا ہے اور کہنے والے نے کہا ہے کہ آگے روم کے ملک میں ایک شہنشاہ تھا۔ کہ نوشیرواں کی سی عدالت اور حاتم کی سی سخاوت اس کی ذات میں تھی۔ نام اسکا آزاد بخت اور شہر قسطنطنیہ(جس کو استنبول کہتے ہیں) اس …

آگے پڑھیں
Translate »
error: Content is protected !!